உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان: عمران خان کی سیالکوٹ ریلی سے پہلے PTI کارکنان پر لاٹھی چارج، کئی گرفتار

    عمران خان کی سیالکوٹ ریلی سے پہلے PTI کارکنان پر لاٹھی چارج، کئی گرفتار

    عمران خان کی سیالکوٹ ریلی سے پہلے PTI کارکنان پر لاٹھی چارج، کئی گرفتار

    سابق وزیر اعظم عمران خان کی قیادت والی پی ٹی آئی کی سیالکوٹ ریلی سے پہلے جگہ کو خالی کرنے کی کارروائی شروع کردی۔ مقامی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق، ہفتہ کی صبح سیالکوٹ میں شہباز شریف کی قیادت والی حکومت کو ہٹانے کے خلاف پی ٹی آئی نے احتجاج کیا۔

    • Share this:
      اسلام آباد: سابق وزیر اعظم عمران خان کی قیادت والی پی ٹی آئی کی سیالکوٹ ریلی سے پہلے جگہ کو خالی کرنے کی کارروائی شروع کردی۔ مقامی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق، ہفتہ کی صبح سیالکوٹ میں شہباز شریف کی قیادت والی حکومت کو ہٹانے کے خلاف پی ٹی آئی نے احتجاج کیا۔ اس کے بعد پولیس نے پی ٹی آئی کارکنان پر آنسو گیس چھوڑے اور لاٹھی چلانی شروع کردی۔

      ڈان اخبار نے پی ٹی آئی کی ٹوئٹ کے حوالے سے لکھا کہ دن میں ہونے والی ریلی سے پہلے لیڈر عثمان ڈار سمیت پارٹی کے کئی اراکین کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ ٹیلی ویژن فوٹیج کا حوالہ دیتے ہوئے ڈان اخبار نے لکھا کہ پولیس ملازمین کو ریلی کے لئے بنائے گئے ڈھانچے کو توڑتے ہوئے دیکھا گیا، جبکہ فوٹیج میں آنسو گیس کے گولے داغے جانے کی بات بھی سامنے آئی ہے۔

      وہیں پورے معاملے کو لے کر سیالکوٹ ریلی کی جگہ پر موجود ضلع پولیس افسر حسن اقبال نے کہا کہ مقامی عیسائی طبقے نے زمین پر عوامی تقریب منعقد کئے جانے کو لے کر اعتراض ظاہر کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ ان کی جائیداد ہے۔ انہوں نے ہائی کورٹ میں عرضی دائر کرتے ہوئے کہا تھا کہ گراونڈ پر کوئی سیاسی ریلی نہ ہو۔ اس پر عدالت نے سیالکوٹ ڈپٹی کمشنر کو حکم دیا کہ دونوں پارٹیوں کو سنئے اور کیس کا فیصلہ کیجئے۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      الجزیرہ کی رپورٹر کی موت پر شہباز شریف نے ہندوستان کو گھسیٹا

      جمعہ کے روز سابق وزیر اعظم عمران خان نے پاکستان میں عام انتخابات کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔ سابق وزیر اعظم عمران خان نے سرکاری ملازمین سے کہا کہ اگر آپ اپنی نوکری کے جانے سے ڈر رہے ہیں تو آپ اپنے اہل خانہ کو ریلی میں بھیجئے۔ جمعرات کو حملے میں ایک پاور شو کو خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے لوگوں سے ’آزاد پاکستان‘ کی طرف ایک لمبے مارچ کے لئے پی ٹی آئی کے ساتھ متحد ہونے کی اپیل کی۔

      میڈیا رپورٹ کے مطابق، انہوں نے اعلان کیا کہ وہ اپنے راستے میں آنے والے کسی بھی نتائج کا سامنا کرنے کے لئے تیار ہیں، چاہے وہ مارا جائے یا گرفتار کیا جائے۔ اس سے پہلے بے دخل کئے گئے وزیر اعظم عمران خان نے میاں والی ریلی کو خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان کے وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ اور یہاں تک کہ نومنتخب وزیر اعظم شہباز شریف سمیت لاکھوں شہریوں کے عوامی مارچ کو کوئی نہیں روک سکتا۔ عمران خان پر قومی اداروں کے خلاف عوامی جلسوں میں سخت الفاظ کا استعمال کرنے کے لئے بھی معاملہ درج ہونے کا امکان ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: