உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ’میں تو مجنوں ہوں...‘ جب کورٹ کی سماعت کے دوران پاکستانی وزیر اعظم شہباز شریف نے خود کے لئےکہی یہ بات

    Shehbaz Sharif calls himself Majnoo: شہباز اور ان کے بیٹوں حمزہ اور سلیمان کے خلاف صوبائی تحقیاتی ایجنس (ایف آئی اے) نے نومبر 2020 میں بدعنوانی روک تھام ایکٹ اور منی لانڈرنگ روک تھام ایکٹ کی مختلف دفعات کے تحت معاملہ درج کیا تھا۔

    Shehbaz Sharif calls himself Majnoo: شہباز اور ان کے بیٹوں حمزہ اور سلیمان کے خلاف صوبائی تحقیاتی ایجنس (ایف آئی اے) نے نومبر 2020 میں بدعنوانی روک تھام ایکٹ اور منی لانڈرنگ روک تھام ایکٹ کی مختلف دفعات کے تحت معاملہ درج کیا تھا۔

    Shehbaz Sharif calls himself Majnoo: شہباز اور ان کے بیٹوں حمزہ اور سلیمان کے خلاف صوبائی تحقیاتی ایجنس (ایف آئی اے) نے نومبر 2020 میں بدعنوانی روک تھام ایکٹ اور منی لانڈرنگ روک تھام ایکٹ کی مختلف دفعات کے تحت معاملہ درج کیا تھا۔

    • Share this:
      لاہور: پاکستان کے وزیر اعظم شہباز شریف (Shehbaz sharif) نے ہفتہ کے روز عدالت میں ایک معاملے کی سماعت کے دوران خود کو مجنوں بتا ڈالا۔ پاکستانی وزیر اعظم شہباز شریف نے اپنے خلاف درج 16 ارب پاکستانی روپئے کے منی لانڈرنگ معاملے (Money Laundering) میں ہفتہ کے روز ایک خصوصی عدالت میں کہا کہ پنجاب کا وزیر اعلیٰ رہنے کے دوران انہوں نے تنخواہ تک نہیں لی اور انہوں نے ‘مجنوں‘ ہونے کے سبب کیا۔

      شہباز شریف اور ان کے بیٹوں حمزہ اور سلیمان کے خلاف وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) نے نومبر 2020 میں بدعنوانی کرپشن کی روک تھام کا ایکٹ اور منی لانڈرنگ کی روک تھام ایکٹ کی مختلف دفعات کے تحت معاملہ درج کیا تھا۔

      سلیمان چل رہا تھا فرار

      حمزہ فی الحال پنجاب صوبہ کے وزیر اعلیٰ ہیں، جبکہ سلیمان فرار ہے اور برطانیہ میں رہ رہا ہے۔ اس درمیان، عدالت نے ہفتہ کو وزیر اعظم شہباز شریف اور ان کے بیٹے حمزہ کی عبوری ضمانت کی مدت چار جون تک کے لئے بڑھا دی۔ ایف آئی اے نے اپنی جانچ میں شہباز فیملی کے مبینہ 28 بے نامی کھاتوں کا پتہ لگایا ہے، جن کے ذریعہ 2008 سے 2018 تک 14 ارب روپئے کی رشوت خوری کی گئی۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      یوریا کی ایک بوری جتنی طاقت، اب ایک بوتل میں‘ PM مودی نے گجرات میں کیا نینو یوریا پلانٹ کا افتتاح

      وزیر اعظم نے کہا- میں نے حکومت سے سالوں تک کچھ نہیں لیا

      شہباز شریف نے سماعت کے دوران کہا، ’میں نے 12.5 سال میں حکومت سے کچھ نہیں لیا اور اس معاملے میں مجھ پر 25 لاکھ روپئے رشوت خوری کا الزام ہے‘۔ ڈان اخبار نے ان کے حوالے سے کہا، ’خدا نے مجھے اس ملک کا وزیر اعظم بنایا ہے۔ میں ایک مجنوں (ناسمجھ) ہوں اور میں نے اپنا قانونی حق، اپنی تنخواہ اور فائدہ نہیں لیا تھا‘۔ شہباز شریف پہلی بار 1997 میں پنجاب کے وزیر اعلیٰ بنے تھے۔ اس وقت ان کے بھائی نواز شریف ملک کے وزیر اعظم تھے۔

      سال 1999 میں جنرل پرویز مشرف کے ذریعہ نواز شریف حکومت کو معزول کئے جانے کے بعد شہباز نے فیملی کے ساتھ 2007 میں پاکستان لوٹنے سے پہلے سعودی عرب میں 8 میں دوسری بار پنجاب کے وزیر اعلیٰ بنے اور 2013 میں تیسری بار اقتدار میں آئے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: