உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Russia-Ukraine Conflict:روس اوریوکرین کےلئےآئندہ 48گھنٹےکافی اہم ، یہاں جانئے 10اہم باتیں

    Youtube Video

    پوتن (Vladimir Putin) نے یوکرین میں فوجی آپریشن (Russian Military Operation in Ukraine) کا اعلان کیا ہے۔ پوتن نے کہا کہ صورتحال ایسی ہے کہ اب جنگ (Russia-Ukraine Conflict) سے گریز نہیں کیا جا سکتا۔

    • Share this:
      یوکرین میں اس وقت ہلچل ہے۔ ملک میں قومی ایمرجنسی نافذ ہے۔ پوری فضائی حدود بند ہیں۔ کئی علاقوں میں دھماکوں اور فائرنگ کی آوازیں بھی سنی گئیں۔ یوکرین کے باغی علاقوں نے روس پر تمام پابندیوں کے درمیان روسی صدر ولادیمیر پوتن سے فوجی آپریشن کا اعلان کیاہے۔ جس کے بعد پوتن (Vladimir Putin) نے یوکرین میں فوجی آپریشن (Russian Military Operation in Ukraine) کا اعلان کیا ہے۔ پوتن نے کہا کہ صورتحال ایسی ہے کہ اب جنگ (Russia-Ukraine Conflict) سے گریز نہیں کیا جا سکتا۔

      یوکرین کے صدر روس سے بڑھتے ہوئے خطرے کے درمیان امن کی التجا کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ  انہوں نے  ولادیمیر پوتن سے بات  کرنے کی کوشش کی ہے لیکن  انہیں کوئی جواب نہیں دیا۔ کشیدگی کے درمیان اگلے 48 گھنٹے انتہائی اہم سمجھے جا رہے ہیں۔

      آئیے جانتے ہیں روس یوکرین کشیدگی کی اب تک کی 10 بڑی اپ ڈیٹس:-

      1
      ولادیمیر پوتن کی جانب سے کہا گیا ہے کہ روس ایک خصوصی فوجی آپریشن شروع کر رہا ہے۔ اس کا مقصد یوکرین کو فوج سے آزاد کرنا ہے۔ یوکرین کی فوج کو پوتن نے ہتھیار ڈالنے اور گھر جانے کو کہا ہے۔

      2
      ڈونیٹسک میں جمعرات کی صبح ہونے والے پانچ دھماکوں کے بعد جنگ کے خدشات مزید شدت اختیار کر گئے ہیں۔ ہم آپ کو بتاتے ہیں کہ ڈونیٹسک ان دو علاقوں میں سے ایک ہے جنہیں روس نے ایک نئے ملک کے طور پر تسلیم کیا ہے۔

      3
      ادھر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں یوکرین پر ہنگامی اجلاس شروع ہو گیا ہے۔ اس ہفتے میں یہ دوسری ملاقات ہے۔ دوسری جانب روس کے خلاف حکمت عملی طے کرنے کے لیے یورپی یونین کا جمعرات کو ایک انتہائی اہم اجلاس ہونے جا رہا ہے۔

      4
      روس اور یوکرین مشرقی یورپ میں جنگ کے دہانے پر پہنچ گئے ہیں۔ امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون کے مطابق یوکرین کی سرحد پر تعینات 1.90 لاکھ روسی فوجیوں میں سے 80 فیصد یا تقریباً 1.50 لاکھ فوجی حملے کے لیے پوری طرح تیار ہیں۔ یوکرین پر اگلے 48 گھنٹوں میں کسی بھی وقت حملہ کیا جا سکتا ہے

      5
      نیویارک ٹائمز کے مطابق روسی افواج نے مکمل تیاریاں کر رکھی ہیں، اعلیٰ قیادت کی جانب سے احکامات ملتے ہی حملہ شروع کر دیا جائے گا۔ روسی فوجی یوکرین کی سرحد سے 5 سے 50 کلومیٹر کے فاصلے پر تعینات ہیں۔

      6
      یوکرین کی پارلیمنٹ نے روسی حملے کے بارے میں امریکی انتباہ کے بعد قومی ایمرجنسی کا اعلان کردیا ہے۔ ایمرجنسی کے اعلان کے ساتھ ہی یوکرین نے اپنے 30 لاکھ افراد کو فوری طور پر روس چھوڑنے کو کہا ہے۔

      7
      روس نے بدھ کے روز یوکرین کے بینکوں اور دفاع، خارجہ، داخلی سلامتی جیسی اہم ویب سائٹس پر سائبر حملہ کیا۔ یوکرین کے نائب وزیر اعظم فیدوروف کا کہنا ہے کہ وہ روس کو منہ توڑ جواب دیں گے۔

      8
      روس نے بدھ کو یوکرین کی سرحد پر 100 نئی فوجی گاڑیاں تعینات کیں۔ اس کے ساتھ فوج کے علاج کے لیے ایک عارضی اسپتال بھی بنایا گیا ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق روس نے یوکرین کی سرحد سے صرف 20 کلومیٹر کے فاصلے پر 550 سے زائد خیمے لگا رکھے ہیں۔

      9
      روس نے بھی بیلاروس میں مشقوں کے لیے اپنی فوج بھیجی ہے۔ اس سے قبل روس نے یوکرین کو گھیرے میں لینے کے لیے بحیرہ اسود اور بحیرہ ازوف میں اپنی بحریہ بھیجی تھی۔

      10
      یوکرین کی سرحد پر بگڑتے ہوئے حالات کی وجہ سے کئی ایئر لائنز نے اس علاقے کو ڈو ناٹ فلائی زون کے طور پر بھی قرار دے دیا ہے۔ ایسا کرنے والوں کی فہرست میں یورپی کیریئرز بھی شامل ہیں۔ کمرشل ایوی ایشن نے واضح کیا ہے کہ یوکرین اور روس کی سرحد اب ایک ممنوع جگہ ہے۔ ساتھ ہی، یوکرین کے کئی ہوائی اڈوں بشمول کیو نے اب تمام پروازیں معطل کر دی ہیں۔
      Published by:Mirzaghani Baig
      First published: