உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    امریکی وزیر خارجہ نے کہا- افغانستان میں امن سے پاکستان کو ہوگا سب سے زیادہ فائدہ

    امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائیس نے پیر کو روزانہ پریس کانفرنس میں کہا کہ ’ہم طالبان کو مثبت بات چیت کے لئے ترغیب دینے سمیت افغان امن عمل کو آگے بڑھانے اور جنوبی ایشیا میں استحکام لانے کے پاکستان کی کوششوں کی سراہنا کرتے ہیں‘۔

    امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائیس نے پیر کو روزانہ پریس کانفرنس میں کہا کہ ’ہم طالبان کو مثبت بات چیت کے لئے ترغیب دینے سمیت افغان امن عمل کو آگے بڑھانے اور جنوبی ایشیا میں استحکام لانے کے پاکستان کی کوششوں کی سراہنا کرتے ہیں‘۔

    امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائیس نے پیر کو روزانہ پریس کانفرنس میں کہا کہ ’ہم طالبان کو مثبت بات چیت کے لئے ترغیب دینے سمیت افغان امن عمل کو آگے بڑھانے اور جنوبی ایشیا میں استحکام لانے کے پاکستان کی کوششوں کی سراہنا کرتے ہیں‘۔

    • Share this:
      واشنگٹن: امریکہ (America) نے کہا ہے کہ افغانستان (Afghanistan) میں امن کے عمل میں پاکستان (Pakistan) کا اہم کردار رہے گا اور پڑوسی ملک میں امن سے سب سے زیادہ فائدہ پاکستان کو ہی ہوگا۔ امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائیس نے پیر کو روزانہ پریس کانفرنس میں کہا کہ ’ہم طالبان کو مثبت بات چیت کے لئے ترغیب دینے سمیت افغان امن عمل کو آگے بڑھانے اور جنوبی ایشیا میں استحکام لانے کے پاکستان کی کوششوں کی سراہنا کرتے ہیں‘۔ انہوں نے کہا کہ ’پاکستان کو بے حد فائدہ ملنے والا ہے اور اس کا کردار اہم رہنے والا ہے۔ اس کے علاوہ وہ ان نتائج کو سامنے لانے میں اہم کردار نبھانے کی صورت میں ہے، جو نہ صرف امریکہ بلکہ اس کے بہت سے بین الاقوامی شراکت چاہتے ہیں، ساتھ ہی جس کی خواہش بہت سے ممالک رکھتے ہیں۔ اس لئے ہم کام کرنا جاری رکھیں گے اور اس موضوع پر پاکستانی شراکت کے ساتھ بات چیت جاری رکھیں گے۔

      گزشتہ ہفتے پاکستانی قومی سلامتی کے مشیر محمد یوسف نے امریکہ کے سلامتی مشیر جیک سلیون سے ملاقات کی تھی۔ پرائس نے کہا، ’(پاکستانی) قومی سلامتی کے مشیر نے وزارت خارجہ (ٹونی بلنکن) سے ملاقات نہیں کی‘۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے افغانستان امن عمل کے متعلق چین کے حالیہ بیان کا ذکر کیا کہ امن امن افغان کی پالیسی اور افغانی ملکیت والی ہونی چاہئے۔

      انہوں نے کہا، ’تو مفاد میں کہیں نہ کہیں میل ہے، خاص طور پر ان علاقوں میں کہ ہم افغانستان میں چاہتے ہیں، پی آر سی (پیپلز ریپبلک آف چائنا) افغانستان میں کیا چاہتا ہے اور سرحد بین الاقوامی برادری افغانستان میں کیا چاہتے ہیں۔ ہم مشترکہ اہداف کو حاصل کرنے کے لئے ساتھ مل کر کام کرنے کے واسطے طریقوں کو تلاش جاری رکھیں گے۔

       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: