ہوم » نیوز » عالمی منظر

حافظ سعید، مسعود اظہر، داؤد ابراہیم اورلکھوی کودہشت گرد قراردینے پرامریکہ نےکی ہندوستان کی تعریف

جیش محمد سربراہ مسعود اظہرلشکرطیبہ کے بانی حافظ سعید سمیت چاردہشت گردوں کو ہندوستان میں ایک نئے دہشت گردی مخالف قانون کے تحت دہشت گرد قراردینے کے قدم کی امریکہ نےحمایت کی ہے۔

  • Share this:
حافظ سعید، مسعود اظہر، داؤد ابراہیم اورلکھوی کودہشت گرد قراردینے پرامریکہ نےکی ہندوستان کی تعریف
ہندوستان کےاس قدم سے دہشت گردی سے لڑنے میں ہندوستان اورامریکہ کے درمیان تعاون کے امکانات میں اضافہ ہوگیا ہے۔

واشنگٹن: جیش محمد سربراہ مسعود اظہرلشکرطیبہ کےبانی حافظ سعید سمیت چاردہشت گردوں کوہندوستان میں انسداد دہشت گردی قانون کے تحت دہشت گرد قراردینے کےقدم کی امریکہ نےحمایت کی ہے۔ ہندوستان کےاس قدم سے دہشت گردی سےلڑنے میں دونوں ممالک کےدرمیان حمایت کے امکانات میں اضافہ ہو گیا ہے۔ ہندوستانی حکومت نے بدھ کوممبئی دہشت گردانہ حملہ کےملزم ذکی الرحمن لکھوی، داؤد ابراہیم، جیش محمد سربراہ مسعود اظہر اورلشکرطیبہ کے بانی حافظ سعید کونئے دہشت گردی مخالف قانون کے تحت دہشت گرد قرار دیا تھا۔


امریکہ نےکی ہندوستان کی تعریف


جنوبی افریقہ اوروسطی ایشیا کے لئے نگراں اسسٹنٹ ایلس جی ویلس نےبدھ کو ٹوئٹ کیا 'ہم ہندوستان کے ساتھ کھڑے ہیں اورچاروں دہشت گردوں مولانا مسعود اظہر، حافظ سعید، ذکی الرحمن لکھوی اورداؤد ابراہیم کودہشت گرد قراردینےکےلئےنئے قانون استعمال کرنے کے لئےاس کی تعریف کرتےہیں۔ یہ نیا قانون دہشت گردی  سےلڑنےکے لئے ہندوستان اورامریکہ کی مشترکہ کوششوں کے امکانات کی توسیع کرتا ہے'۔


ایک ماہ پہلے ہی ملی تھی ترمیم کی منظوری

پارلیمنٹ نے تقریباً ایک ماہ پہلے انسداد دہشت گردی قانون (یواے پی اے)، 1967 میں اہم ترامیم کومنظوری دی تھی۔ وزارت داخلہ کے ایک افسرنے نئی دہلی میں کہا کہ مذکورہ چاروں دہشت گرد ترامیم قانون کےتحت دہشت گرد قراردیئےگئے، سب سے پہلے دہشت گرد ہیں۔ پہلے یواے پی اے قانون کےتحت کسی تنظیم کوہی دہشت گرد قراردیا جا سکتا تھا۔ اس میں ترمیم کےبعد اب حکومت کسی شخص کوبھی دہشت گرد قراردے سکتی ہے۔ مذکورہ چاروں دہشت گرد ہندوستان میں دہشت گردانہ حملوں میں شامل رہے ہیں اورانہیں اقوام متحدہ کے تحت عالمی دہشت گرد قراردیا گیا ہے۔

ضبط ہوسکتی ہے جائیداد

نئے ترامیم کے تحت جنہیں دہشت گرداعلان کیا گیا ہے، حکومت ان لوگوں پرسفرکی پابندی لگا سکتی ہے۔ حکومت ان کے جائیداد کوبھی ضبط کرسکتی ہے۔ حکومت کے مطابق نیا قانون اقوام متحدہ کے معاہدوں اوربین الاقوامی معیارکےمطابق ہے۔
First published: Sep 05, 2019 08:07 PM IST