ہوم » نیوز » عالمی منظر

جنسی تعلقات کے ذریعہ ڈینگی وائرس کے منتقل ہونے کے پہلے کیس کی تصدیق

حکام کے مطابق، اس کیس سے پہلے دنیا بھر میں یہی تاثر عام تھا کہ ڈینگی بیماری صرف مچھروں کے کاٹنے سے ہی ہوتی ہے۔

  • Share this:
جنسی تعلقات کے ذریعہ ڈینگی وائرس کے منتقل ہونے کے پہلے کیس کی تصدیق
علامتی تصویر

اسپین کے صحت حکام نے ایک شخص کے جنسی تعلقات کے ذریعے ڈینگی وائرس پھیلنے کے معاملے کی تصدیق کی ہے۔ یہ دنیا بھر میں اپنی نوعیت کا پہلا کیس ہے جس میں ایک ہم جنس پرست شخص جنسی تعلقات کی وجہ سے اس کی زد میں آیا ہے۔ حکام کے مطابق، اس کیس سے پہلے دنیا بھر میں یہی تاثر عام تھا کہ ڈینگی بیماری صرف مچھروں کے کاٹنے سے ہی ہوتی ہے۔

برطانوی اخبار ٹیلی گراف میں شائع ایک رپورٹ کے مطابق، متاثرہ 41 سالہ اس شخص کا تعلق میڈرڈ سے ہے۔ جس مرد ساتھی کے ساتھ اس نے جنسی تعلقات بنائے تھے اس شخص کو کیوبا میں ایک مچھر نے کاٹا تھا۔

میڈرڈ کے محکمہ صحت کی ترجمان سوزانا جیمینزے کہتی ہیں کہ اس شخص کو ستمبر میں ڈینگی انفیکشن ہونے کی تصدیق ہوگئی تھی اور ڈاکٹر یہ جان کر حیران تھے کیونکہ اس نے کسی ایسے ملک کا سفر بھی نہیں کیا تھا جہاں ڈینگی بیماری، فلو جیسی علامات جیسے تیز بخار اور جسم میں درد کی علامت پائی جاتی ہو۔ انہوں نے کہا کہ تاہم، ڈاکٹروں نے اس وقت اپنی تشخیص کا طریقہ بدلا جب انہیں پتہ چلا کہ متاثرہ شخص کا ساتھی بھی گزشتہ کچھ دنوں سے اسی مرض میں مبتلا ہے اور اسے کیوبا کے ایک نجی دورے کے دوران مچھر نے کاٹ لیا تھا۔

ترجمان کے مطابق، اس انکشاف کے بعد دونوں کے نطفے کا تجزیہ کیا گیا جس سے پتہ چلا کہ دونوں ایک ہی طرح کے وائرس کا شکار ہیں۔  انہوں نے کہا کہ جنوبی کوریا میں حال ہی میں شائع ہونے والی ایک طبی تحقیق میں اس بات کا امکان ظاہرکیا گیا تھا کہ مرد اور خاتون کے درمیان جنسی تعلقات ڈینگی کی منتقلی کا باعث بن سکتے ہیں تاہم دومردوں میں اس وائرس کے منتقل ہونے کا یہ ایک منفرد واقعہ ہے۔
First published: Nov 11, 2019 11:29 AM IST