உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ٹیلیگرام کے بانی نے واٹس ایپ کے یوزرس کو پھر کیا خبردار، دی میسجنگ ایپ سے دور رہنے کی صلاح

    ٹیلیگرام کے بانی نے واٹس ایپ کے یوزرس کو پھر کیا خبردار، دی میسجنگ ایپ سے دور رہنے کی صلاح

    ٹیلیگرام کے بانی نے واٹس ایپ کے یوزرس کو پھر کیا خبردار، دی میسجنگ ایپ سے دور رہنے کی صلاح

    پاویل نے نومبر، 2019 میں بھی واٹس ایپ یوزرس کو ایک وارننگ جاری کی تھی جس میں ان سے اپنے اپنے اسمارٹ فون سے واٹس ایپ کو ڈیلیٹ کرنے کے لئے کہا تھا تا کہ ان کے پیغامات، تصاویر کو لیک ہونے سے روکا جاسکے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • New Delhi, India
    • Share this:
      ٹیلی گرام کے بانی پاویل ڈیورو نے جمعرات کو ایک بار پھر دعویٰ کیا کہ واٹس ایپ یوزرس کے فون پر ہیکرس ہر چیز کو پوری طرح سے ایکسس کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ لوگوں سے ٹیلی گرام استعمال کرنے کے لئے نہیں کہہ رہے ہیں، وہ چاہے کوئی بھی میسجنگ ایپ استعمال کریں، لیکن واٹس ایپ سے دور رہیں۔

      ٹیلی گرام پر ایک پوسٹ میں پاویل نے کہا کہ واٹس ایپ نے پچھلے ہفتے خود سیکورٹی کے ایشو کو اُجاگر کیا تھا۔ انہوں نے خبردار کیا کہ، ہیکر کو آپ کے فون پر کنٹرول حاصل کرنے کے لئے صرف ایک ویڈیو بھیجنا ہے یا واٹس ایپ پر آپ کےس اتھ ایک ویڈیو کال شروع کرنی ہے۔ ماجی میں واٹس ایپ کی کئی مرتبہ تنقید کرچکے پاویل نے کہا، واٹس ایپ کا سیکورٹی ایشو ٹھیک ویسا ہی ہے جیسا 2018 میں تلاش کیا گیا تھا، پھر 2019 میں ایک اور وہیں 2020 میں مزید ایک کی تلاش کی گئی تھی۔ اور ہاں، اس کے پہلے 2017 میں بھی۔ 2016 سے پہلے واٹس ایپ میں کوئی انکرپشن نہیں تھا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      ائیرٹیل صارفین کیلئے بڑی خبر، ان آٹھ شہروں میں لائیو ہوا فائیوجی پلس، ایسے کرے گا کام

      یہ بھی پڑھیں:
      ایپل کی چین کو جھٹکا دینے کی تیاری، ایئرپاڈس-بیٹس ہیڈفون ہندوستان میں بنیں گے

      پاویل نے نومبر، 2019 میں بھی واٹس ایپ یوزرس کو ایک وارننگ جاری کی تھی جس میں ان سے اپنے اپنے اسمارٹ فون سے واٹس ایپ کو ڈیلیٹ کرنے کے لئے کہا تھا تا کہ ان کے پیغامات، تصاویر کو لیک ہونے سے روکا جاسکے۔ پچھلے سال انہوں نے کہا تھا کہ واٹس ایپ کی نئی شرطوں میں یوزرس کو ان کا سارا نجی ڈیٹا فیس بک کے ساتھ شیئر کرنے کے لئے کہا جارہا ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: