உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سعودی فوجی اتحاد نےاقوام متحدہ کی بلیک لسٹ کو مسترد کیا

    ریاض ۔ جنگ کسی مسئلہ کا حل نہیں ہوسکتی ۔اس سے جہاں ایک طرف معاملہ مزید الجھ جاتا ہے وہیں معصوم لوگوں کی جانیں بھی ضائع ہوتی ہیں ۔

    ریاض ۔ جنگ کسی مسئلہ کا حل نہیں ہوسکتی ۔اس سے جہاں ایک طرف معاملہ مزید الجھ جاتا ہے وہیں معصوم لوگوں کی جانیں بھی ضائع ہوتی ہیں ۔

    ریاض ۔ جنگ کسی مسئلہ کا حل نہیں ہوسکتی ۔اس سے جہاں ایک طرف معاملہ مزید الجھ جاتا ہے وہیں معصوم لوگوں کی جانیں بھی ضائع ہوتی ہیں ۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      ریاض ۔ جنگ کسی مسئلہ کا حل نہیں ہوسکتی ۔اس سے جہاں ایک طرف معاملہ مزید الجھ جاتا ہے وہیں معصوم لوگوں کی جانیں بھی ضائع ہوتی ہیں ۔ یہی بات یمن کی جنگ پر بھی صادق آتی ہے،جہاں فریقین تباہی کے لئے ایک دوسرے کو مورد الزام ٹھہرا رہے ہیں۔ یمن میں ایرانی حمایت یافتہ حوثی باغیوں کے خلاف لڑنے والے سعودی فوجی اتحاد نے اقوام متحدہ کی اس رپورٹ کو مسترد کر دیا ہے، جس میں بچوں کی ہلاکت کی وجہ سے اس فوجی اتحاد کو بلیک لسٹ میں شامل کر دیا گیا ہے۔ اس فوجی اتحاد کے ترجمان بریگیڈیئر جنرل احمد عسیری نے سعودی پریس ایجنسی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ، ’’ رپورٹ غیرمتوازن ہے، اس میں شامل کیے گئے اعداد و شمار بھی ناقابل اعتبار ہیں اور یہ یمنی عوام کی نمائندگی بھی نہیں کرتے۔‘‘


      فوجی ترجمان کا کہنا تھا کہ ان غلط اعداد و شمار کا مقصد عوام کوغلط سمت میں لے جانا ہے۔ حاصل ہونے والی زیادہ تر معلومات کے ذرائع وہ لوگ ہیں، جن کے تعلقات حوثی باغیوں کے ساتھ ہیں یا یہ لوگ سابق یمنی صدر علی عبداللہ صالح کے قریب ہیں۔ گزشتہ جمعرات کو اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل بان کی مون نے ایک نئی رپورٹ جاری کی تھی، جس کے مطابق سن 2015 میں یمن میں 785 بچے ہلاک ہوئے جبکہ زخمی ہونے والے بچوں کی تعداد ساڑھے گیارہ سو سے بھی زائد ہے۔ اس رپورٹ میں ساٹھ فیصد ہلاکتوں کا ذمہ دار سعودی فوجی اتحاد کو ٹھہرایا گیا تھا۔ اس رپورٹ میں سعودی فوجی اتحاد اور حوثی باغی دونوں ہی کو بلیک لسٹ کر دیا گیا تھا۔ رپورٹ کے مطابق فریقین ’’بڑے پیمانے پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں کرنے کے مرتکب ہوئے ہیں جبکہ اسکولوں اوراسپتالوں پر بھی بمباری کی گئی ہے۔‘‘


      سعودی عرب نے حوثی باغیوں کے خلاف فوجی کارروائیوں کا آغاز گزشتہ برس مارچ میں کیا تھا۔ اس دو طرفہ لڑائی میں اب تک 6400 کے قریب افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ اس تنازعے کی وجہ سے بے گھر ہونے والے افراد کی تعداد تقریبا چوبیس لاکھ بتائی جاتی ہے جبکہ عالمی برداری کی کوشش ہے کہ یمن کے تنازعہ کا پر امن حل تلاش کر لیا جائے۔ سعودی فوجی اتحاد کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ان کی فورسز یمن میں مقامی لوگوں کی حفاظت کے لے گئی ہیں تاکہ یمنیوں کو حوثی باغیوں کے حملوں سے محفوظ بنایا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ یمن کے بچوں کے لیے سعودی عرب نے اقوام متحدہ کے ادارہ برائے اطفال کو تین کروڑ ڈالر کی مدد فراہم کی ہے۔

      First published: