உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اوڑی دہشت گردانہ حملہ کے بعد ہندستان کے ممکنہ جوابی ردعمل سے متعلق پاکستان میں قیاس آرائیاں عروج پر

    اوڑی میں ہلاکت خیز دہشت گردانہ حملے کے بعد ہندستان کے جوابی ردعمل کے تعلق سے پاکستانیوں میں قیاس آرائیاں عروج پر ہیں۔ وفاقی وزیر برائے دفاعی پیداوار رانا تنویر حسین کا کہنا ہے کہ پاکستان، ہندوستان کے کسی بھی ایڈونچر کا سامنا کرنے کے لیے مکمل طور پر تیار ہے

    اوڑی میں ہلاکت خیز دہشت گردانہ حملے کے بعد ہندستان کے جوابی ردعمل کے تعلق سے پاکستانیوں میں قیاس آرائیاں عروج پر ہیں۔ وفاقی وزیر برائے دفاعی پیداوار رانا تنویر حسین کا کہنا ہے کہ پاکستان، ہندوستان کے کسی بھی ایڈونچر کا سامنا کرنے کے لیے مکمل طور پر تیار ہے

    اوڑی میں ہلاکت خیز دہشت گردانہ حملے کے بعد ہندستان کے جوابی ردعمل کے تعلق سے پاکستانیوں میں قیاس آرائیاں عروج پر ہیں۔ وفاقی وزیر برائے دفاعی پیداوار رانا تنویر حسین کا کہنا ہے کہ پاکستان، ہندوستان کے کسی بھی ایڈونچر کا سامنا کرنے کے لیے مکمل طور پر تیار ہے

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      اسلام آباد : اوڑی میں ہلاکت خیز دہشت گردانہ حملے کے بعد ہندستان کے جوابی ردعمل کے تعلق سے پاکستانیوں میں قیاس آرائیاں عروج پر ہیں۔ وفاقی وزیر برائے دفاعی پیداوار رانا تنویر حسین کا کہنا ہے کہ پاکستان، ہندوستان کے کسی بھی ایڈونچر کا سامنا کرنے کے لیے مکمل طور پر تیار ہے۔
      یہی نہیں اقوام متحدہ میں کشمیر کی بجائے دہشت گردی سے نجات پر زیادہ زور دئیے جانے سے بھی پاکستانی میڈیا اور مبصروں کے حلقوں میں کھلبلی مچی ہوئی ہے اور وہ بے سرپا باتوں سےپاکستان کی کرتوت کی پردہ پوشی کرنے میں لگ گئے ہیں۔
      بعض پاکستانی میڈیا نے ایسی خبریں بھی دینی شروع کر دی ہیں کہ ہندوستانی فوجی دستوں کو سرحد پر اگلے محاذوں پر روانہ کردیا گیا ہے۔دوسری طرف ہندستانی فوجی ذرائع کا کہنا ہے کہ کوئی جنگی تیاری نہیں کی جارہی ہے۔ تازہ ترین مشقوں کا تعلق البتہ مستقبل میں کسی بھی حملہ پیشگی بچاؤ سے ہے۔
      اخبار نے ایک میڈیا رپورٹ کے حوالے سے یہ بھی کہا ہے کہ واضح رہے کہ ہندستانی فوجی جو پہلے لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باؤنڈری سے 800 سے 1000 کلو میٹر کے فاصلے پر تعینات رہتے تھے انہیں 200 سے 250 کلو میٹر پر تعینات کردیا گیا ہے۔
      پاکستانی ذرائع ابلاغ کے مطابق ہندستان میں جنگی جنون کی ایک سمندری لہر چل پڑی ہے۔ ہندستانی سیاسی رہنمایان اور فوجی ذمہ داران مردانگی کے مظاہرے میں مصروف نظر آتے ہیں ، جس میں ہندستانی جنگجویانہ میڈیا کا عمل دخل ہے۔ ایسا نہیں کہ معقول باتیں نہیں کی جارہی ہیں ، لیکن وہ جنونی شور میں دب جا رہی ہیں ۔
      ایکسپریس ٹریبون نے اس تمہید کے ساتھ لکھا ہے کہ اڑی میں ہلاکت خیز حملہ کے بعد ہندستان کی طرف سے دھمکانے اور لڑائی اکسانے کا یہ سلسلہ شروع ہوا ہے ۔ادھر ریڈیو پاکستان کی ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی) سے بات کرتے ہوئے دفاعی پیداوار کے مرکزی وزیر رانا تنویر حسین نے بھی کہا ہے کہ پاکستان کی مسلح افواج کو دنیا کی بہترین پیشہ ورانہ افواج کے طور پر تسلیم کیا گیا ہے اور ہندستان اس حقیقت سے اچھی طرح واقف ہے۔
      First published: