ہوم » نیوز » عالمی منظر

سعودی عرب : خواتین کے حقوق کی سرگرم کارکن لوجین الھذلول رہا ، لگایا گیا تھا یہ سنگین الزام

سعودی عرب میں خواتین کو گاڑی چلانے کی اجازت دینے کی مہم میں 31 سالہ لجین الھذلول نے اہم رول ادا کیا تھا ۔ سال 2018 میں حکام نے ان کو تحویل میں لیا تھا ۔ چند ہفتے قبل ہی ان پر عائد الزامات واپس لیے گئے تھے ۔

  • Share this:
سعودی عرب : خواتین کے حقوق کی سرگرم کارکن لوجین الھذلول رہا ، لگایا گیا تھا یہ سنگین الزام
سعودی عرب : خواتین کے حقوق کی سرگرم کارکن لوجین الھذلول رہا ، لگایا گیا تھا یہ سنگین الزام ۔ تصویر : یو این آئی ۔

سعودی عرب نے خواتین کے حقوق کی سرگرم کارکن لوجین الھذلول کو جیل سے رہا کردیا ہے ۔ لجین الھذلول کے اہل خانہ نے بدھ کے روز ایک بیان میں یہ اطلاع دی ہے ۔  ملک میں خواتین کو گاڑی چلانے کی اجازت دینے کی مہم میں 31 سالہ لجین الھذلول نے اہم رول ادا کیا تھا ۔ سال 2018 میں حکام نے ان کو تحویل میں لیا تھا ۔ چند ہفتے قبل ہی ان پر عائد الزامات واپس لیے گئے تھے ۔


دسمبر میں عدالت نے انہیں ملک میں سیاسی نظام کو بدلنے اور عوامی نظم و نسق کو نقصان پہنچانے کے مقدمے میں قصوروار قرار دیا تھا اور انہیں زیادہ سے زیادہ چھ سال قید کی سزا سنائی گئی تھی ، جس کا بیشتر حصہ وہ جیل میں گزار چکی تھیں ۔


تاہم بیان میں ان کے اہل خانہ نے بتایا کہ لجین الھذلول'ابھی تک مکمل طور پر آزاد نہیں ہیں اور انہیں پیروی کے دوران متعدد پابندیوں کا سامنا کرنا پڑے گا ۔ جن میں پانچ سال کی سفری پابندی بھی شامل ہے ۔


واضح رہے کہ انسانی حقوق پر کام کرنے والی عالمی تنظیموں نے لجین الھذلول کی رہائی کا بارہا مطالبہ کیا تھا ۔ انسانی حقوق کے ماہرین کی رائے میں لجین کا ٹرائل عالمی معیار پر پورا نہیں اترتا تھا ۔ نومبر میں ایمنسٹی انٹرنیشنل نے لجین کے مقدمے کی فوجداری مقدمات سننے والی خصوصی عدالت میں منتقلی کی مذمت کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس اقدام نے سعودی حکام کو واضح کر دیا ہے۔

لجین کے اہل خانہ نے لگایا تھا یہ الزام

لجین الھذلول کے خاندان نے الزام لگایا تھا کہ سعودی حکام نے لجین کو گرفتاری کے بعد تین ماہ کے لیے ایک نامعلوم مقام پر حراست میں رکھا ، جہاں ان سے کسی کا بھی رابطہ نہیں تھا ۔ ان کا الزام تھا کہ دوران حراست لجین کو بجلی کے جھٹکے بھی لگائے گئے اور جنسی ہراسانی کے علاوہ ان پر کوڑے بھی برسائے گئے ۔

نیوز ایجنسی یو این آئی کے ان پٹ کے ساتھ ۔ 
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Feb 11, 2021 10:04 AM IST