உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    طالبان کا افغانی شہریوں کو فرمان، ایک ہفتے میں سرکاری جائیداد، گاڑی اور ہتھیار سونپیں

    افغانستان (Afghanistan) کی اقتدار پر قابض ہونے کے بعد دھیرے دھیرے فرمان جاری کر رہا ہے۔ ہفتہ کے روز طالبان (Taliban) نے افغانستان کے شہریوں کو سرکاری جائیداد، گاڑی اور ہتھیاروں کو ایک ہفتے کے اندر سونپنے کا حکم جاری کیا ہے۔

    افغانستان (Afghanistan) کی اقتدار پر قابض ہونے کے بعد دھیرے دھیرے فرمان جاری کر رہا ہے۔ ہفتہ کے روز طالبان (Taliban) نے افغانستان کے شہریوں کو سرکاری جائیداد، گاڑی اور ہتھیاروں کو ایک ہفتے کے اندر سونپنے کا حکم جاری کیا ہے۔

    افغانستان (Afghanistan) کی اقتدار پر قابض ہونے کے بعد دھیرے دھیرے فرمان جاری کر رہا ہے۔ ہفتہ کے روز طالبان (Taliban) نے افغانستان کے شہریوں کو سرکاری جائیداد، گاڑی اور ہتھیاروں کو ایک ہفتے کے اندر سونپنے کا حکم جاری کیا ہے۔

    • Share this:
      کابل: افغانستان (Afghanistan) کی اقتدار پر قابض ہونے کے بعد دھیرے دھیرے فرمان جاری کر رہا ہے۔ ہفتہ کے روز طالبان (Taliban) نے افغانستان کے شہریوں کو سرکاری جائیداد، گاڑی اور ہتھیاروں کو ایک ہفتے کے اندر سونپنے کا حکم جاری کیا ہے۔ طلوع نیوز کے مطابق، طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے بیان جاری کرکے لوگوں سے سرکاری جائیداد، ہتھیار، گولہ بارود اور گاڑیوں کو سونپنے کے لئے کہا ہے۔ ساتھ ہی وارننگ دی گئی ہے کہ جو افغانی شہری سرکاری جائیداد، ہتھیار، گولہ بارود طالبانی جنگجووں کو نہیں سونپتے ہیں، ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔

      بیان میں کہا گیا ہے کہ ’کابل میں، جن کے پاس گاڑی، ہتھیار، گولہ بارود اور دیگر سرکاری سامان ہیں، انہیں ایک ہفتے کے اندر اسلامی امارات کے متعلق محکموں کو سونپنے کے لئے مطلع کیا جاتا ہے۔ ایسا نہ کرنے والوں کے خلاف قانونی طور پر کارروائی کی جائے گی‘۔ اس سے پہلے طالبان نے ائمہ سے گزارش کی تھی کہ وہ جمعہ کے دن (خطبہ جمعہ) میں خاص پیغام دیں۔ اس پیغام میں اقتدار کے احکامات پر عمل کرنے کی بات کہی جائے۔ رائٹرس کے مطابق، طالبان نے ائمہ کرام سے ’اپیل‘ کی ہے کہ وہ لوگوں کو ’حکومت کی باتیں ماننے‘ یعنی حکم ماننے کے بارے میں ’پیغام‘ دیں۔

      افغانی شہریوں کو ملک چھوڑنے نہیں دے رہا ہے طالبان

      واضح رہے کہ طالبان کے قبضے کے بعد افغانستان میں خوف کا ماحول ہے۔ لوگ ملک کو چھوڑ کر جانا چاہتے ہیں، لیکن طالبان لوگوں کو ایسا کرنے سے روک رہا ہے۔ ایئرپورٹ جانے کے سبھی راستوں پر طالبانی جنگجو موجود ہیں۔ افغان شہریوں کو ایئر پورٹ تک بھی نہیں پہنچنے دیا جا رہا ہے۔ طالبان نے واضح طور پر کہہ دیا ہے کہ کسی بھی افغانستان کے شہری کو ملک نہیں چھوڑنے دیں گے۔

      ایئرپورٹ تک جانے والی سڑکیں بلاک کردی ہیں۔ صرف غیرملکی شہریوں کو ہی اس سڑک سے ایئر پورٹ تک جانے کی اجازت دی جا رہی ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: