ہوم » نیوز » عالمی منظر

غزہ میں اسرائیلی بمباری کے بعداقوام متحدہ نے حقیقی سیاسی عمل کاکیامطالبہ، آگےکیاہوگا ؟

اقوام متحدہ کی نمائندہ ٹیم نے غزہ شہر کے بری طرح متاثرہ علاقوں تباہ شدہ عمارتوں کے آس پاس کا دورہ کیا اور نقصانات کا جائزہ لیا۔ جس میں اہل غزہ کے مکانات، رہائیشی گھر، تعلیمی ادارہ اور طبی مراکز کو اسرائیلی جارحیت کے دوران سخت نقصان پہنچایا گیا ہے۔

  • Share this:
غزہ میں اسرائیلی بمباری کے بعداقوام متحدہ نے حقیقی سیاسی عمل کاکیامطالبہ، آگےکیاہوگا ؟
فلسطین کی جانب سے امداد کامطالبہ

غزہ میں اقوام متحدہ کے ایک عہدیدار نے اسرائیلی جارحیت (Israeli aggression) کے بعد فلسطینی تباہ کاریوں سے بچنے کے لئے"حقیقی سیاسی عمل" پرزوردیاہے۔یہ بات قابل ذکر ہے کہ غزہ اوردیگر فلسطینی علاقوں پر گیارہ طویل اسرائیلی جارحیت کے بعد غزہ کے عوام آہستہ آہستہ اپنی زندگی کو معمول پر لارہے ہیں۔


اقوام متحدہ کے اعلی عملہ نے جمعہ کے روز مصر کی جانب سے جنگ بندی کے فارمولے کے بعد اسرائیلی بمباری کے 11 دن کے بعد اس علاقے کا دورہ کیا۔اقوام متحدہ کی نمائندہ ٹیم نے غزہ شہر کے بری طرح متاثرہ علاقوں تباہ شدہ عمارتوں کے آس پاس کا دورہ کیا اور نقصانات کاجائزہ لیا۔جس میں اہل غزہ کے مکانات، رہائیشی گھر، تعلیمی ادارہ اور طبی مراکز کو اسرائیلی جارحیت کے دوران سخت نقصان پہنچایا گیا ہے۔



غزہ پر 10 مئی 2021 کے بعد سے اسرائیلی فضائی حملوں میں 217 سے زائد فلسطینی ہلاک اور ہزاروں بے گھر ہوگئے ہیں۔ اس دوران ناکہ بندی والے علاقے میں عمارتوں اور کلیدی ڈھانچے کو کچرے کے ڈھیر میں تبدیل کیا گیا ہے۔سنہ 2008 سے اسرائیل کے ساتھ پچھلی تین جنگوں کے بعد تقریبا 20 لاکھ افراد پر مبنی اس ساحلی پٹی کو نشانہ بنانے کے لیے یہ تازہ بمباری تھی۔


اقوام متحدہ کے فلسطینی پناہ گزینوں کی ایجنسی یو این آر ڈبلیو اے کے سربراہ فلپ لزارینی نے کہا کہ اس تعمیر نو کو "مختلف سیاسی ماحول" بنانے کی کوششوں کے ساتھ جلد پائے تکمیل تک پہنچانا ضروری ہے۔انہوں نے کہا کہ ہمیں انسانی ترقی، تعلیم ، ملازمتوں اور روزگار تک مناسب رسائی پر حقیقی توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت ہے۔ وہیں اس کے ساتھ ایک حقیقی سیاسی عمل کے ساتھ چلنے کی ضرورت ہے‘‘۔

اس سے قبل صحافیوں کے ایک گروپ سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ غزہ میں مشکلات کی پرتیں گہرا ہوتی جارہی ہیں۔ کیونکہ تنازعہ کی اصل وجوہات پر توجہ نہیں دی گئی ہے۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: May 25, 2021 11:41 AM IST