உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان نے ہندوستانی سفارتکار کو کیا طلب، اقلیتوں کے خلاف تقاریر کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا کیا مطالبہ

    ہریدوار میں مسلمانوں کے قتل عام کرنے کا نعرہ دینے کے معاملے میں پاکستان کا ردعمل

    ہریدوار میں مسلمانوں کے قتل عام کرنے کا نعرہ دینے کے معاملے میں پاکستان کا ردعمل

    اس پروگرام میں کئی مقرروں نے مبینہ طور پر اشتعال انگیز اور نفرت بھری تقاریر کیں، جس میں اقلیتی طبقے کے لوگوں کا قتل عام کرنے کا نعرہ دیا گیا تھا۔ پاکستان نے ہندوستانی فریقی کو بتایا کہ شہری سماج اور ملک کے لوگوں کے ایک طبقے نے مبینہ طور پر گھناونی تقاریر کو تشویشناک قرار دیا ہے۔

    • Share this:
      اسلام آباد: پاکستان نے پیر کو ہندوستان کے وزارت خارجہ کے انچارج ہائی کمشنر کو طلب کیا اور حال ہی میں ہریدوار میں منعقد ایک اجلاس میں اقلیتوں کے خلاف تشدد بھڑکانے کے ارادے سے دئیے گئے مبینہ نفرت بھری تقاریر پر تشویش ظاہر کی۔ ہریدوار میں 16 سے 19 دسمبر کے درمیان، وید نکیتن دھام میں منعقدہ دھرم سنسد میں مقررین نے مسلمانوں کے خلاف مبینہ طور پر نفرت پھیلانے والی تقریریں کی تھیں۔ اس پروگرام کا انعقاد غازی آباد میں ڈاسنا مندر کے پروہت یتی نرسمہانند نے کیا تھا۔ مسلمانوں کے خلاف نفرت پر مبنی تقریروں اور تشدد کو بڑھاوا دینے کے لئے پولیس کی پہلے سے ہی نرسمہانند پر نظر ہے۔

      اس پروگرام میں کئی مقرروں نے مبینہ طور پر اشتعال انگیز اور نفرت بھری تقاریر کیں، جس میں اقلیتی طبقے کے لوگوں کا قتل عام کرنے کا نعرہ دیا گیا تھا۔ پاکستان نے ہندوستانی فریقی کو بتایا کہ شہری سماج اور ملک کے لوگوں کے ایک طبقے نے مبینہ طور پر گھناونی تقاریر کو تشویشناک قرار دیا ہے۔

      پاکستان خارجہ دفتر کے ایک بیان کے مطابق، ہندوستان کے لئے یہ بہت ہی قابل مذمت بات ہے کہ نہ تو آرگنائزرئس نے کوئی افسوس ظاہر کیا ہے اور نہ ہی حکومت ہند نے اُن کی مذمت کی ہے۔ اُن کے خلاف کوئی کارروائی بھی نہیں کی ہے۔ خارجہ دفتر نے کہا کہ مسلمانوں کے خلاف تشدد کے لگاتار واقعات نے ’اسلام کو لے کر ڈر کے بگڑتے رجحان کو اُجاگر کیا ہے اور ہندوستان میں مسلمانوں کی تقدیر کے بارے میں ایک گمبھیر سوال کھڑا کیا ہے۔

      گھناونی تقاریر کی کرائی جانی چاہیے جانچ: پاکستان
      پاکستانی خارجہ دفتر نے کہا کہ ہندوستان نے ان گھناونے تقاریر اور اقلیتوں کے خلاف منظم تشدد کے واقعات کی جانچ کرنے اور مستقبل میں ایسے واقعات کو روکنے کے لئے اقدامات کرنے کی امید ظاہر کی ہے۔

      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: