உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ آج، پاکستانی پارلیمنٹ کے سکریٹریٹ نے جاری کیاOrder

    Youtube Video

    کرکٹر سے سیاست دان بنے 69 سالہ خان 'نیا پاکستان' بنانے کے وعدے کے ساتھ 2018 میں اقتدار میں آئے لیکن اشیائے ضروریہ کی قیمتوں کو کنٹرول میں رکھنے کے بنیادی مسئلے کو حل کرنے میں بری طرح ناکام رہے۔

    • Share this:
      اسلام آباد: پاکستان کی قومی اسمبلی کے سیکرٹریٹ نے وزیراعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد پر ہفتہ کی صبح 10.30 بجے اجلاس بلانے کا حکم جاری کر دیا ہے۔ یہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب جمعرات کو سپریم کورٹ آف پاکستان نے ڈپٹی اسپیکر کے فیصلے کو کالعدم قرار دے دیا، جس نے عمران خان حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد کو مسترد کر دیا تھا۔

      سپریم کورٹ نے تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ کے لیے قومی اسمبلی کا اجلاس ساڑھے 10 بجے بلانے کی ہدایت کی تھی۔ عدالت نے عدم اعتماد کے ووٹ کو مسترد کرنے کے بعد اٹھائے گئے تمام اقدامات کو کالعدم قرار دے دیا۔ اس کے ساتھ ہی قومی اسمبلی بھی بحال کر دی گئی۔ سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق اسپیکر قومی اسمبلی کی ذمہ داری ہے کہ وہ موجودہ اجلاس میں قانون ساز اسمبلی کا اجلاس بلائیں۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Explained: تحریک عدم اعتماد میں 9اپریل کو عمران خان کی ہار کیوں ہے طئے، جانیے وجہ

      سپریم کورٹ نے فیصلہ سناتے ہوئے کہا تھا کہ تحریک عدم اعتماد پر قومی اسمبلی کا اجلاس ہفتہ کو ہونا چاہیے اور تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ تک اسے ملتوی نہ کیا جائے۔ سپریم کورٹ نے یہ بھی کہا کہ اگر عمران خان کو تحریک عدم اعتماد کے نتیجے میں ہٹایا جاتا ہے تو اسی اجلاس میں نئے قائد ایوان کا انتخاب کیا جائے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      قوم سے خطاب میں Imran Khan نے ہندوستان کی پھر تعریف کی، ہو گئے جذباتی، کہہ ڈالی یہ بڑی بات

      وزیراعظم خان کو اقتدار سے ہٹانے کے لیے اپوزیشن جماعتوں کو 342 رکنی ایوان میں 172 ارکان کی ضرورت ہے اور وہ پہلے ہی ضرورت سے زیادہ تعداد ظاہر کر چکی ہیں۔ اب خان ممکنہ طور پر پاکستان کی تاریخ میں پہلے وزیراعظم ہوں گے جنہیں تحریک عدم اعتماد سے باہر کیا جا سکتا ہے۔

      کرکٹر سے سیاست دان بنے 69 سالہ خان 'نیا پاکستان' بنانے کے وعدے کے ساتھ 2018 میں اقتدار میں آئے لیکن اشیائے ضروریہ کی قیمتوں کو کنٹرول میں رکھنے کے بنیادی مسئلے کو حل کرنے میں بری طرح ناکام رہے۔ قومی اسمبلی کی موجودہ مدت اگست 2023 میں ختم ہونی تھی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: