اپنا ضلع منتخب کریں۔

    Russia-Ukraine War: یوکرین میں موجود ہندوستانی سفارت خانہ کیف سے باہر پولینڈ منتقل، یہ ہے وجہ

    یہ اعلان وزیر اعظم نریندر مودی کی روس-یوکرین جنگ کے درمیان ہندوستان کی سیکورٹی تیاریوں کے بارے میں ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ کی صدارت کے بعد سامنے آیا ہے۔ ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر اعظم کو یوکرین میں ہونے والی تازہ ترین پیشرفت سے آگاہ کیا گیا ہے۔

    یہ اعلان وزیر اعظم نریندر مودی کی روس-یوکرین جنگ کے درمیان ہندوستان کی سیکورٹی تیاریوں کے بارے میں ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ کی صدارت کے بعد سامنے آیا ہے۔ ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر اعظم کو یوکرین میں ہونے والی تازہ ترین پیشرفت سے آگاہ کیا گیا ہے۔

    یہ اعلان وزیر اعظم نریندر مودی کی روس-یوکرین جنگ کے درمیان ہندوستان کی سیکورٹی تیاریوں کے بارے میں ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ کی صدارت کے بعد سامنے آیا ہے۔ ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر اعظم کو یوکرین میں ہونے والی تازہ ترین پیشرفت سے آگاہ کیا گیا ہے۔

    • Share this:
      وزارت خارجہ (Ministry of External Affairs) نے اتوار کو اعلان کیا کہ روسی جارحیت کے درمیان ملک کے مغربی حصے میں سیکورٹی کی بگڑتی ہوئی صورتحال کی وجہ سے یوکرین کے کیف میں واقع ہندوستانی سفارت خانے کو عارضی طور پر پولینڈ میں منتقل کیا جائے گا۔ وزارت خارجہ نے کہا کہ یوکرین میں تیزی سے بگڑتی ہوئی سیکورٹی کی صورتحال بشمول ملک کے مغربی حصوں میں حملوں کے پیش نظر یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ یوکرین میں ہندوستانی سفارت خانے کو عارضی طور پر پولینڈ میں منتقل کیا جائے گا۔ اس دوران مزید پیش رفت کی روشنی میں صورتحال کا دوبارہ جائزہ لیا جائے گا۔

      یہ اعلان وزیر اعظم نریندر مودی کی روس-یوکرین جنگ کے درمیان ہندوستان کی سیکورٹی تیاریوں کے بارے میں ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ کی صدارت کے بعد سامنے آیا ہے۔ ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر اعظم کو یوکرین میں ہونے والی تازہ ترین پیشرفت سے آگاہ کیا گیا، جس میں ہندوستانی شہریوں کے ساتھ ساتھ پڑوسی ممالک کے کچھ شہریوں کو یوکرین سے نکالنے کے لیے آپریشن گنگا (Operation Ganga) کی تفصیلات بھی شامل ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں: FIFA World CUP 2022: قطری اسٹیڈیم میں کولنگ سسٹمزکاہوگاخاص اہتمام، کیاہےخاص بات

      مودی نے ہدایت دی کہ نوین شیکھرپا کی لاش کو واپس لانے کے لیے ہر ممکن کوشش کی جانی چاہیے، جن کا کھرکیو میں انتقال ہوا تھا۔ یوکرین میں زیر تعلیم ہندوستانی طالب علم شیکھرپا ملک پر روسی حملے کے بعد گولہ باری میں ہلاک ہو گیا تھا۔ ہندوستان، جنگ زدہ ملک سے اپنے زیادہ تر شہریوں کو نکالنے میں کامیاب رہا ہے، جن میں سے ایک بڑا حصہ طلبا کا ہے۔ وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ، وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن اور وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے میٹنگ میں شرکت کی۔ این ایس اے اجیت ڈوول اور دیگر سینئر افسران نے بھی میٹنگ میں شرکت کی۔

      دریں اثنا روس کی حمایت یافتہ علیحدگی پسند فورسز اور یوکرینی فوج کے درمیان تشدد اتوار کو اس وقت جاری رہا جب پولینڈ کی سرحد کے قریب یوکرین کی ایک بڑی فوجی تنصیب پر روسی میزائل حملے میں نو افراد ہلاک اور 57 زخمی ہو گئے۔ علاقائی گورنر میکسم کوزیٹسکی نے کہا کہ روسی طیاروں نے یاوریو انٹرنیشنل سینٹر فار پیس کیپنگ اینڈ سیکیورٹی پر لگ بھگ 30 راکٹ فائر کیے، انہوں نے مزید کہا کہ کچھ کو مارنے سے پہلے ہی روک لیا گیا۔

      مزید پڑھیں: اداکارہ Malaika Arora نے پہنی اتنی مہنگی ڈریس، صرف ان کی گولڈن سینڈل کی قیمت ہی جان کر اڑ جائیں گے ہوش!

      رائٹرز کی ایک رپورٹ کے مطابق پولینڈ کی سرحد سے 25 کلومیٹر (15 میل) سے بھی کم فاصلے پر واقع 360 مربع کلومیٹر (140 مربع میل) سہولت یوکرین کی سب سے بڑی اور ملک کے مغربی حصے میں سب سے بڑی ہے۔ مغربی یوکرین کے ایک اور شہر کے میئر ایوانو فرینکیوسک نے یہ کہتے ہوئے خطرے کی گھنٹی بجا دی کہ روسی فوجی اس کے ہوائی اڈے پر حملے جاری رکھے ہوئے ہیں، جس میں ہلاکتوں کی کوئی ابتدائی اطلاع نہیں ہے۔

      برطانیہ کی وزارت دفاع نے کہا کہ روسی فوجی یوکرینی افواج کو گھیرنے کی کوشش کر رہے ہیں جب وہ شمال میں خارکیف اور جنوب میں ماریوپول سے پیش قدمی کر رہے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: