உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Salman Rushdie: چاقو کے وار سے زخمی سلمان رشدی کی بچ گئی جان لیکن جاسکتی ہے ایک آنکھ، حملہ آور کی ہوئی شناخت

    ملعون سلمان رشدی کی ہوئی سرجری۔ جاسکتی ہے ایک آنکھ۔

    ملعون سلمان رشدی کی ہوئی سرجری۔ جاسکتی ہے ایک آنکھ۔

    Salman Rushdie: رشدی کا انٹرویو کرنے والا شخص بھی حملے میں زخمی ہوا۔آن لائن پوسٹ کی گئی ایک ویڈیو میں واقعہ کے فوراً بعد وہاں موجود لوگ اسٹیج پر بھاگتے ہوئے نظر آ رہے ہیں۔

    • Share this:
      Salman Rushdie: پیغمبر اور اسلام کے خلاف بیان بازی کرنے والے ملعون سلمان رشدی کی سرجری ہوئی ہے۔ روئیٹرس کے مطابق، سلمان رشدی کی سرجری ہوئی ہے، اس کے ہاتھ اور جگر حملے میں بری طرح زخمی ہوئے ہیں، وہیں اندیشہ ہے کہ سلمان رشدی کی ایک آنکھ ضائع ہوسکتی ہے۔ سلمان رشدی کے ایجنٹ نے بتایا تھا کہ وہ ابھی وینٹی لیٹر پر ہے۔ بتادیں کہ بکر انعام یافتہ اور شیطانی آیات کے مصنف سلمان رشدی پر نیویارک میں حملہ ہوا تھا۔ سلمان رشدی کو گزشتہ کئی سالوں سے جان سے مارنے کی دھمکیوں کا سامنا تھا۔


      یہ حملہ اس وقت ہوا جب وہ نیویارک کے چوٹاکوا انسٹی ٹیوٹ میں ایک تقریب سے خطاب کرنے جا رہے تھے۔ رشدی کا انٹرویو کرنے والا شخص بھی حملے میں زخمی ہوا۔آن لائن پوسٹ کی گئی ایک ویڈیو میں واقعہ کے فوراً بعد وہاں موجود لوگ اسٹیج پر بھاگتے ہوئے نظر آ رہے ہیں۔ اس کے بعد موقع پر موجود لوگوں نے حملہ آور کو موقع پر ہی پکڑ لیا۔


      نیویارک کی گورنر کیتھی ہوچول کے مطابق سلمان رشدی ابھی تک زندہ ہے۔ ایک پریس بریفنگ میں انہوں نے بتایا کہ رشدی کو ہسپتال لے جایا گیا ہے اور وہاں رشدی کی دیکھ بھال کی جا رہی ہے۔ساتھ ہی نیویارک اسٹیٹ پولیس نے کہا ہے کہ حملے کے بعد رشدی کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے مقامی اسپتال لے جایا گیا۔

      کون ہے حملہ آور؟
      وہیں پولیس نے بتایا ہے کہ سلمان رشدی کی گردن پر چاقو سے وار کیا گیا ہے۔ اور حملہ آور اب پولیس کی حراست میں ہے۔پولیس کے مطابق حملہ آور کا نام ہادی متار ہے اور اس کی عمر 24 سال ہے۔ حملہ آور فیئر ویو، نیو جرسی کا رہائشی ہے۔

      پولیس کا کہنا ہے کہ حملہ آور کے محرکات کا ابھی تک پتہ نہیں چل سکا ہے اور حملے کی وجہ جاننے کے لیے ایف بی آئی سے بھی مدد لی جا رہی ہے۔ ملزم ہادی متار کے پاس پروگرام کا پاس تھا اور وہ اکیلا آیا تھا۔ پولیس نے ابھی تک متار کے خلاف الزامات طے نہیں کیے ہیں۔ مشتبہ ہادی متار نے اسٹیج پر چھلانگ لگائی اور سلمان رشدی کو کم از کم ایک بار گردن اور پیٹ میں چاقو گھونپا ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: