உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    طالبان نے افغانستان میں مزید تین شہروں پر قبضہ کرلیا، اب تک 1.54 لاکھ لوگ ہوئے بے گھر، امریکی صدر جو بائیڈن اپنے فیصلے پر قائم

    طالبان (Taliban) نے منگل کو افغانستان (Afghanistan) کے تین مزید شہروں پر قبضہ حاصل کرلیا۔ یہ شہر پل خمری، فیض آباد اور فراہ ہیں۔ اب طالبان کی نظر یہاں کے چوتھے سب سے بڑے شہر مزار شریف پر ہے۔

    طالبان (Taliban) نے منگل کو افغانستان (Afghanistan) کے تین مزید شہروں پر قبضہ حاصل کرلیا۔ یہ شہر پل خمری، فیض آباد اور فراہ ہیں۔ اب طالبان کی نظر یہاں کے چوتھے سب سے بڑے شہر مزار شریف پر ہے۔

    طالبان (Taliban) نے منگل کو افغانستان (Afghanistan) کے تین مزید شہروں پر قبضہ حاصل کرلیا۔ یہ شہر پل خمری، فیض آباد اور فراہ ہیں۔ اب طالبان کی نظر یہاں کے چوتھے سب سے بڑے شہر مزار شریف پر ہے۔

    • Share this:
      طالبان (Taliban) نے منگل کو افغانستان (Afghanistan) کے تین مزید شہروں پر قبضہ حاصل کرلیا۔ یہ شہر پل خمری، فیض آباد اور فراہ ہیں۔ اب طالبان کی نظر یہاں کے چوتھے سب سے بڑے شہر مزار شریف پر ہے۔ ہندوستان نے منگل کو یہاں کے بیشتر حصوں سے اپنے شہریوں کو نکالنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کے لئے اسپیشل فلائٹ (خصوصی طیارہ) بھی بھیجی گئی ہے۔ طالبان کے ڈر سے اب تک تقریباً ایک لاکھ 54 ہزار لوگ بے گھر ہوگئے ہیں۔

      کرکٹر راشد خان نے دنیا سے مانگی مدد

      افغانستان میں بدتر حالات کے درمیان کرکٹر راشد خان نے دنیا سے مدد کی اپیل کی ہے۔ راشد خان (Rashid Khan) نے منگل کو ٹوئٹر پر لکھا- ’ڈیئر ورلڈ لیڈرس- میرا ملک اس وقت مشکل میں ہے، ہزاروں بے قصور بچے، خواتین اور عوام شہید ہو رہے ہیں، گھر برباد ہو رہے ہیں۔ ہمیں ایسے بحران میں چھوڑ کر نہ جائیں۔ ہم امن چاہتے ہیں، افغانستان کی موت ہونے سے بچائیے‘۔



      امریکہ نے چھوڑ دیا ساتھ

      اس درمیان امریکہ کے صدر جو بائیڈن نے افغانستان سے فوجیوں کی واپسی پر کسی بھی طرح کی تبدیلی کی گنجائش سے واضح طور پر انکار کردیا ہے۔ جو بائیڈن نے کہا، ’افغانستان سے امریکی افواج کی واپسی کے فیصلے پر مجھے کوئی افسوس نہیں ہے۔ افغان لیڈروں اور لوگوں کو اپنے ملک کے لئے طالبان سے خود لڑنا ہوگا۔ یہ ان کا ہی جدوجہد ہے‘۔ امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا، ’ہم نے ہزاروں امریکی فوجیوں کو کھو دیا۔ افغان لیڈروں کو ساتھ آنا ہوگا۔ انہیں اپنے اور ملک کے لئے لڑنا ہوگا۔ ہم اپنے وعدے کو جاری رکھیں گے، لیکن مجھے اپنے فیصلے (افغانستان سے فوج کو باہر نکالنے پر) افسوس نہیں ہے۔ طالبان افغانستان کے بڑے حصوں پر قابض ہوتا جا رہا ہے‘۔

      امریکہ کے صدر جو بائیڈن نے افغانستان سے فوجیوں کی واپسی پر کسی بھی طرح کی تبدیلی کی گنجائش سے واضح طور پر انکار کردیا ہے۔
      امریکہ کے صدر جو بائیڈن نے افغانستان سے فوجیوں کی واپسی پر کسی بھی طرح کی تبدیلی کی گنجائش سے واضح طور پر انکار کردیا ہے۔


      اس درمیان ایک رپورٹ کے مطابق، افغانستان میں 22,000 سے زیادہ فیملی کو قندھار میں طالبان کے حملے کے بعد لڑائی سے بچنے کے لئے اپنا گھر چھوڑنا پڑا ہے۔ 650,000  آبادی کا قندھار شہر، کابل کے بعد ملک کا دوسرا سب سے بڑا شہر ہے۔ مئی کے بعد سے دن بدن تشدد میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ غیر ملکی افواج کی آخری واپسی کی شروعات کے کچھ دنوں بعد طالبان کے ذریعہ شروع کئے گئے بڑے پیمانے پر حملے گزشتہ کچھ دنوں میں بہت بڑھ گیا ہے۔

       افغانستان میں بدتر حالات کے درمیان کرکٹر راشد خان نے دنیا سے مدد کی اپیل کی ہے۔

      افغانستان میں بدتر حالات کے درمیان کرکٹر راشد خان نے دنیا سے مدد کی اپیل کی ہے۔


      طالبان نے ان شہروں پر پہلے ہی کرلیا قبضہ

      افغانستان (Afghanistan) میں طالبان (Taliban) کے بڑھتے اثر سے حالات بد سے بدتر ہوتے جا رہے ہیں۔ طالبان نے اب تک 6 صوبائی دارالحکومتوں پر قبضہ کرلیا ہے۔ اس درمیان ہندوستانی حکومت نے افغانستان کے چوتھے بڑے شہر مزار شریف سے اپنے سفارت کاروں (Indian Diplomats) کو محفوظ نکالنے کا فیصلہ کیا ہے۔ طالبان کے ساتھ خطرناک لڑائی نے اپنے شہریوں کو مزار شریف سے ’خصوصی طیارہ‘ سے افغانستان چھوڑنے کو کہا ہے۔ افغانستان کے بالخ اور تخار میں طالبان جنگجووں اور افغان سیکورٹی اہلکاروں کے درمیان تیز ہوئی لڑائی کے درمیان یہ فیصلہ لیا گیا ہے۔ طالبان نے حال ہی میں شمالی بالخ کے کئی علاقوں پر قبضہ کرلیا تھا۔ اب اس کا ہدف مزار شریف ہے۔ مزار شریف بالخ صوبہ کی راجدھانی اور افغانستان کا چوتھا سب سے بڑا شہر ہے۔ اس سے قبل طالبان نے سمانگن صوبہ پر قبضہ کرلیا۔ یہاں کے ڈپٹی گورنر سیف اللہ سمانگانی نے کہا کہ باہری علاقے میں ہفتوں تک ہوئے تشدد کے بعد علاقے کے بزرگوں نے افسران سے شہر کو مزید تشدد سے بچانے کی گہار لگائی۔ اس کے بعد جنگجو بغیر کسی لڑائی کے ایبک میں داخل ہوئے۔ سمانگانی نے کہا، ’گورنر نے شہر سے سبھی اہلکاروں کو واپس بلا لیا ہے۔ یہاں طالبان کا پورا کنٹرول ہوگیا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: