ہوم » نیوز » عالمی منظر

سعودی عرب اور قطر کے تعلقات میں جمی برف پگھلنے لگی ، یہ تازہ واقعات کررہے ہیں اشارہ

مفاہتمی کانفرنس کے طور پر منعقدہ گلف سربراہی اجلاس میں قطر کے امیر نے ممکنہ طور پر شرکت نہیں کی ۔ تاہم دیگر رہنماؤں نے اسے سعودی عرب اور دوحہ کے تعلقات میں سرد مہری کے خاتمے کی علامات قرار دیا۔

  • UNI
  • Last Updated: Dec 11, 2019 08:03 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
سعودی عرب اور قطر کے تعلقات میں جمی برف پگھلنے لگی ، یہ تازہ واقعات کررہے ہیں اشارہ
فائل فوٹو

مفاہتمی کانفرنس کے طور پر منعقدہ گلف سربراہی اجلاس میں قطر کے امیر نے ممکنہ طور پر شرکت نہیں کی ۔ تاہم دیگر رہنماؤں نے اسے سعودی عرب اور دوحہ کے تعلقات میں سرد مہری کے خاتمے کی علامات قرار دیا۔ میڈیا میں شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق بدلتے ہوئے رویوں کے تحت ریاض میں دوحہ کے وفد کا گرم جوشی سے استقبال کیا گیا اور سعودی شاہ سلمان اور قطری وزیراعظم کے درمیان مسکراہٹ کا تبادلہ بھی ہوا۔ دوسری جانب سعودی سرکاری ٹیلی ویژن پر میزبان کا دوستانہ لہجے میں کہنا تھا کہ قطر کے لوگوں آپ کو آپ کے دوسرے ملک میں خوش آمدید۔


یاد رہے کہ جون 2017 میں سعودی عرب ، متحدہ عرب امارات ، بحرین اور مصر نے قطر سے تمام سفارتی اور آمد و رفت کے تعلقات منقطع کرلئے تھے ، جسے قطر کا بلاکڈ قرار دیا گیا تھا۔ ان چاروں ممالک کی جانب سے قطر پر اخوان المسلمون سمیت اسلامی شدت پسندوں کی حمایت کرنے کا الزام عائد کیا گیا تھا اور سعودی عرب کے حریف ملک ایران کے ساتھ تعلقات منقطع کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا ۔ تاہم قطر کی جانب سے ان الزامات کو مسترد کردیا گیا۔


قطر کے امیر شیخ تمیم بن حماد التہینی نے وزیراعظم عبداللہ بن ناصر بن خلیفہ التہینی کو اپنی جگہ خلیج تعاون کونسل کے سالانہ اجلاس میں شرکت کے لیے بھیجا۔ اپنی تقریر میں شاہ سلمان نے براہِ راست قطر کے تنازع پر کوئی بات نہیں کی ، لیکن ایران کی جانب سے ’جارحانہ حملوں‘ سمیت مختلف دھمکیوں کے حوالے سے خلیجی اتحاد پر زور دیا۔  خلیج تعاون کونسل کے سکریٹری جنرل عبدالطیف الزیانی نے بھی خلیجی اقوام سے متحد اور یکجا رہنے کا مطالبہ کیا اور ہم آہنگی کی ضرورت پر زور دیا۔


اہم بات یہ کہ دوحہ نے سعودی عرب کی سربراہی میں موجود بلاک کی جانب سے الجزیرہ کو بند کرنے ، ایران کے ساتھ تعلقات محدود کرنے اور اس کی سرزمین پر موجود ترک فوجی بیس بند کرنے مطالبات پر عمل کرنے سے انکار کردیا تھا ۔ اس کے باجود مفاہمت کے لیے کی جانے والی امید اس بات کا اشارہ ہے کہ قطر اور اس کے سابق اتحادیوں کے درمیان برف پگھل رہی ہے۔
First published: Dec 11, 2019 08:03 PM IST