ہوم » نیوز » عالمی منظر

کورونا وائرس: چین میں پھنسے شہریوں کو نہیں لائےگا پاکستان، لوگوں نےکہا- شرم کرو عمران

پاکستان (Pakistan) نے چین (China) جانے والی تمام فلائٹ منسوخ کردی کردی ہے۔ ایسے میں وہاں پھنسےکسی کو بھی نکلنےکا کوئی راستہ نہیں نظر آرہا ہے۔

  • Share this:
کورونا وائرس: چین میں پھنسے شہریوں کو نہیں لائےگا پاکستان، لوگوں نےکہا- شرم کرو عمران
چین میں کورونا وائرس میں پھنسے شہریوں کو نہیں لانے پرپاکستان کے وزیراعظم عمران خان کی سخت تنقید کی جارہی ہے۔

اسلام آباد: چین (China) میں کورونا وائرس (coronavirus) سے اب تک 300 سے زیادہ لوگوں کی موت ہوگئی ہے۔ ہردن اموات کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ اس درمیان، ہندوستان نے ووہان میں پھنسے اپنے 647 شہریوں کو فلائٹ بھیج کر واپس بلالیا ہے، لیکن پاکستان (Pakistan) کے ہزاروں طلباء اب بھی وہاں پھنسے ہوئے ہیں۔ لوگ حکومت سے باہر نکالنےکےلئے مدد مانگ رہے ہیں، لیکن پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے انہیں واپس لانے سے منع کردیا ہے۔ لہٰذا سوشل میڈیا پرلوگ عمران خان کی تنقید کررہے ہیں۔


حکومت کی دلیل ہےکہ وہاں چین کی طرف سے ان کے شہریوں کو مناسب میڈیکل سہولیات مل رہی ہیں۔ پاکستان میں ان کے اہل خانہ حکومت پر انہیں واپس لانےکا دباؤ بنا رہے ہیں، لیکن حکومت سننےکےلئے تیار نہیں ہے۔ حکومت کا کہنا ہےکہ انہیں وہاں سے لانا خطرے سے خالی نہیں ہے۔




چین کے ووہان شہر میں پھنسے ایک پاکستانی طالب علم نے سوشل میڈیا پر پوسٹ کرتے ہوئے لکھا ہےکہ وہ لوگ گھنٹوں تک خود کو روم (کمرے) میں بند کرکے رکھتے ہیں۔



پاکستانی صدر عارف علوی ہوئے ٹرول

وہیں پاکستان کے صدر ڈاکٹر عارف علوی طلباء کو عجیب مشورہ دینے پر ٹرول ہوگئے۔ ڈاکٹر عارف علوی نےکہا تھا کہ اگر کہیں پلیگ (وائرس) پھیلتا ہے تو جو لوگ جہاں ہیں، انہیں وہیں رہنا چاہئے۔ حالانکہ انہوں نے اپنے ٹوئٹ میں پیغمر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے حوالہ سے بخاری اور مسلم شریف کی ایک حدیث کا حوالہ دیا تھا۔



کورونا وائرس کی جانچ کے لئے صرف ایک نمونہ ہی کافی: ڈبلیو ایچ او

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے کورونا وائرس سے متعلق نئے احکامات جاری کرتے ہوئےکہا ہےکہ اس کی جانچ کےلئے دو نہیں بلکہ صرف ایک ہی سویب نمونہ کافی ہے۔ مہاراشٹر کے ایک سینئر صحت افسر نے اتوار کو یہ بات کہی۔ افسر نےکہا کہ ڈبلیو ایچ او کے احکامات سے نمونوں کی تیزی سے جانچ یقینی ہوگی۔ ان سےکورونا وائرس سے نمٹنے میں بھی تیزی آئےگی۔

چین میں کوروناوائرس کا پہلا معاملہ گزشتہ سال دسمبر کے آخر میں ووہان شہرسامنے آیاتھا۔ موجودہ وقت میں یہ دنیا کے 20سے زیادہ ملکوں میں پھیل چکا ہے۔
چین میں کوروناوائرس کا پہلا معاملہ گزشتہ سال دسمبر کے آخر میں ووہان شہرسامنے آیاتھا۔ موجودہ وقت میں یہ دنیا کے 20سے زیادہ ملکوں میں پھیل چکا ہے۔


مہاراشٹر کے امراض نگرانی افسر ڈاکٹر پردیپ آوتے نے پی ٹی آئی - بھاشا کو بتایا، 'ہمیں ڈبلیو ایچ او کی طرف سے نئے احکامات ملے ہیں، جس میں مشورہ دیا گیا ہےکہ نوول وائرس کی جانچ کےلئے صرف ایک سویب نمونہ ہی کافی ہے۔ ہم ابھی تک جانچ کے لئے ہر ایک مریض کے دو نمونے پنے کے نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ویرو لوجی (این آئی وی) کو بھیج رہے تھے۔
First published: Feb 02, 2020 05:41 PM IST