உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Russia-Ukraine War: روسی حملے میں تباہ ہوا دنیا کا سب سے بڑا ہوائی جہاز، دلچسپ ہے اس کے بننے کی کہانی

    اس نے اپنی پہلی پرواز 1988 میں بھری کی۔ سوویت یونین کی تحلیل کے بعد اس کو طویل عرصے تک نہیں اڑایا گیا۔

    اس نے اپنی پہلی پرواز 1988 میں بھری کی۔ سوویت یونین کی تحلیل کے بعد اس کو طویل عرصے تک نہیں اڑایا گیا۔

    World largest plane destroyed in Russian attack: دنیا کا سب سے بڑا ہوائی جہاز اینٹونوو 225 (Ukraine’s Antonov-225) روس کے حملے میں تباہ ہوگیا ہے ۔ یوکرین کی دفاعی کمپنی یوکروبورونوپرو (Ukroboronprom) نے یہ جانکاری دی ہے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : دنیا کا سب سے بڑا ہوائی جہاز اینٹونوو 225 (Ukraine’s Antonov-225) روس کے حملے میں تباہ ہوگیا ہے ۔ یوکرین کی دفاعی کمپنی یوکروبورونوپرو  (Ukroboronprom) نے یہ جانکاری دی ہے ۔ اس کو مریا کے نام سے جانا جاتا تھا ، جو ایک کارگو طیارہ تھا ۔ جانکاری کے مطابق کیف کے باہر چوتھے دن کی لڑائی میں روسی فوج نے اس طیارہ کو نیست و نابود کردیا ۔ یوکرین کی جانب سے ٹویٹ کرکے بتایا گیا ہے کہ روسی حملہ آوروں نے کیف کے پاس گوسٹومیل میں اینٹونوو ہوائی اڈے پر دنیا کے سب سے بڑے طیارے کو تباہ کردیا ۔

      یوکرین کے وزیر خارجہ دیمیترو کلیبا نے ٹویٹر پر جانکاری دیتے ہوئے لکھا : یہ دنیا کا سب سے بڑا طیارہ اے این 225 'مریا' ( یوکرینی میں ڈریم) تھا ۔ شاید روس نے ہماری مریا کو تباہ کردیا ہے ، لیکن وہ کبھی بھی ایک مضبوط ، آزاد اور جمہوری یوروپی اسٹیٹ کے ہمارے خواب کو تباہ نہیں کرپائیں گے ۔ ہم اپنے مقصد میں کامیاب ہوں گے ۔

      یہ بھی پڑھیں : روس کے سامنے بے بس ہوا Ukraine، خاتون ممبر پارلیمنٹ اور بچوں سمیت عام شہریوں نے بھی اٹھائے ہتھیار، دیکھئے تصاویر

      یوکرین کے آفیشیل ٹویٹر ہینڈل سے بتایا گیا ہے کہ روسی حملہ آوروں نے دنیا کے سب سے بڑے طیارے مریا کو تباہ کردیا ہے ، لیکن ہم اس کو پھر بنائیں گے ۔ ہم آزاد ، مضبوط اور جمہوری یوروپ کے خواب کو شرمندہ تعبیر کریں گے ۔ یوکرین نے اس طیارہ کی ایک تصویر بھی پوسٹ کی ہے اور اس کے کیپشن میں لکھا ہے بیشک وہ اس طیارہ کو جلا سکتا ہے ، لیکن مریا کبھی تباہ نہیں ہوا ۔

      یہ بھی پڑھیں : روس کے خلاف یوکرین نے کھٹکھٹایا ICJ کا دروازہ ، حملے کو بتایا 'قتل عام'

      اے این 225 مریا چھ ٹربوفین انجنوں کے ذریعہ چلنے والا طیارہ ہے ۔ یہ 640 ٹن کے زیادہ سے زیادہ ٹیک آف بوجھ کے ساتھ اڑان بھر سکتا ہے ۔ یہ اب تک کا سب سے طویل اور سب سے بھاری ہوائی جہاز ہے ۔ اس میں کسی بھی طیارہ کے مقابلہ میں سب سے بڑا پنکھ بھی لگا ہے ۔

      یوکرین کی دفاعی کمپنی Ukroboronprom نے اندازہ لگایا ہے کہ اس کے دوبارہ بنانے میں تقریبا تین ارب ڈالر کا خرچ آئے گا ۔ اس کو بنانے میں بھی پانچ سال لگیں گے ۔ یہ طیارہ پوری دنیا میں انوکھا تھا ۔ 84 میٹر لبما یہ طیارہ 350 ٹن سامان کو 850 کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے اپنے مقام تک پہنچا سکتا تھا ۔ اس کا نام مریا رکھا گیا تھا ، جس کو یوکرین کی زبان میں خواب کہتے ہیں ۔ حالانکہ یہ سوویت دور میں ایروناٹیکل پروگرام کے تحت بنایا گیا تھا۔

      اس نے اپنی پہلی پرواز 1988 میں بھری کی۔ سوویت یونین کی تحلیل کے بعد اس کو طویل عرصے تک نہیں اڑایا گیا۔ 2001 میں اس کا ٹیسٹ فلائٹ ہوا ، جو کیف سے صرف 20 کلومیٹر تک گیا ۔ اس کو فی الحال یوکرین کی اینٹونوو ایئر لائن چلا رہی تھی۔ کووڈ-19 کے دوران اس طیارے کی کافی مانگ تھی ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: