உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شہباز شریف نے نصف شب پریس کانفرنس کرکے انتخابی نتائج کو کیا مسترد، انتخاب میں دھاندلی کا الزام

    پاکستان مسلم لیگ (نواز) کے صدر شہباز شریف

    پاکستان مسلم لیگ (نواز) کے صدر شہباز شریف

    پاکستان مسلم لیگ (نواز) کے صدر شہباز شریف نے اس انتخابی نتائج کو بھی ماننے سے انکار کردیا۔ انہوں نے نصف شب پریس کانفرنس میں بدعنوانی کے الزامات عائد کئے ہیں۔

    • Share this:
      پاکستان انتخابات میں آرہے تازہ رجحانات کے تحت کرکٹر سے لیڈر بنے عمران خان کی پی ٹی آئی رات ایک بجے تک تقریباً 110 سیٹوں پر آگے چل رہی تھی۔ اسی درمیان پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کےسربراہ اورمعزول وزیراعظم وجیلوں میں بند نواز شریف کے بھائی شہباز شریف نے پریس کانفرنس کرکے الیکشن عمل میں دھاندلی (بدعنوانی) کی شکایت کی بات کہی ہے۔

      شریف نے اس انتخابی نتائج کو بھی ماننے سے انکار کردیا۔ شہباز شریف نے ٹوئٹ کرکے الزام لگایاہے کہ ووٹوں کی گنتی ان کے ساتھ بوتھ ایجنٹس کی غیرموجودگی میں شروع کی گئی۔ ساتھ ہی شریف نے زبردست بدعنوانی کی وجہ سے ان انتخابی نتائج کو ماننے سے بھی انکار کردیا۔

      شہباز شریف نے کہا ’’پوری زندگی میں ایسی خوفناک سیاست نہیں دیکھی‘‘۔ انہوں نے نصف شب پریس کانفرنس کو خطاب کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں لگا تھا کہ الیکشن میں عوام اپنی مرضی سے ملک کا لیڈر منتخب کرے گی۔ عوام بڑی تعداد میں ووٹ کرنے کے لئے آئی بھی‘‘۔ الیکشن کمیشن پر نتائج کو روکنے اور نتائج سے چھیڑ چھاڑ کا الزام لگاتے ہوئے شہباز نے کہا ’’میں نے اپنے پورے سیاسی کیریئر میں ایسی خوفزدہ سیاست نہیں دیکھی‘‘۔




      شریف نے کہا ’’پارٹی پولنگ ایجنٹس کو باہر نکالا گیا۔ اتنے برے طریقے سے الیکشن کو متاثر کیا گیا۔ اس سے پاکستان کو 30 سال پیچھے لے جایا جارہا ہے۔ واضح رہے کہ الیکشن کمیشن نے اس طرح کے الزامات کو مسترد کردیا ہے اور لیڈروں کو ایسے بے بنیاد الزامات لگانے سے بچنے کے لئے کہا ہے۔


      شہباز شریف نے اپنے پریس کانفرنس میں کہا ’’ہم دیگر پارٹیوں کے ساتھ اتفاق بنائیں گے اور اس متعلق شکایت کریں گے۔ ہم اسے ایسے ہی نہیں چھوڑ سکتے ہیں۔ ہم پنجاب میں صوبائی انتخاب جیت رہے ہیں۔ یہ جیت یا شکست کی بات نہیں ہے، یہ پاکستان کے مستقبل کا سوال ہے‘‘۔


       
      First published: