ہوم » نیوز » عالمی منظر

کورونا وائرس سے نمٹنے میں ترکی کا لاک ڈاون ماڈل دنیا میں سب سے الگ ، بند ہے بھی اور نہیں بھی ، ہورہی چوطرفہ تعریف

کئی ایکسپرٹس ترکی کے لاک ڈاون ماڈل اور خاص عمر کے لوگوں پر پابندی کو صحیح مانتے ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ ایسے لوگ جن کے وائرس کی زد میں آنے کا زیادہ خطرہ ہے ، وہ لوگ گھر میں رہیں اور باقی لوگ ضروری تحفظ کے ساتھ اپنے کام سے گھر سے باہر نکل سکتے ہیں ۔

  • Share this:
کورونا وائرس سے نمٹنے میں ترکی کا لاک ڈاون ماڈل دنیا میں سب سے الگ ، بند ہے بھی اور نہیں بھی ، ہورہی چوطرفہ تعریف
کورونا وائرس سے نمٹنے میں ترکی کا لاک ڈاون ماڈل دنیا میں سب سے الگ ، بند ہے بھی اور نہیں بھی ۔ تصویر : رائٹرس

کورونا وائرس کے انفیکشن کو پھیلنے سے روکنے کیلئے دنیا کے سبھی ممالک میں لاک ڈاون ہے ۔ کہیں پر لاک ڈاون کو لے کر کافی سختی برتی جارہی ہے ، تو کہیں تھوڑی نرمی کا مظاہرہ کیا جارہا ہے ۔ لیکن ترکی نے لاک ڈاون کو لے کر سب سے الگ قوانین بنائے ہیں ۔ کورونا وائرس سے نمٹنے میں الگ راہ پر چلتے ہوئے ترکی نے ویک اینڈ پر لاک ڈاون لگایا جبکہ ہفتہ بھر اسٹے ہوم کے تحت صرف بچوں اور بزرگوں کے گھر سے باہر نکلنے پر روک لگا رکھی ہے ۔ ایسے میں ویک اینڈ پر لاک ڈاون اور خاص عمر کے لوگوں پر مخصوص پابندیوں کے ذریعہ ترکی نے کورونا وائرس کے خلاف جنگ میں نیا تجربہ کیا ہے ۔


سی این این میں شائع ایک رپورٹ کے مطابق ترکی میں گزشتہ ویک اینڈ لاک ڈاون رہا ۔ 31 صوبوں میں 48 گھنٹے کا کرفیو لگایا گیا ۔ ترکی حکومت نے دو گھنٹے کی پیشگی اطلاع پر کرفیو کا اعلان کردیا تھا ، جس کی وجہ سے ترکی میں افراتفری مچ گئی ۔ ضروری سامان خریدنے کیلئے دکانوں پر لوگوں کی بھیڑ امنڈ پڑی ۔ کچھ مقامات پر لوگوں نے سماجی دوری کا بھی خیال رکھا ۔


کرفیو کی وجہ سے ہورہی پریشانیوں کے درمیان ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے عوام سے گھروں میں رہنے کی اپیل کرتے ہوئے یقین دہانی کرائی کہ کورونا کے خلاف جنگ میں ترکی حکومت اپنے عوام کے تحفظ اور مدد کیلئے اہل ہے ۔ اس کے ساتھ ہی صدر نے اگلے ہفتہ ہونے والے لاک ڈاون کا بھی پہلے سے ہی اعلان کردیا ۔




کورونا وائرس کے خلاف لڑائی میں ترکی سخت پابندیوں کا استعمال نہیں کررہا ہے ۔ حکومت لوگوں سے گھروں میں رہنے اور سماجی دوری پر عمل کرنے کی اپیل کررہی ہے ۔ وہیں گھروں میں رہنے کی پالیسی کے تحت صرف 20 سال سے کم اور 60 سال سے زیادہ عمر کے لوگوں پر ہی باہر نکلنے پر پابندی ہے ۔

کئی ایکسپرٹس ترکی کے لاک ڈاون ماڈل اور خاص عمر کے لوگوں پر پابندی کو صحیح مانتے ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ ایسے لوگ جن کے وائرس کی زد میں آنے کا زیادہ خطرہ ہے ، وہ لوگ گھر میں رہیں اور باقی لوگ ضروری تحفظ کے ساتھ اپنے کام سے گھر سے باہر نکل سکتے ہیں ۔

رپورٹ کے مطابق برطانیہ میں لنکاسٹر یونیورسٹی میں وائرولاجی محکمہ کے ڈاکٹر محمد منیر محدود لاک ڈٓون کو متبادل حکمت عملی کے طور پر دیکھتے ہیں اور کہتے ہیں کہ صحت مند لوگوں کے باہر نکلنے میں کوئی نقصان نہیں ہے ۔ اس کے پیچھے ان کی یہ دلیل بھی ہے کہ دنیا میں ۸۰ فیصدی متاثرین ٹھیک ہورہے ہیں ۔ ساتھ ہی وہ لاک ڈاون کو وائرس پھیلنے سے روکنے کا ایک طریقہ بتاتے ہیں ، جس کی وجہ سے اسپتالوں پر زیادہ دباو نہیں آتا ہے ۔
First published: Apr 17, 2020 06:20 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading