உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Ukraine میں کیا ہورہا ہے، کون کر رہا ہے روس کی حمایت؟ جانیے اب تک کے اہم اپ ڈیٹس

    Russia Ukraine Conflict: کیا ہورہا ہے ماسکو میں؟ جانیے تازہ ترین اپ ڈیٹس۔

    Russia Ukraine Conflict: کیا ہورہا ہے ماسکو میں؟ جانیے تازہ ترین اپ ڈیٹس۔

    Russia-Ukraine Crisis: روس نے ’ڈیفنڈر آف دی فادر لینڈ ڈے‘ منایا۔ فوجی ماسکو کے ریڈ اسکوائر کے ارد گرد نامعلوم سپاہیوں کے مزار کو سجا رہے ہیں، جبکہ پوتن ماضی کی جنگوں میں مارے گئے فوجیوں کو یاد کر رہے ہیں۔ پیوٹن نے پیر کو ایک جارحانہ تقریر سے روسی قوم پرستی کو ایک نئی جہت دینے کی کوشش کی۔

    • Share this:
      برسلز:عالمی قائدین اس بات کا انتظار کر رہے ہیں کہ آیا روسی صدر ولادیمیر پوتن اپنی فوجیں یوکرین کے اندر بھیجیں گے۔ روسی قانون سازوں نے پوتن کو ملک سے باہر فوجی طاقت استعمال کرنے کا اختیار دیا ہے اور یوکرین تین اطراف سے ڈیڑھ لاکھ سے زیادہ فوجیوں سے گھرا ہوا ہے۔ ایسے میں توپوں کی گڑگڑاہٹ زیادہ دور نہیں ہے۔

      یوکرین کے عہدیداروں نے بڑھتی تشویش کا دیا اشارہ
      امریکہ اور یورپ میں اس کے اتحادیوں نے الزام لگایا ہے کہ روس نے پہلے ہی یوکرین کے علیحدگی پسند علاقوں میں فوجیں تعینات کر کے خطرے کی لکیر عبور کر لی ہے۔ یوکرائنی حکام نے امن برقرار رکھنے کی ہفتوں کی کوششوں کے بعد بڑھتی ہوئی تشویش کا اشارہ دیا ہے۔

      پوتن نے ماسکو میں شہید فوجیوں کو کیا یاد
      روس نے ’ڈیفنڈر آف دی فادر لینڈ ڈے‘ منایا۔ فوجی ماسکو کے ریڈ اسکوائر کے ارد گرد نامعلوم سپاہیوں کے مزار کو سجا رہے ہیں، جبکہ پوتن ماضی کی جنگوں میں مارے گئے فوجیوں کو یاد کر رہے ہیں۔ پیوٹن نے پیر کو ایک جارحانہ تقریر سے روسی قوم پرستی کو ایک نئی جہت دینے کی کوشش کی۔

      انہوں نے بدھ کی یادگاری تقریب کے دوران کہا کہ روس اپنی فوج اور بحریہ کو مضبوط اور جدید بنانا جاری رکھے گا۔ انہوں نے کہا کہ’روس اپنی فوج کا اثر و رسوخ بڑھانے کی کوشش کر رہا ہے، اس لیے وہ جدید ترین آلات سے لیس ہے۔‘

      مشرقی یوکرین میں علیحدگی پسندوں کے زیر قبضہ علاقوں میں سے ایک ڈونیٹسک میں باغی حکومت کے سربراہ ڈینس پوشلین نے ایک بیان جاری کیا جس میں روسی تعطیل اور علاقے کی آزادی کو تسلیم کرنے کے پوٹن کے فیصلے کا جشن منایا گیا۔

      یوکرین میں کیا ہورہا ہے؟
      یوکرین کی حکومت نے اپنے شہریوں کو روس کا سفر نہ کرنے کا مشورہ دیا ہے اور ایڈوائزری میں کہا ہے کہ جو لوگ اس ملک میں ہیں وہ فوری طور پر وہاں سے نکل جائیں۔ یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے روسی جارحیت کے بڑھتے ہوئے خطرے کے درمیان ملک کے کچھ فوجی اہلکاروں کو ڈیوٹی کے لیے ریزرو بلایا ہے۔ زیلنسکی نے کہا،’ہمیں یوکرین کی فوج اور دیگر فوجی فارمیشنز میں فوری طور پر اضافی اہلکاروں کو شامل کرنے کی ضرورت ہے۔‘

      یوکرین میں ایمرجنسی کا اعلان
      یوکرین کی قومی سلامتی اور دفاعی کونسل کے سربراہ اولیکسی ڈینیلوف نے ملک بھر میں ہنگامی حالت نافذ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ یہ پارلیمنٹ کی منظوری سے مشروط ہے۔ ڈینیلوف نے کہا کہ اس میں عوامی سہولیات کی اضافی حفاظت، ٹریفک پر پابندی اور دستاویزات کی تصدیق جیسے اقدامات شامل ہو سکتے ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: