ہوم » نیوز » عالمی منظر

حوثیوں کی جانب سے بارود سے بھرے ڈرون حملے کو روک دیا گیا: سعودی اتحادی افواج کے کمانڈ سینٹر

بریگیڈ جنرل ترکی المالکی (Brig. Gen. Turki Al-Maliki) نے ہفتے کے روز حوثیوں کی تحریک کی طرف سے جاری کی جانے والی ’من گھڑت‘ ویڈیو فوٹیج کو مسترد کرتے ہوئے ان کے جنگجوؤں کے ذریعے سعودی عرب کے سرحدی علاقے میں گھس جانے کے دعوے کو مسترد کردیا ہے۔

  • Share this:
حوثیوں کی جانب سے بارود سے بھرے ڈرون حملے کو روک دیا گیا: سعودی اتحادی افواج کے کمانڈ سینٹر
اتحاد نے علاقے کی سلامتی اور استحکام کو برقرار رکھنے کے لئے اٹھائے جانے والے اقدامات کی اپنی مکمل حمایت کی تصدیق کی ہے۔

ریاض: سعودی اتحادی افواج کے کمانڈ سینٹرنے اتوار کے روز بتایا کہ اتحادی فوج کے فضائی دفاع نے یمن کی حوثی ملیشیا (Houthi militia) کے ذریعہ سعودی عرب کی طرف ہفتہ کے روز دیر سے شروع ہونے والے بارود سے بھری ڈرون کو روک دیاگیاہے۔سرکاری ٹی وی الاخباریا کے ذریعہ کیے گئے ایک بیان میں اتحاد نے کہا کہ اسلحے سے حامل یو اے وی کا مقصد یمن کی سرحد سے متصل جنوبی سعودی شہر خمیس مشیت (Khamis Mushait) کی طرف تھا۔


یہ سعودی عرب کے خلاف ایران کی حمایت یافتہ ملیشیا کے میزائل اور ڈرون حملوں کے سلسلے میں تازہ ترین حملہ ہے۔ جب سے سن 2015 میں اقوام متحدہ (United Nations) کی تسلیم شدہ حکومت کی بحالی کے لئے مملکت نے اتحاد کی سربراہی کی تھی۔اقوام متحدہ کے ذریعہ امن مذاکرات کی حمایت کے مطالبے کو نظرانداز کرتے ہوئے ملیشیا نے شمال وسطی یمن کے شہر ماریب (Marib) میں اپنی کارروائی ختم کرنے سے بھی انکار کردیا ہے۔


سعودی عرب کے خلاف ایران کی حمایت یافتہ ملیشیا کے میزائل اور ڈرون حملوں کے سلسلے میں تازہ ترین حملہ ہے۔
سعودی عرب کے خلاف ایران کی حمایت یافتہ ملیشیا کے میزائل اور ڈرون حملوں کے سلسلے میں تازہ ترین حملہ ہے۔


بریگیڈ جنرل ترکی المالکی (Brig. Gen. Turki Al-Maliki) نے ہفتے کے روز حوثیوں کی تحریک کی طرف سے جاری کی جانے والی ’من گھڑت‘ ویڈیو فوٹیج کو مسترد کرتے ہوئے ان کے جنگجوؤں کے ذریعے سعودی عرب کے سرحدی علاقے میں گھس جانے کے دعوے کو مسترد کردیاہے۔عرب پارلیمنٹ نے ہفتے کے روز ایک بیان میں ان حملوں کی مذمت کرتے ہوئے مزید کہا کہ بار بار دشمنی سے نہ صرف مملکت کو خطرہ لاحق ہے بلکہ علاقائی سلامتی اور استحکام کو بھی خطرہ لاحق ہے۔

پارلیمنٹ نے کہا کہ یمن کی بندرگاہ پر ناکام کوششوں سے عالمی تجارت کو ایک خاص خطرہ لاحق ہے۔ اتحاد نے علاقے کی سلامتی اور استحکام کو برقرار رکھنے کے لئے اٹھائے جانے والے اقدامات کی اپنی مکمل حمایت کی تصدیق کی ہے۔شہریوں کو نشانہ بنانے کی مستقل کوششوں اور خطے پر بار بار حملوں کو عالمی برادری کے لئے صریح چیلنج کے طور پر دیکھا گیا ، کیونکہ پارلیمنٹ نے ملیشیا گروپ کے خلاف بین الاقوامی کارروائی کی ضرورت پر زور دیا۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: May 30, 2021 11:19 PM IST