نیتن یاہو اسرائیلی کابینہ کے ہفتہ وار اجلاس کے موقع پرفلسطینی صدر محمود عباس پر برس پڑے ہیں اور انھیں اس حملے کی مذمت نہ کرنے پر تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ خیال رہے کہ اسرائیل نے خیر سگالی کے طور پر رمضان میں فلسطینیوں کے لیے بعض اقدامات کا اعلان کیا تھا اور غزہ سے تعلق رکھنے والے ایک سو فلسطینیوں کو مقبوضہ بیت المقدس میں مسجدِ اقصیٰ میں نمازوں کی ادائی کے لیے آنے کی اجازت دی تھی۔

Loading...

ادھر قابض صہیونی فوج اور پولیس نے مسجد اقصیٰ میں نماز اور عبادت کے لیے آنے والے نہتے فلسطینیوں پر وحشیانہ تشدد کیا ہے جس کے نتیجے میں متعدد فلسطینی زخمی ہوگئے ہیں۔ دوسری جانب آج اتوار کو اسرائیلی پولیس کی فول پروف سیکیورٹی میں دسیوں یہودی آباد کاروں نےقبلہ اول پر دھاوا بولا اور نام نہاد تلمودی تعلیمات کی روشنی میں مذہبی رسومات ادا کی گئیں۔