உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان کو ملی راحت، ہائی کورٹ نے 25 اگست تک گرفتاری پر لگائی روک

    پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان کی گرفتاری پر ہائی کورٹ نے 25 اگست تک روک لگا دی۔

    پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان کی گرفتاری پر ہائی کورٹ نے 25 اگست تک روک لگا دی۔

    پاکستان تحریک انصاف کے صدر اور پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان کو ہائی کورٹ سے راحت ملی ہے۔ ہائی کورٹ نے 25 اگست تک عمران خان کی گرفتاری پر روک لگائی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف پارٹی (پی ٹی آئی) کے صدر اور پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان کو ہائی کورٹ سے راحت ملی ہے۔ ہائی کورٹ نے 25 اگست تک عمران خان کی گرفتاری پر روک لگائی ہے۔ عمران خان نے اپنے خلاف درج ایک دہشت گردانہ معاملے میں گرفتاری سے بچنے کے لئے اسلام آباد ہائی کورٹ میں گرفتاری سے پہلے ضمانت عرضی دائر کی تھی۔ اس کے بعد عدالت نے ان کو 25 اگست تک تین دنوں کے لئے ٹرانزٹ بیل دی ہے۔

      پاکستان کے جیو نیوز کی ایک خبر کے مطابق، پی ٹی آئی کی قانونی ٹیم نے گرفتاری سے پہلے ضمانت عرضی دائر کی تھی۔ عرضی میں کہا گیا ہے کہ عمران خان کو جب بھی طلب کیا جائے گا، وہ عدالت میں پیش ہونے کو تیار ہیں۔ پاکستان کی راجدھانی کے ایف-9 پارک میں ایک ریلی میں اسلام آباد پولیس کے سینئر افسران اور ایک ایڈیشنل سیشن جج کو دھمکی دینے کے لئے انسداد دہشت گردی ایکٹ (اے ٹی اے) کے تحت سابق وزیر اعظم عمران خان کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی تھی۔

      عمران خان نے اپنے خلاف درج ایک دہشت گردانہ معاملے میں گرفتاری سے بچنے کے لئے اسلام آباد ہائی کورٹ میں گرفتاری سے پہلے ضمانت عرضی دائر کی تھی۔
      عمران خان نے اپنے خلاف درج ایک دہشت گردانہ معاملے میں گرفتاری سے بچنے کے لئے اسلام آباد ہائی کورٹ میں گرفتاری سے پہلے ضمانت عرضی دائر کی تھی۔


      پی ٹی آئی کے وکیل فیصل چودھری اور بابر اعوان نے سابق وزیر اعظم کی طرف سے عرضی داخل کی تھی، جنہوں نے اس دلیل میں کہا کہ وہ جب بھی سمن کیا جاتا ہے، تو وہ عدالت میں پیش ہونے کے لئے تیار ہیں۔ عرضی میں کہا گیا ہے کہ عمران خان کا ماضی سے کوئی مجرمانہ ریکارڈ نہیں ہے اور انہیں کبھی کسی جرم کے لئے قصور وار نہیں ٹھہرایا گیا ہے۔ ان کے ذریعہ استغاثہ کے ذریعہ پیش کئے گئے ثبوتوں کو نقصان پہنچانے یا فرار ہونے کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      پاکستان: عمران خان کی گرفتاری کی تیاری کے درمیان PTI نے دی سنگین نتائج کی وارننگ

      یہ بھی پڑھیں۔

      ہندوستان کے خلاف نہیں کی جارہی ہے دہشت گردانہ سازش، پاکستان نے کی خبروں کی تردید

      عمران خان اپنی ضمانت کے لئے ضمانت کے طور پر پیسہ جمع کرنے کو بھی تیار ہیں۔ جسٹس محسن اختر کیانی اور جسٹس بابر ستار نے معاملے کی سماعت کی اور انہوں نے 25 اگست تک عمران خان کو ٹرانزٹ بیل دے دی۔ عمران خان کو معاملے میں متعلقہ 25 اگست اگست تک انسداد دہشت گردی عدالت (اے ٹی سی) سے رابطہ کرنے کے لئے کہا۔

      اس درمیان وزارت داخلہ نے معاملہ درج ہونے کے بعد عمران خان کو گرفتار کرنے کے لئے وزیر اعظم شہباز شریف کو دفتر سے تحریری اجازت مانگی ہے۔ ذرائع کے مطابق، گرفتاری سے بچنے کے لئے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے صدر اپنی رہائش گاہ سے نکل گئے ہیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ وہ لاہور یا خیبر پختونخوا کے لئے روانہ ہوگئے ہیں۔ جبکہ پی ٹی آئی لیڈر فیصل واوڑا نے کہا کہ عمران خان ابھی بھی بنی گالا میں ہیں۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: