உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان کے ایک اسکول کے واش روم میں لگائے گئے تھے خفیہ کیمرے، کھلی پول تو اسکول ہوا سیل

    رپورٹ کے مطابق واقعہ کے منظر عام پر آنے کے بعد اسکول کی انتظامیہ کو شوکاز نوٹس دے کر وارننگ دی گئی ہے۔

    رپورٹ کے مطابق واقعہ کے منظر عام پر آنے کے بعد اسکول کی انتظامیہ کو شوکاز نوٹس دے کر وارننگ دی گئی ہے۔

    رپورٹ کے مطابق واقعہ کے منظر عام پر آنے کے بعد اسکول کی انتظامیہ کو شوکاز نوٹس دے کر وارننگ دی گئی ہے۔

    • Share this:
      اسلام آباد۔ پاکستان (Pakistan) کے ایک اسکول کے واش روم (Washroom) میں خفیہ کیمرہ (Hidden Camera) ملنے کے بعد سے ہی ہنگامہ مچ گیا ہے۔ اسکول کی یہ حرکت منظر عام پر آنے کے بعد محکمہ تعلیم سندھ نے نجی اسکول کا رجسٹریشن منسوخ کردیا۔ اس کے ساتھ ہی اسکول کی عمارت کو سیل کر دیا گیا ہے۔ یہ کیمرے لڑکوں اور لڑکیوں دونوں کے واش روم میں چھپائے گئے تھے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق یہ خفیہ کیمرے صفورا گوٹھ کے ایک نجی اسکول کے واش روم سے ملے ہیں۔

      رپورٹ کے مطابق واقعہ کے منظر عام پر آنے کے بعد اسکول کی انتظامیہ کو شوکاز نوٹس دے کر وارننگ دی گئی ہے۔ لیکن کہا جا رہا ہے کہ ابھی تک سکول کی طرف سے کوئی جواب نہیں دیا گیا ہے۔ سیل ہونے کے بعد بھی جمعہ کو اسکول کھلا رکھا گیا۔ درحقیقت چیپل سن سٹی کے دی ہارکس اسکول کی ایک خاتون ٹیچر نے سندھ میں پرائیویٹ اداروں کے ڈائریکٹوریٹ آف انسپیکشن میں شکایت درج کرائی تھی۔ اس کی ایک کمیٹی نے جمعرات کو اسکول کا دورہ کیا تھا۔

      اسکول کے واش روم سے دو خفیہ کیمرے ملے
      رپورٹ میں کہا گیا کہ یہ کیمرے واش روم میں اس طرح چھپائے گئے تھے کہ طلباء اور عملے کی نقل و حرکت دیکھی جا سکے۔ ساتھ ہی میڈیا رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ اسکول کی کچھ خواتین اساتذہ کو ان کیمروں کے بارے میں پتہ علم تھا لیکن انہیں شک تھا کہ کیمرے کہاں لگائے گئے ہیں۔

      ٹیم نے پہلی بار جب اسکول کا دورہ کیا تھا تو انہیں کچھ نہیں ملا لیکن اپنے دوسرے دورے پر انہیں دیوار پر ایک چادر نظر آئی، جب اسے ہٹایا گیا تو اس کے پیچھے کیمرے لگے ہوئے تھے۔ ایک دوسرے واش روم میں بھی ایک کیمرہ اور ملا۔

      اس کے ساتھ ساتھ والدین اور اساتذہ کی جانب سے شہر کے پرائیویٹ اسکولوں کے حوالے سے متعدد بار شکایات درج کرائی گئیں۔ اس پر محکمہ تعلیم کے حکام کا کہنا ہے کہ واش روم میں کیمرے لگنے کا یہ پہلا واقعہ ہے۔ طلباء اور عملے پر نظر رکھنے کے لیے کیمرے نصب کیے جا سکتے ہیں لیکن انہیں واش روم میں استعمال نہیں کیا جا سکتا۔ اس سارے معاملے پر سندھ کے وزیر تعلیم سید سردار علی شاہ کا کہنا ہے کہ سیکیورٹی کے نام پر ایسے اقدامات کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔

       
      Published by:Sana Naeem
      First published: