உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    UN: ہندوستان میں مسلم خواتین کے خلاف نفرت انگیز تقریر، اقوام متحدہ کے نمائندہ نے کہی یہ بڑی بات

    تصویر ٹوئٹر: twitter

    تصویر ٹوئٹر: twitter

    ایک ٹویٹ میں ویرنس نے کہا ہندوستان میں اقلیتی مسلم خواتین کو سوشل میڈیا ایپس میں ہراساں کیا جاتا ہے اور انہیں بیچا جاتا ہے۔ سلی ڈیل نفرت انگیز تقریر کی ایک شکل ہے، جس کی مذمت کی جانی چاہیے اور ان کے خلاف کارروائی کی جانی چاہیے۔

    • Share this:
      اقلیتی امور سے متعلق اقوام متحدہ (United Nations) کے خصوصی نمائندے ڈاکٹر فرنینڈ ڈی ویرنس (Dr Fernand de Varennes) نے بدھ کے روز نفرت انگیز ایپ کے منظر عام پر آنے کی مذمت کی جس پر سینکڑوں مسلم خواتین کی تصاویر کی نیلامی کے لیے اپ لوڈ کیا گیا اور کہا کہ ایسے واقعات کے رونما ہوتے ہی ان کے خلاف قانونی کارروائی کی ضرورت ہے۔

      منگل کی شام ایک ٹویٹ میں ویرنس نے کہا ہندوستان میں اقلیتی مسلم خواتین کو سوشل میڈیا ایپس میں ہراساں کیا جاتا ہے اور انہیں بیچا جاتا ہے۔ سلی ڈیل نفرت انگیز تقریر کی ایک شکل ہے، جس کی مذمت کی جانی چاہیے اور ان کے خلاف کارروائی کی جانی چاہیے۔ اقلیتوں کے تمام انسانی حقوق کو مکمل اور یکساں طور پر تحفظ فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔

      پچھلے ہفتے دہلی پولیس نے مدھیہ پردیش کے اندور سے 26 سالہ اومکریشور ٹھاکر کو گرفتار کرنے کے بعد کیا ہے۔ ٹھاکر کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ نفرت انگیز ایپ کا خالق ہے جو گزشتہ سال جولائی میں منظر عام پر آئی تھی جس میں صحافیوں اور کارکنوں سمیت سینکڑوں مسلم خواتین کو "نیلامی" کے لیے پیش کیا گیا تھا۔ اس کیس میں یہ پہلی گرفتاری تھی۔

      ٹھاکر کی گرفتاری آسام کے جورہاٹ سے انجینئرنگ کے دوسرے سال کے 21 سالہ طالب علم نیرج بشنوئی کی گرفتاری کے فوراً بعد عمل میں آئی۔ بشنوئی اسی طرح کی ایک ایپ کے خالق ہیں جو یکم جنوری کو GitHub پر منظر عام پر آئی، یہ وہی آن لائن پلیٹ فارم ہے، جو پچھلی ایپ بنانے کے لیے استعمال کیا جاتا تھا اور سابق کی طرح ڈاکٹروں کی تصاویر والی مسلم خواتین کو ’نیلامی‘ کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا تھا۔

      خواتین کے قومی کمیشن نے یکم جنوری کو ایک متاثرہ کے ٹویٹر پر ٹیگ کیے جانے کے بعد نفرت انگیز ایپ کا نوٹس لیا تھا۔ این سی ڈبلیو کی چیئرپرسن ریکھا شرما نے پہلے دی انڈین ایکسپریس کو بتایا تھا کہ وہ دہلی پولیس سائبر سیل کے ساتھ بھی مسلسل رابطے میں ہیں۔ ان دونوں ایپس کی تحقیقات کی پیشرفت پر نظر رکھے ہوئے ہیں۔

      شرما نے کہا تھا کہ یہ واقعات انتہائی افسوسناک ہیں۔ یہ ہندو یا مسلم خواتین کا معاملہ نہیں ہے۔ دونوں مذاہب کی برادریوں کو مل کر اپنی خواتین کی حفاظت کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ ایپس ایک دوسرے کی برادریوں کو نقصان پہنچانے کے بارے میں نہیں ہیں بلکہ خواتین کو تکلیف پہنچانے کے بارے میں ہیں۔ پولیس کو بھی ایسے معاملات میں اپنے پاؤں نہیں گھسیٹنا چاہیے۔

      شرما نے مزید کہا کہ کمیشن سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کے ساتھ تعاون کر رہا ہے۔ اس نے ٹویٹر، فیس بک اور گوگل کے ساتھ کئی میٹنگیں کی ہیں۔ اس طرح کے ایپس کے مسئلے کو حل کرنے کے لیے یہ ضروری ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: