உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہندوستان سے رافیل کا مقابلہ کرنے کے لئے پاک کو چین سے ملا J-10C فائٹر جیٹ، دیکھیے کون کتنا طاقتور ہے

    پاکستانی فضائیہ میں شمولیت کے موقع پر وزیراعظم عمران خان نے J-10C کی سواری بھی کی۔

    پاکستانی فضائیہ میں شمولیت کے موقع پر وزیراعظم عمران خان نے J-10C کی سواری بھی کی۔

    رافیل کی بات کریں تو ہندوستان نے فرانس سے 59 ہزار کروڑ روپے میں 36 رافیل خریدے ہیں۔ 24 ہزار 500 کلو گرام وزنی رافیل کی ٹاپ اسپیڈ 1389 کلومیٹر فی گھنٹہ ہے۔ اس کی رینج 3700 کلومیٹر ہے۔ اس کے دو انجن ہیں، جو 75 کلوگرام نیوٹن کا تھرسٹ دیتے ہیں، جب کہ J10C سنگل انجن والا ہوائی جہاز ہے، جس کا تھرسٹ 62 کلوگرام نیوٹن ہے۔

    • Share this:
      اسلام آباد: پاکستان نے جمعہ کو چین کے نئے لڑاکا جیٹ J-10C کو اپنے فوجی بیڑے میں باضابطہ طور پر شامل کیا۔ فرانسیسی ساختہ رافیل لڑاکا طیارے کو ہندوستانی فوج میں شامل کرنے سے خوفزدہ پاکستان نے چین سے یہ طیارے جلد بازی میں حاصل کر لیے ہیں۔ پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اس موقع پر کہا کہ چین میں تیار کردہ ان طیاروں نے اس کی فوجی طاقت میں بہت اضافہ کیا ہے۔

      پاکستان کے پنجاب میں منہاس کامرہ ایئربیس پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے J10C طیاروں کی فضائیہ میں شمولیت کو بڑی کامیابی قرار دیا۔ ہندوستان کے رافیل کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے خطے میں عدم توازن پیدا کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں لیکن اس کے حل کے طور پر آج ہمارے دفاعی نظام میں بڑا اضافہ ہوا ہے۔ ہندوستان کا بالواسطہ حوالہ دیتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ اب کسی بھی ملک کو پاکستان کی طرف جارحانہ انداز میں آگے بڑھنے سے پہلے دو بار سوچنا ہوگا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      پاکستان: خطرے میں عمران خان کی حکومت، اپوزیشن لارہی ہے تحریک عدم اعتماد، کیوں آئی نوبت

      8 مہینے میں چین نے دئیے جہاز
      عمران خان نے کہا کہ تقریباً 40 سال قبل جب امریکا سے ایف 16 طیارے فوج میں شامل کیے گئے تو پورا ملک خوش تھا۔ اب ایک بار پھر وہی موقع آیا ہے۔ پاکستان اب چین سے ملنے والے J10C طیاروں کے ذریعے خود کو مضبوط کر رہا ہے۔ انہوں نے صرف 8 ماہ میں یہ طیارہ فراہم کرنے پر چین کا شکریہ بھی ادا کیا۔ اس موقع پر پاک فضائیہ کے سربراہ ظہیر احمد بابر سدھو نے کہا کہ J-10C کو فضائیہ میں شامل کرنے سے فوج کی پیشہ وارانہ صلاحیت میں اضافہ ہوا ہے۔ تاہم چین سے پاکستان کو ملنے والے جے 10 سی طیاروں کی تعداد نہیں بتائی گئی۔ لیکن دسمبر میں پاکستان کے وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے کہا تھا کہ ہندوستان کے رافیل کا مقابلہ کرنے کے لیے ہم چین سے 25 J10C طیاروں کی پوری کھیپ خریدنے جا رہے ہیں۔ پاکستان نے اس نئے لڑاکا طیارے کو 23 مارچ کو یوم دفاع کی سالانہ پریڈ میں دکھانے کا اعلان کیا ہے۔

      رافیل بمقابلہ جے 10سی
      J10 کا پورا نام جیان 10 ہے۔ یہ چینی کمپنی چینگڈو نے بنائی ہیں۔ چین میں سنگل سیٹ J10 کی پہلی پرواز 1998 میں ہوئی تھی۔ J10C اس کا ایڈوانس ورژن ہے۔ اس 4.5 ویں نسل کے لڑاکا طیارے کو چین نے 2018 میں اپنے بیڑے میں شامل کیا تھا۔ چین کے پاس اس وقت سب سے زیادہ J-10 لڑاکا طیارے ہیں۔ یہ JF-17 سے کہیں زیادہ طاقتور ہے، ایک ہلکا لڑاکا طیارہ جو چین-پاک نے مشترکہ طور پر تیار کیا ہے، جو اس وقت پاکستان استعمال کر رہا ہے۔ JF-17 کے مقابلے میں، J10C کو بہت بڑے الیکٹرانک اسکیننگ ریڈار کے ساتھ لگایا جا سکتا ہے۔ فورتھ جنریشن کے میزائل بھی لگائے جاسکتے ہیں۔ یہ میک 2 کی رفتار سے 60,000 فٹ کی بلندی تک اڑ سکتا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Russia سے تیل نہ خریدنے کا فیصلہ کیا دنیا کو نئی مصیبت میں ڈال دے گا؟

      دوسری طرف رافیل کی بات کریں تو ہندوستان نے فرانس سے 59 ہزار کروڑ روپے میں 36 رافیل خریدے ہیں۔ 24 ہزار 500 کلو گرام وزنی رافیل کی ٹاپ اسپیڈ 1389 کلومیٹر فی گھنٹہ ہے۔ اس کی رینج 3700 کلومیٹر ہے۔ اس کے دو انجن ہیں، جو 75 کلوگرام نیوٹن کا تھرسٹ دیتے ہیں، جب کہ J10C سنگل انجن والا ہوائی جہاز ہے، جس کا تھرسٹ 62 کلوگرام نیوٹن ہے۔ زیادہ زور کا مطلب ہے کہ طیارہ تیزی سے اڑ سکتا ہے اور فضائی لڑائی میں تیزی سے حملہ کر سکتا ہے۔ جے 10 سی طیارے کی وجہ تقریباً 14 ہزار کلو گرام ہے۔ رافیل 24 ہزار کلوگرام وزن کے ساتھ اڑ سکتا ہے، جب کہ جے 10 سی کی صلاحیت صرف 19 ہزار کلوگرام سے تھوڑی زیادہ ہے۔ دونوں طیارے ہر موسم میں ملٹی رول والے طیارے ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: