உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف پرامریکہ نے عائد کی پابندی، ظریف نے کہا نہیں پڑیگا کوئی اثر

    ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف۔(تصویر:اے ایف پی)۔

    ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف۔(تصویر:اے ایف پی)۔

    امریکہ نے ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف پر پابندی عائد کردی ہے۔ یعنی اگر جواد ظریف کے اثاثے امریکہ میں ہیں تو وہ منجمد ہو جائیں گے۔ امریکہ نے جواد ظریف پر ایران کے اعلیٰ رہنما آیت اللہ خامنہ ای کے ایجنڈے کو پھیلانے کا الزام لگایاہے۔

    • Share this:
      امریکہ نے ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف پر پابندی عائد کردی ہے۔ یعنی اگر جواد ظریف کے اثاثے امریکہ میں ہیں تو وہ منجمد ہو جائیں گے۔ امریکہ نے جواد ظریف پر ایران کے اعلیٰ رہنما آیت اللہ خامنہ ای کے ایجنڈے کو پھیلانے کا الزام لگایا ہے۔ جواد ظریف نے امریکی پابندی پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے ٹویٹ کیا ہے کہ امریکہ کے اس عمل سے یہ صاف ہے کہ وہ انھیں خطرہ سمجھتا ہے۔

      ایران کے اعلی روحانی رہنما آیت اللہ خامنہ ای کے بعد امریکہ کے نشانے پر وزیرخارجہ جواد ظریف ہیں۔ امریکہ نے اب جواد ظریف پر پابندی عائد کردی ہے۔ امریکی وزارت خارجہ نے یہ اعلان کیا۔ وزارت نے پابندی کی وجوہات بتاتے ہوئے جواد ظریف پر کئی الزامات عائد کیے۔ امریکی وزارت خارجہ کے مطابق جواد ظریف اعلیٰ رہنما آیت اللہ خامنہ ای کے ایجنڈے کو پھیلاتے ہیں۔

      امریکہ کی جانب سے عائد پابندیوں پرردعمل ظاہر کرتے ہوئے جواد ظریف نے کیا کہ امریکہ کے عمل سے صاف ظاہر ہے کہ وہ انھیں اپنے لیے خطرہ تصور کرتا ہے۔ جواد ظریف نے ٹویٹ کیا ہے کہ امریکہ نے مجھ پر اس لیے پابندی عائد کی ہے کیونکہ میں دنیا بھرمیں ایران کی ترجمانی کرتا ہوں۔ انہوں نے ٹویٹ میں سوال کیا کہ کیا سچ اتنا تکلیف دہ ہے؟ جواد ظریف نے کہا ہے کہ اس پابندی کا مجھ پر یا میرے خاندان پر کوئی اثر نہیں ہوگا۔ کیونکہ ایران سے باہر میرے کوئی اثاثے نہیں ہیں۔عالمی جوہری معاہدے سے امریکہ کے خود کو الگ کرنے کے بعد سے ایران کے ساتھ کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے۔

      First published: