உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Twitter Blue: اب ٹویٹر پر دستیاب ہوگا ایڈٹ بٹن، لیکن ادا کرنے ہوں گے سروس چارجز! جانیے تفصیلات

    یہ سروس فی الحال امریکہ، کینیڈا، نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا جیسے ممالک میں دستیاب ہے۔

    یہ سروس فی الحال امریکہ، کینیڈا، نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا جیسے ممالک میں دستیاب ہے۔

    Twitter Blue: ٹویٹر اس فیچر کو فی الحال ایسے صارفین کے لیے پیش کرے گا، جو اس کے لیے سروس چارجز ادا کریں گے۔ جسے ٹوئٹر بلیو (Twitter Blue) کہا جاتا ہے۔ یہ سروس فی الحال امریکہ، کینیڈا، نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا جیسے ممالک میں دستیاب ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, IndiaUSAUSA
    • Share this:
      Twitter Blue: ٹوئٹر (Twitter) نے باضابطہ طور پر دنیا بھر کے منتخب صارفین کے ساتھ اپنے ایڈیٹ بٹن کی ٹسٹنگ شروع کردی ہے۔ مذکورہ پلیٹ فارم نے جمعرات کو ایک ٹویٹ کے ساتھ اس اپ ڈیٹ کے بارے میں معلومات شیئر کیا ہے، جس میں ہمیں اس بات کی جھلک دکھائی گئی کہ ایڈٹ فیچر صارف کے لیے کس طرح نظر آئے گا اور وہ کس طرح کام کرے گا؟

      پوسٹ میں کہا گیا ہے کہ اگر آپ کو ٹویٹ میں ترمیم نظر آتی ہے تو اس کی وجہ یہ ہے کہ ہم ترمیم کے بٹن کی جانچ کر رہے ہیں۔ ترمیم شدہ ٹویٹ اس طرح نظر آئے گا۔ آپ کے پاس ترمیم کے وقت کے ساتھ ’آخری ترمیم شدہ' (last edited) لیبل کے ساتھ ایک پنسل آئیکن بھی نظر آئے گا۔

      اس سال کے شروع میں مائیکرو بلاگنگ پلیٹ فارم کی طرف سے ترمیم کے بٹن کی تصدیق کی گئی تھی، جو کہ پلیٹ فارم کا استعمال کرنے والے لاکھوں یوزرس کے لیے خوشی کا باعث تھا۔ ٹویٹر بلیو مذکورہ ممالک میں 4.99 ڈالر (تقریباً 400 روپے) کی ماہانہ فیس پر دستیاب ہے۔ صارفین کے پاس اپنے موجودہ ٹویٹ میں کوئی تبدیلی کرنے کے لیے 30 منٹ ہوں گے۔ تبدیلیاں کئی بار کی جا سکتی ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      Swiggy, Zomato جیسے ایپ سے آن لائن کھانا منگانا 60 فیصد تک مہنگا؟ سروے سے بڑا انکشاف

      یہ بھی پڑھیں: 

      مرد اس خاتون کو گڑیا کے طور پر سمجھتے ہیں لیکن حقیقی زندگی میں نہیں رکھنا چاہتا کوئی رشتہ، جانئے پورا ماجرا

      ٹویٹر اس فیچر کو فی الحال ایسے صارفین کے لیے پیش کرے گا، جو اس کے لیے سروس چارجز ادا کریں گے۔ جسے ٹوئٹر بلیو (Twitter Blue) کہا جاتا ہے۔ یہ سروس فی الحال امریکہ، کینیڈا، نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا جیسے ممالک میں دستیاب ہے۔ ٹوئٹر پر ایڈٹ بٹن کے لیے برسوں سے بات کی جاتی رہی ہے لیکن آخر کار پلیٹ فارم نے فیصلہ کیا کہ اب وقت آگیا ہے کہ وہ اپنے صارفین کی خواہشات کو پورا کرسکے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: