உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    روس نے کیا دسNuclearبم چھوڑنے والی میزائل کا ٹسٹ، پوتن نے بتائی خوبیاں، کہی یہ بڑی بات

    Ukraine Russia War: کیا روس اشاروں میں دے رہا ہے نیوکلیئر حملے کی دھمکی!

    Ukraine Russia War: کیا روس اشاروں میں دے رہا ہے نیوکلیئر حملے کی دھمکی!

    روس-یوکرین جنگ نے دنیا بھر میں خوراک اور توانائی کے بحران کو جنم دیا ہے۔ ترقی پذیر ممالک کی حالت بہت خراب ہے۔ ہندوستان نے پہلی بار اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو بتایا ہے کہ توانائی کا بحران سنگین تشویش کا باعث ہے۔

    • Share this:
      ماسکو:  امریکہ اور مغرب کے ساتھ جاری کشیدگی کے درمیان روس نے سرمت بین البراعظمی بیلسٹک میزائل کا کامیاب تجربہ کیا ہے۔ یہ طویل فاصلے تک مار کرنے والا میزائل متعدد ایٹمی وار ہیڈ لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ اس کامیابی پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے روسی صدر ولادی میر پوتن نے کہا ہے کہ یہ میزائل دشمن ممالک کو فکرمند ہونے پر مجبور کر دے گا۔ لیکن امریکہ نے اسے بیلسٹک میزائل کا ایک عام تجربہ قرار دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ کو اس کی کوئی پرواہ نہیں ہے۔

      پوتن نے بتائی خوبیاں، کہا-یہ تو ہے بے جوڑ
      پوتن (Russia President Vladimir Putin) نے کہا ہے کہ یہ میزائل تکنیکی طور پر خصوصیات سے بھرپور ہے۔ یہ تمام میزائل شکن دفاعی نظاموں سے بچتے ہوئے اہداف پر حملہ کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ یہ بیک وقت دس یا اس سے زیادہ ایٹمی بم لے جا سکتا ہے اور ایک ہی وقت میں متعدد اہداف کو تباہ کر سکتا ہے۔ ابھی اس کے مقابلے کا میزائل دنیا میں موجود نہیں ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      اقتصادی ترقی شرح میں ہندوستان کاہوگاامریکہ اورچین پردبدبہ،IMF نے 8.2 فیصد کا لگایا اندازہ

      پوتن اور زیلینسکی سے ملنا چاہتے ہیں اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل
      اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹیرس جنگ کے خاتمے کی کوششوں کے ایک حصے کے طور پر روسی صدر ولادیمیر پوتن اور یوکرائنی صدر ولادیمیر زیلنسکی سے ملاقات کرنا چاہتے ہیں۔ گوٹیرس نے دونوں رہنماؤں کو ایک خط لکھا ہے جس میں ملاقات کی خواہش کا اظہار کیا گیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      پاکستان کے سابق وزیر اعظم Imran Khan کا بدل گیا لہجہ- میں ’نہ اینٹی انڈیا نہ اینٹی امریکہ‘

      دنیا بھر میں گہرایا توانائی کا بحران
      روس-یوکرین جنگ نے دنیا بھر میں خوراک اور توانائی کے بحران کو جنم دیا ہے۔ ترقی پذیر ممالک کی حالت بہت خراب ہے۔ ہندوستان نے پہلی بار اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو بتایا ہے کہ توانائی کا بحران سنگین تشویش کا باعث ہے۔ تعاون پر مبنی کوششوں کے ذریعے اس کی ضروریات کو پورا کیا جانا چاہیے۔ اقوام متحدہ میں ہندوستان کے نائب مستقل نمائندے اور سفیر آر۔ رویندر نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس میں یوکرین میں انسانی حقوق کی صورتحال کا ذکر کرتے ہوئے رویندرا نے کہا کہ جنگ کے بعد غذائی تحفظ کا چیلنج بہت بڑھ گیا ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: