اپنا ضلع منتخب کریں۔

    عمران خان کی آواز دبانے پاکستان حکومت کنفیوز! تقاریر کی نشریات پر پابندی لگا دی گئی، پھر ہٹا دی گئی، جانیں کیوں؟

    واضح رہے کہ 3 نومبر کو سابق وزیراعظم عمران خان کو پاکستان میں مارچ کرتے ہوئے گولی مار دی گئی تھی۔ ان پر یہ حملہ اس وقت ہوا جب پی ٹی آئی کے سربراہ اور پارٹی رہنماؤں کو لے جانے والے کنٹینر کے سامنے کھڑے ایک شخص نے اندھا دھند فائرنگ کردی۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, IndiaPakistanPakistanPakistan
    • Share this:
      پاکستان میں پی ٹی آئی کے صدر عمران خان پر حملے کے بعد پورے پاکستان میں ہنگامہ مچاش ہے۔ کئی شہروں میں مظاہروں اور آگ زنی کے واقعات منظر عام پر آ رہے ہیں اور ایسے میں حکومت پاکستان عمران خان کی تقاریر کو نشر کرنے کے حوالے سے کشمکش کا شکار ہے۔ یہاں کبھی عمران خان کی تقاریر کی نشریات پر پابندی لگا دی جاتی ہے اور کبھی پابندیاں ہٹا دی جاتی ہیں۔ پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی نے ہفتے کے روز عمران خان کی لائیو اور ریکارڈ شدہ تقاریر اور پریس کانفرنسز ٹیلی ویژن پر نشر کرنے پر پابندی عائد کردی۔ حالانکہ چند ہی گھنٹوں میں حکومت پاکستان نے تقاریر پر سے پابندی ہٹا دی۔

      جب پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی سے عمران خان کی تقاریر پر پابندی کے بارے میں پوچھا گیا تو اتھارٹی کی جانب سے کہا گیا کہ یہ کارروائی عمران خان کے اس بیان کی وجہ سے کی گئی جب انہوں نے ایک تقریر کے دوران پاکستانی فوج کے خلاف متنازعہ بیان دیا تھا۔ ملک سے خطاب۔ تبصرہ کیا۔

      عمران خان کے الزاموں سے بوکھلائی پاکستانی فوج حکومت سے قانونی کارروائی کرنے کو کہا

      پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی نے تمام ٹیلی ویژن چینلوں کو جاری کیے گئے خط میں عمران خان کی لانگ مارچ کے دوران کی گئی تقاریر اور جمعہ (4 نومبر) کو کئی سیٹلائٹ ٹی وی چینلز پر نشر ہونے والی ان کی پریس کانفرنس کا حوالہ دیا جاتا ہے جس میں انہوں نے قتل کا منصوبہ بنانے کیلئے بغیر ثبوت کے ریاستی اداروں پر الزامات لگائے۔
      پیمرا کی جانب سے جاری کردہ ہدایت میں کہا گیا ہے کہ ’ایسے مواد کی ترسیل سے لوگوں میں نفرت پیدا ہونے کا خدشہ ہے۔ یہ امن و امان کے خلاف بھی ہے اور اس سے عوامی امن کی خلاف ورزی یا قومی سلامتی کو خطرے میں ڈالنا آئین کے آرٹیکل 19 اور 27 کی سنگین خلاف ورزی ہے۔



      واضح رہے کہ 3 نومبر کو سابق وزیراعظم عمران خان کو پاکستان میں مارچ کرتے ہوئے گولی مار دی گئی تھی۔ ان پر یہ حملہ اس وقت ہوا جب پی ٹی آئی کے سربراہ اور پارٹی لیڈران کو لے جانے والے کنٹینر کے سامنے کھڑے ایک شخص نے اندھا دھند فائرنگ کردی۔ اس واقعے میں عمران خان زخمی ہوئے۔ ایک حامی کی موت ہوگئی۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: