اپنا ضلع منتخب کریں۔

    پاکستان: کویٹا میں پولیس ٹرک پر خودکش حملہ، بچے سمیت 3 کی موت، 27 زخمی

    Pakistan Blast:  یہ واقعہ بلیلی کے علاقے میں پیش آیا۔ پولیس کے مطابق خودکش حملے میں بلوچستان کانسٹیبلری کے ٹرک کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ ایک اطلاع کے مطابق تحریک طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری  لی ہے۔

    Pakistan Blast: یہ واقعہ بلیلی کے علاقے میں پیش آیا۔ پولیس کے مطابق خودکش حملے میں بلوچستان کانسٹیبلری کے ٹرک کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ ایک اطلاع کے مطابق تحریک طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری لی ہے۔

    Pakistan Blast: یہ واقعہ بلیلی کے علاقے میں پیش آیا۔ پولیس کے مطابق خودکش حملے میں بلوچستان کانسٹیبلری کے ٹرک کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ ایک اطلاع کے مطابق تحریک طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری لی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Pakistan
    • Share this:
      Pakistan Quetta Blast: پاکستان کے شہر کویٹا میں خودکش حملے میں ایک پولیس اہلکار اور ایک بچہ کی موت ہو گئی اور 27 لوگ زخمی ہوئے ہیں۔ زخمیوں میں 22 پولیس اہلکار بتائے جارہے ہیں۔ یہ واقعہ بلیلی کے علاقے میں پیش آیا۔ پولیس کے مطابق خودکش حملے میں بلوچستان کانسٹیبلری کے ٹرک کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ ایک اطلاع کے مطابق تحریک طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری لی ہے۔

      پولیس حکام کا کہنا ہے کہ دھماکے کے بعد پولیس اور بم اسکواڈ کو موقع پر طلب کر لیا گیا ہے۔ دھماکے کی جگہ کو گھیرے میں لے لیا گیا ہے اور شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں۔ ڈی آئی جی غلام اظفر مہیسر کا کہنا ہے کہ بلیلی دھماکے میں ایک پولیس اہلکار اور ایک بچے کی موت ہوگئی جبکہ 22 پولیس اہلکاروں سمیت 27 افراد زخمی ہوئے۔ انہوں نے بتایا کہ اس خودکش حملے میں 20 سے 25 کلو بارودی مواد استعمال کیا گیا۔ پولیس اہلکار ٹرک پر پولیو ڈیوٹی کے لیے جا رہے تھے۔



       

      پولی گراف ٹیسٹ میں آفتاب نے قبول کی قتل کی بات، بولا: افسوس نہیں

      فحش فلمیں دیکھنے کی تھی لت، 5 کلاس میٹ نے دوست لڑکی کا کیا ریپ، ویڈیو بھی بنایا اور۔۔۔۔

      ڈی آئی جی مہیسر  نے مزید بتایا کہ حملے کے بعد ٹرک کھائی میں گرنے سے ایک پولیس اہلکار کچل کر ہلاک ہوگیا۔ جس کی وجہ سے وہ جان کی بازی ہار گیا۔ اس کے علاوہ زخمیوں کی زیادہ تعداد کی وجہ ٹرک کھائی میں گرنا بھی ہے۔ ڈی آئی جی کے مطابق دھماکے میں پولیس ٹرک سمیت تین گاڑیوں اور قریبی دو کاروں کو نقصان پہنچا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: