உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    حاملہ خواتین اور مریضوں کے ساتھ جبراً یہ انتہائی گھٹیا حرکت کرتا تھا ڈاکٹر، ملی 465 سال کی سزا

    ڈاکٹر کی اس غلطی کے لئے امریکہ میں اسے 465 سال کی سزا سنائی گئی ہے۔

    ڈاکٹر کی اس غلطی کے لئے امریکہ میں اسے 465 سال کی سزا سنائی گئی ہے۔

    امریکہ میں ایک ایسا ہی معاملہ سامنے آیا ہے جہاں ایک ڈاکٹر اپنے مریضوں کو بے وجہ آپریشن کر دیا کرتا تھا۔ ڈاکٹر کی اس غلطی کے لئے امریکہ میں اسے 465 سال کی سزا سنائی گئی ہے۔

    • Share this:
      ڈاکٹر کا کام ہوتا ہے مریض کا علاج کرنا لیکن اگر کوئی اس کا استعمال کوئی صرف پیسہ کمانے کے لئے غلط طریقے سے کرنے لگے تو کیا ہوگا۔ امریکہ میں ایک ایسا ہی معاملہ سامنے آیا ہے جہاں ایک ڈاکٹر اپنے مریضوں کو بے وجہ آپریشن کر دیا کرتا تھا۔ ڈاکٹر کی اس غلطی کے لئے امریکہ میں اسے 465 سال کی سزا سنائی گئی ہے۔

      کیا تھا معاملہ۔۔۔
      امریکہ کے ورجینیا میں ایک گائینیکولوجسٹ ڈاکٹر جاوید پرویز (Doctor Javed Parvez) پر الزام ہے کہ وہ اپنے مریضوں کو جبرا آپریشن کر دیتا تھا۔ محکمہ انصاف (Justice Department) نے ملزم ڈاکٹر کو پیر کو سزا سنائی ہے۔ کورٹ کے مطابق ڈاکٹر نے خواتین کا جبرا آپریشن کرکے انیشورینس کمپنیوں سے جم کر کمائی کی ہے۔ دراصل ڈاکٹر پرویز نجی اور سرکاری انشورینش کمپنیوں کو لاکھوں دالر کا بل دیتا تھا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق گزشتہ 10 سالوں میں ڈاکٹر نے اپنے ان کاموں کو اور تیز کر دیا تھا۔

      آپریشن کرانے کے لئے کرتا تھا تیار
      عدالت سے ملی جانکاری بتاتی ہے کہ پرویز حاملہ خواتین کو بے وجہ آپریشن کرانے کے لئے تیار کرتا تھا۔ وہ اپنے مریضوں کو سرجری کرنا ضروری بتاتا تھا۔ اتنا ہی نہیں اس نے کئی مرتبہ مریضوں کو کینسر سے بچانے کے لئے مریضوں کو ایسا کرنے کی صلاح دی تھی۔

      اپنے کام کی توہین
      امریکہ کے فیڈرل بیورو آف انویسٹیگیشن (FBI) کے نار فاک فیلڈ آفس کے انچارج اسپیشل ایجنٹ کارل شومن نے کہا ڈاکٹر، اتھارٹی اور بھروسے مند عہدوں پر بیٹھے لوگ اپنے مریضوں کو کوئی نقصان نہیں پہنچانے کا حلف لیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فضول، ناگوار سرجری کرکے ڈاکٹر پرویز نے نہ صرف اپنے مریضوں کو مستقل مشکلیں، درد اور فکر کے سبب کے ساتھ ان کی نجی زندگی کے حصے پر حملہ کیا ہے اور ان کے مستقبل کو لوٹا ہے۔
      Published by:sana Naeem
      First published: