உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Saudi Arab: بزرگوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے سعودی عرب میں قانون ہوا منظور، کیا ہے خاص؟

    سعودی وزارت برائے انسانی وسائل اور سماجی ترقی نے  بزرگوں سے متعلق اس قانون کو واضح کیا ہے۔

    سعودی وزارت برائے انسانی وسائل اور سماجی ترقی نے بزرگوں سے متعلق اس قانون کو واضح کیا ہے۔

    سعودی ہیومن رائٹس کمیشن کے بورڈ ممبر دوحہ الابراہیم بتایا کہ سعودی عرب نے اپنے شہریوں کو باوقار زندگی فراہم کرنے کے لیے ہر ممکن کوشش کی ہے اور معاشرے کے تمام افراد کے بشمول معمر افراد کے لیے ضروری دیکھ بھال پر زور دیا ہے۔

    • Share this:
      سعودی کابینہ نے مملکت سعودی عرب میں بزرگ شہریوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے ایک قانون کی منظوری دے دی ہے۔ اپریل میں سعودی شوریٰ کونسل (Saudi Shoura Council) کے اراکین نے 21 دفعات پر مشتمل بل کا مسودہ منظور کیا جس کا مقصد اس مسئلے پر بیداری پیدا کرنا، فلاح و بہبود کو فروغ دینا اور ملک کی پرانی نسل کے لیے مناسب کمیونٹی کیئر قائم کرنا ہے۔

      وزرا کے ذریعہ منظور شدہ قانون میں شامل دفعات میں سے ایک بزرگ شہری کو ان کی رضامندی کے بغیر رہائشی سماجی نگہداشت کی سہولت میں بھیجنے سے منع کرتا ہے۔ اس قانون میں خاندان کے ساتھ رہنے کے حق کے کی بھی پرزور وکالت کی گئی ہے۔

      سعودی ہیومن رائٹس کمیشن کے بورڈ ممبر دوحہ الابراہیم بتایا کہ سعودی عرب نے اپنے شہریوں کو باوقار زندگی فراہم کرنے کے لیے ہر ممکن کوشش کی ہے اور معاشرے کے تمام افراد کے بشمول معمر افراد کے لیے ضروری دیکھ بھال پر زور دیا ہے۔

      اس میں کہا گیا ہے کہ ادارے، وزارتیں اور عوامی ادارے اس زمرے میں صحت کی مناسب خدمات فراہم کرتے ہیں اور تمام بزرگوں کے لیے جامع صحت کی دیکھ بھال فراہم کرتے ہیں۔ بزرگوں کے حقوق کے تحفظ میں توجہ کا مرکز سماجی نگہداشت کی سہولیات، خدمات کی فراہمی اور دستیاب سرگرمیوں کے شرطی معیارات پر رکھا جائے گا۔

      بزرگوں کی دیکھ بھال کے مراکز، عوامی، تجارتی اور رہائشی مقامات اور مساجد میں رضاکارانہ سرگرمیوں کی حوصلہ افزائی کے لیے ایک پروگرام کے ساتھ کیئر ہومز کی فہرستیں بھی لگائی جائیں گی۔ اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ کے مطابق 65 سال اور اس سے زیادہ عمر کے افراد سعودی عرب کی آبادی کا تقریباً 3.4 فیصد ہیں، جس کی اس نے پیش گوئی کی ہے کہ 2030 تک یہ تعداد 6 فیصد تک پہنچ سکتی ہے۔

      ابراہیم نے مزید کہا کہ اسی فریم ورک کے اندر انسانی حقوق کمیشن حکومتی اداروں، نجی شعبے اور سول سوسائٹی کے ساتھ مل کر کام کر رہا ہے تاکہ اس سلسلے میں منعقد ہونے والی متعدد سرگرمیوں، پروگراموں اور تقریبات کے ذریعے بزرگوں کے حقوق کی اہمیت کے بارے میں بیداری پیدا کی جا سکے۔

      اس کے علاوہ وزرا کو امید ہے کہ قانون کی شرائط کے تحت نئے شماریاتی معلومات مطالعات اور تحقیق کے ذریعے پیدا کی جائیں گی تاکہ بزرگوں کو فائدہ پہنچانے کے لیے اقدامات کو فروغ دینے میں مدد ملے۔ سعودی وزارت برائے انسانی وسائل اور سماجی ترقی پہلے ہی بزرگوں کو مفت امداد فراہم کرتی ہے اور نئے منظور شدہ قانون کے دو آرٹیکلز گروپ کو فیس یا چارجز کی ادائیگی سے مستثنیٰ ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: