உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ٹیکساس ہوسٹیج ڈرامے کا پاکستانی کنکشن! دہشت گردی کو لے کر جانچ کے دائرے میں پاکستان

    ٹیکساس یرغمال کیس کو لے کر پاکستان بھی آیا جانچ کے دائرے میں۔

    ٹیکساس یرغمال کیس کو لے کر پاکستان بھی آیا جانچ کے دائرے میں۔

    12 گھنٹے تک چلی اس رسہ کشی کے درمیان، عافیہ صدیقی کے وکیل نے میڈیا سے کہا کہ یرغمال بنانے والا شخص عافیہ کا بھائی نہیں ہے اور وہ اپنے نام پر اس طرح کا تشدد اور سازش نہیں چاہتی ہے۔ وہیں لوگوںکو یرغمال بنانے والے شخص نے دعویٰ کیا تھاکہ اُس کے پاس بم ہے۔

    • Share this:
      واشنگٹن: امریکہ کے ٹیکساس میں یہودیوں کو یرغمال بنانے جانے کے واقعے کے عبد دہشت گردی (Terrorism) کو لے کر پاکستان (Pakistan) کا رول جانچ کے دائرے میں آگیا ہے۔ ہفتہ کی صبح ٹیکساس کے سینیگاگ میں پاکستانی امریکن نیورو سائنٹسٹ عافیہ صدیقی (Aafia Siddiqui) کو رہا کرانے کی مانگ کو لے کر ایک شخص نے کچھ لوگوں کو یرغمال بنالیا تھا۔ جس کو بعد میں ایف بی آئی نے انکاونٹر میں مار گرایا اور یرغمال لوگوں کو بچالیا۔ بتادیں کہ پاکستان نے بار بار امریکہ سے عافیہ صدیقی کو رہا کرنے کی مانگ کی ہے۔

      پاکستان اور امریکہ کے درمیان دہشت گردی سے جڑے اس نئے معاملے کی شروعات ہفتہ کی صبح اس وقت ہوئی جب محمد صدیقی نام کے ایک شخص نے یہودیوں کی عبادت گاہ میں چار یہودیوں کو یرغمال بنالیا اور عہدیداروں سے یہ مطالبہ کیا کہ اُس کی بہن عافیہ صدیقی کو رہا کیا جائے، جو کہ کارس ویل میں فیڈرل میڈیکل سینٹرل میں قید ہے۔

      12 گھنٹے تک چلی اس رسہ کشی کے درمیان، عافیہ صدیقی کے وکیل نے میڈیا سے کہا کہ یرغمال بنانے والا شخص عافیہ کا بھائی نہیں ہے اور وہ اپنے نام پر اس طرح کا تشدد اور سازش نہیں چاہتی ہے۔ وہیں لوگوںکو یرغمال بنانے والے شخص نے دعویٰ کیا تھاکہ اُس کے پاس بم ہے۔

      میڈیا رپورٹ کے مطابق، اس واقعہ کے وقت سینیگاگ میں مذہبی پروگرام کا فیس بک پر لائیو ٹیلیکاسٹ جاری تھا۔ اس دوران ایک بندوق بردار شخص اندر گھس آیا اور اُس نے چار لوگوں کو یرغمال بنالیا۔

      عافیہ صدیقی کی رہائی کو لے کر پاکستان مسلسل امریکہ سے مطالبہ کرتا آیا ۔ دراسل عافیہ صدیقی پر القاعدہ کے ساتھ مل کر امریکہ کے خلاف کام کرنے کا الزام لگا ہے۔ میڈیا کا ایک طبقہ عافیہ کو لیڈی القاعدہ کے نام سے بھی پکارتا ہے جب کہ پاکستان کا ایک طبقہ عافیہ کو ڈاکٹر آف نیشن یعنی قوم کی بیٹی کہہ کر پکارتا ہے۔ پاکستان میں اس طبقے نے عافیہ کی جیل سے رہائی کے لئے مہم بھی چلائی ہے۔

      پاکستان کے موجودہ وزیراعظم عمران خان نے پارلیمانی امور کے مشیر بابر اعوان کو عافیہ صدیقی کی رہائی کے لئے بیرون ممالک میں کی جارہی کوششوں سے جڑے معاملوں کی نگرانی کے لئے نامزد کیا ہے تا کہ عافیہ کو محفوظ طریقے سے رہا کیا جاسکے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: