உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    طالبان کے اقتدار میں پہلی بار خواتین کے لئے خوشخبری، شادی سے متعلق دی گئی اس بات کی اجازت

    طالبان کے اقتدار میں پہلی بار خواتین کے لئے خوشخبری، شادی سے متعلق دی گئی اس بات کی اجازت

    طالبان کے اقتدار میں پہلی بار خواتین کے لئے خوشخبری، شادی سے متعلق دی گئی اس بات کی اجازت

    Women in Taliban rule: طالبان نے افغانستان کی خواتین کے حقوق (Afghan Women rights) سے متعلق نئے احکامات جاری کئے ہیں۔ نیا حکم نامہ کہتا ہے کہ اب خواتین کو پراپرٹی کے طور پر نہیں دیکھا جائے گا۔ ساتھ ہی اب شادی کے لئے خواتین کی بھی رضا مندی (Consent) لینا ضروری ہوگی۔

    • Share this:
      کابل: زبردست بین الاقوامی دباو (International Pressure) کا اثر اب طالبان کے اقتدار (Taliban Rule) پر نظر آنے لگا ہے۔ طالبان نے افغانستان کی خواتین کے حقوق (Afghan Women rights) سے متعلق نئے احکامات جاری کئے ہیں۔ نیا حکم نامہ کہتا ہے کہ اب خواتین کو پراپرٹی کے طور پر نہیں دیکھا جائے گا۔ ساتھ ہی اب شادی کے لئے خواتین کی بھی رضا مندی (Consent) لینا ضروری ہوگی۔ حالانکہ ابھی خواتین کی تعلیم اور کام کاج سے متعلق کوئی بات نہیں کہی گئی ہے۔

      دراصل افغانستان کے اقتصادی حالات (Bad economic condition) خراب ہوتے جا رہے ہیں۔ بین الاقوامی برادری نے افغانستان کو ملنے والے سبھی فنڈ روک (Fund Ceased) دیئے ہیں۔ ایسے میں طالبان پر مسلسل یہ دباو بنایا جا رہا تھا کہ وہ خواتین کے حقوق میں مثبت فیصلہ لے۔ طالبان ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا ہے- ’خواتین پراپرٹری نہیں ہیں، بلکہ ایک آزاد انسان ہیں‘۔

      اب خواتین پر شادی کے لئے دباو نہیں بنایا جاسکے گا

      نئے ضوابط کے مطابق، اب خواتین پر شادی کے لئے دباو نہیں (no forced marriage) بنایا جاسکے گا۔ ساتھ ہی بیوہ عورت (widow women) کو اپنے شوہر کی جائیداد میں حصہ (property rights) دیا جائے گا۔ اب عدالتوں کو فیصلہ دیتے وقت نئے احکامات کا خیال رکھنا ہوگا۔

      طالبان اقتدار میں آنے کے بعد بگڑتے جا رہے ہیں حالات

      حالانکہ ابھی طالبان کی طرف سے خواتین کی تعلیم (women education) اور کام کاج کو لے کر کوئی فیصلہ (no decision) نہیں کیا گیا ہے۔ افغانستان میں طالبان کا اقتدار آنے سے پہلے تک خواتین کو بھی پڑھائی اور کام کاج کی چھوٹ تھی، لیکن طالبان اقتدار میں خواتین کی پڑھائی اور کام کاج پر روک لگا دی گئی ہے۔ اسے لے کر ملک کی سڑکوں پر خواتین نے جم کر احتجاج کیا تھا۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      آج ہی کے دن ہندوستانی فوج نے شروع کیا تھا آپریشن اور 13 دنوں میں پاکستان کے ہوگئے دو ٹکڑے


      صورتحال یہاں تک خراب ہوگئی تھی کہ طالبان نے خواتین کے لئے فرمان جاری کیا تھا کہ وہ ان دنوں گھروں میں ہی رہیں۔ کیونکہ اس کے کچھ جنگجووں کو خواتین کا احترام کرنے کے لئے ٹریننگ نہیں دی گئی تھی۔ نیویارک ٹائمس کو طالبان لیڈر احمد اللہ واسیک نے کہا تھا کہ جب تک خواتین حجاب میں رہیں گی تب تک ان کے نوکری کرنے کو لے کر کوئی پریشانی نہیں ہیں، لیکن اس کا کہنا تھا کہ اب ہم خواتین کو تب تک گھروں میں رہنے کو کہیں گے جب تک کہ حالات معمول کے مطابق نہیں ہوجاتے ہیں۔

      قومی، بین الااقوامی، جموں و کشمیر کی تازہ ترین خبروں کے علاوہ  تعلیم و روزگار اور بزنس  کی خبروں کے لیے  نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں۔


       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: