உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Russia Ukraine War:روس نے ایٹمی پلانٹ کے پاس داغے راکٹ، بڑا خطرہ، یوکرین میں یوم آزادی ریلی پر پابندی

    یوکرین جنگ میں بڑھا ایٹمی حملے کا خطرہ۔ روس نے نیوکلیئر پلانٹ پر داغے راکٹ۔ (فائل فوٹو)

    یوکرین جنگ میں بڑھا ایٹمی حملے کا خطرہ۔ روس نے نیوکلیئر پلانٹ پر داغے راکٹ۔ (فائل فوٹو)

    Russia Ukraine War: معلومات کے مطابق پلانٹ پر حملوں کی وجہ سے اس کا کچھ حصہ تباہ ہو چکا ہے۔ اس پلانٹ پر فروری میں یوکرین پر حملے کے فوراً بعد روسی افواج نے قبضہ کر لیا تھا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Lucknow | Hyderabad | Amritsar | Haryana
    • Share this:
      Russia Ukraine War: روس نے پیر کی صبح جنوبی یوکرین میں یورپ کے سب سے بڑے جوہری پاور پلانٹ کے مغربی شہروں پر راکٹ داغے۔ جبکہ دارالحکومت کیف نے روسی حملوں کے خوف سے اس ہفتے سوویت حکمرانی سے آزادی کی تقریبات کے موقع پر ریلیوں پر پابندی لگا دی ہے۔

      روس کے زیر قبضہ دریائے دنیپرو کے جنوبی کنارے پر زاپوریزیا جوہری پلانٹ کمپلیکس کے قریب توپ خانے اور راکٹ حملوں نے خطے میں جوہری تباہی کا خطرہ بڑھا دیا ہے۔ اس کے پیش نظر آس پاس کے علاقے کو غیر فوجی بنانے کی اپیل کی گئی ہے۔ معلومات کے مطابق پلانٹ پر حملوں کی وجہ سے اس کا کچھ حصہ تباہ ہو چکا ہے۔

      اس پلانٹ پر فروری میں یوکرین پر حملے کے فوراً بعد روسی افواج نے قبضہ کر لیا تھا۔ لیکن یہ اب بھی بنیادی طور پر یوکرائنی تکنیکی ماہرین کے ذریعہ چلایا جارہا ہے۔ علاقائی گورنر ویلنٹن ریزنیچینکو نے پیر کے روز ٹیلی گرام پر لکھا کہ راتوں رات روسی راکٹوں نے روس کے زیر قبضہ اینرہودر سے نیپرو کے پار، کریوی ریہہ اور سینیلنکوسکی پر راکٹ برسائے۔ یہیں جوہری پلانٹ ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:

      UAE Iran relations: ایران میں یواےای سفیرکی واپسی، 6 سال تک تعلقات منقطع لیکن اچانک بحالی؟

      یہ بھی پڑھیں:
      India - China: ’چین سرحدی معاہدوں کوکررہاہےنظرانداز، ہرکوئی اپنےپڑوسی کےساتھ ملناچاہتاہے‘

      جرمنی میں گیس سپلائی گھٹائے گا روس
      روس نے یورپ کو قدرتی گیس کی سپلائی میں کمی کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔ روس نے اب یہاں تین دن کے لیے مزید کٹوتیوں کا اعلان کیا ہے۔ جبکہ اس کمی کی وجہ سے جرمنی میں حالات پہلے ہی بدترین ہیں اور لوگ گیس کی شدید قلت اور بڑھتی ہوئی قیمتوں سے پریشان ہیں۔ جرمن وزیر خزانہ رابرٹ ہیبیک نے پیر کے روز کہا کہ سردیوں میں گیس کی عدم فراہمی کی وجہ سے لوگوں کو مشکل وقت کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ انہوں نے کھپت کو کنٹرول میں رکھنے کی اپیل کی ہے۔ بتادیں کہ پورا یورپ بجلی اور بجلی کی صنعتوں کے لیے ماسکو کی گیس پر منحصر ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: