உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پیرس اور برسلز کے حملوں کےمشتبہ ملزمان گرفتار

    بروسلز۔ بیلجیم کی پولس نے پیرس اور برسلز میں اسلامک اسٹیٹ (داعش) کےدہشت گردانہ حملوں کے سلسلے میں آج تین مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا۔

    بروسلز۔ بیلجیم کی پولس نے پیرس اور برسلز میں اسلامک اسٹیٹ (داعش) کےدہشت گردانہ حملوں کے سلسلے میں آج تین مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا۔

    بروسلز۔ بیلجیم کی پولس نے پیرس اور برسلز میں اسلامک اسٹیٹ (داعش) کےدہشت گردانہ حملوں کے سلسلے میں آج تین مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      بروسلز۔ بیلجیم کی پولس نے پیرس اور برسلز میں اسلامک اسٹیٹ (داعش) کےدہشت گردانہ حملوں کے سلسلے میں آج تین مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا۔ استغاثہ نے اس کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ 'اہم مشتبہ' محمد ابريني کو دو دیگر مشتبہ افراد كے ساتھ حراست میں لیا گیا ہے اور ابريني 13 نومبر کو پیرس میں ہونے والے دہشت گردانہ حملے میں ملوث تھا۔ اس حملے میں 130 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ تفتیش کار اس بات کا پتہ لگا رہے ہیں کہ برسلز ہوائی اڈے پر 22 مارچ کو ہونے والے حملے سے متعلق ایک سی سی ٹی وی فوٹیج میں 'ہیٹ والے' جس مشتبہ شخص کو دکھایا گیا ہے، وہ ابريني ہے یا نہیں۔


      اکتیس سالہ ابريني کو پولس نے برسلز کے مولنبيك علاقے سے حراست میں لیا ہے ۔ اس علاقے میں وہ طویل عرصے سے متعدد چھوٹے چھوٹے جرائم کے لئے مشہور تھا۔ اس سے پہلے پولس نے دو دیگر مشتبہ افراد کو بھی حراست میں لیا ہے جن میں سے ایک کی شناخت اسامہ كریم کے طور پر سامنے آئی ہے۔ اسامہ کریم 22 مارچ کو یہاں میٹرو اسٹیشن پر ہونے والے حملوں سے پہلے کی سی سی ٹی وی فوٹیج میں خودکش حملہ آور کے ساتھ مبینہ طور پر دکھائی دے رہا تھا۔ اسامہ کریم پیرس حملے کے اہم مشتبہ صلاح عبدالسلام کا قریبی ہے۔
      بیلجیم کے وزیر داخلہ جین جومبون نے مشتبہ ملزمان کی گرفتاری مہم میں شامل افسران کو مبارکباد دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ "اس گرفتاری کے بعد بھی قومی سلامتی کی وارننگ کی سطح میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی ہے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ جاری ہے"۔

      First published: