உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پورن ویب سائٹس سے طالبان نے تیار کی افغان سیکس ورکرس کی لسٹ ، دی جائے گی یہ خطرناک سزا

    پورن ویب سائٹس سے طالبان نے تیار کی افغان سیکس ورکرس کی لسٹ ، دی جائے گی یہ خطرناک سزا ۔ فائل فوٹو ۔

    پورن ویب سائٹس سے طالبان نے تیار کی افغان سیکس ورکرس کی لسٹ ، دی جائے گی یہ خطرناک سزا ۔ فائل فوٹو ۔

    ذرائع نے کہا کہ طالبان کھلے طور پر پورنوگرافی کی مذمت کرتا ہے اور وہ تیزی سے افغانستان میں جسم فروشی والی جگہوں کو تلاش کرنے میں لگا ہوا ہے ۔ تاکہ سیکس ورکر کے طور پر کام کرنے والی خواتین کو سزا دی جاسکے ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی : افغانستان پر قبضہ کرنے کے بعد اب رفتہ رفتہ طالبان اپنا اصلی روپ دکھا رہے ہیں ۔ پہلے تو اس نے شہریوں سے حقوق سمیت کئی بڑے وعدے کئے ، لیکن اب وہ دھیرے دھیرے پابندی لاگو کرنے پر آمادہ ہے ۔ اس درمیان ایک رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ اب طالبان کے نشانہ پر افغانستان کے سیکس ورکرس ہیں ۔ میڈیا رپورٹس کی مانیں تو طالبان نے ایک قتل فہرست تیاری کی ہے اور وہ سیکس ورکرس کی شناخت کیلئے پورن ویب سائٹس کا سہارا لے رہے ہیں ۔

      سن آن لائن کی رپورٹ کے مطابق طالبان کے سبھی دستے اس وقت افغانستان کے سیکس ورکرس کے پورن ویڈیوز کو تلاش کرنے میں لگے ہوئے ہیں ، تاکہ ان کی شناخت کی جاسکے ۔ ذرائع نے سن کو بتایا کہ جن سیکس ورکرس کے نام تلاش کرلئے گئے ہیں ، انہیں تلاش کر پتھر یا پھر پھانسی میں لٹکا کر موت کی سزا دی جائے گی ۔

      ذرائع نے کہا کہ طالبان کھلے طور پر پورنوگرافی کی مذمت کرتا ہے اور وہ تیزی سے افغانستان میں جسم فروشی والی جگہوں کو تلاش کرنے میں لگا ہوا ہے ۔ تاکہ سیکس ورکر کے طور پر کام کرنے والی خواتین کو سزا دی جاسکے ۔ طالبان ان خواتین کو یا تو اپنا غلام بنائے گا یا پھر انہیں موت کی سزا دی جائے گی ۔

      رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ کچھ افغان خواتین نے مغربی ممالک کے لوگوں کے ساتھ جنسی تعلقات بناتے ہوئے ویڈیو بنایا تھا ۔ اس ویڈیو نے آگ میں گھی کا کام کیا ۔ اس کو دیکھ کر طالبان اور زیادہ ناراض ہے ۔ بتادیں کہ افغانستان میں جسم فروشی پوری طرح سے ناجائز ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: