உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    وزیر اعظم مودی کی سعودی عرب کے وزیر خارجہ سے ملاقات ، توانائی اور صحت کے شعبے پر تبادلہ خیال

    ریاض : وزیر اعظم مودی کے دورہ سعودی عرب کے ایجنڈے میں توانائی اور صحت کے امور سہرفہرست ہیں، جہاں آج انہوں نے سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر اور وزیر صحت خالدہ الفالح کے ساتھ دار الحکومت ریاض میں دوطرفہ بات چیت کی۔ وزیر اعظم مودی کے دورہ سعودی عرب کا آج دوسرا دن ہے۔

    ریاض : وزیر اعظم مودی کے دورہ سعودی عرب کے ایجنڈے میں توانائی اور صحت کے امور سہرفہرست ہیں، جہاں آج انہوں نے سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر اور وزیر صحت خالدہ الفالح کے ساتھ دار الحکومت ریاض میں دوطرفہ بات چیت کی۔ وزیر اعظم مودی کے دورہ سعودی عرب کا آج دوسرا دن ہے۔

    ریاض : وزیر اعظم مودی کے دورہ سعودی عرب کے ایجنڈے میں توانائی اور صحت کے امور سہرفہرست ہیں، جہاں آج انہوں نے سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر اور وزیر صحت خالدہ الفالح کے ساتھ دار الحکومت ریاض میں دوطرفہ بات چیت کی۔ وزیر اعظم مودی کے دورہ سعودی عرب کا آج دوسرا دن ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      ریاض : وزیر اعظم مودی کے دورہ سعودی عرب کے ایجنڈے میں توانائی اور صحت کے امور سہرفہرست ہیں، جہاں آج انہوں نے سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر اور وزیر صحت خالدہ الفالح کے ساتھ دار الحکومت ریاض میں دوطرفہ بات چیت کی۔ وزیر اعظم مودی کے دورہ سعودی عرب کا آج دوسرا دن ہے۔
      دوطرفہ ملاقات میں مسٹر عادل الجبیر نے کہا کہ سعودی عرب کی بڑی تونائی سپلائر کمپنی ارامکو ہندوستان کو اپنی سرمایہ کاری کے لئے نمبرایک ہدف کے طور پر دیکھتی ہے، جبکہ محترمہ خالدہ الفالح نے کہا کہ مسٹر نریندر مودی کے ساتھ بات چیت کے ایجنڈے میں توانائی اور صحت کے شعبے سرفہرست رہے۔
      سعودی وزیر خارجہ مسٹر عادل الجبیر نے وزیر اعظم نریندر مودی کے رسمی استقبال سے قبل یہاں ان کی آمد پر ان سے ملاقات کی۔ یہ میٹنگ ان دونوں لیڈروں کے درمیان دوسری ملاقات تھی، اس سے پہلے دونوں لیڈروں نے گزشتہ میں نئی دہلی میں ملاقات کی تھی۔
      اس سے پہلے سعودی کمپنیوں کے سربراہان کے ساتھ اپنی بات چیت میں وزیر اعظم نریندر مودی نے ہندوستان میں سعودی سرمایہ کاری کے وافر مواقع پر زور دیا جو ہندوستان کی طرف سے فراہم کئے جارہے ہیں، جہاں سعودی کمپنیاں طبی آلات کی مینوفیکچرنگ اور طبی سیاحت کے امکانات سے فائدہ اٹھا سکتی ہیں۔
      First published: