ہوم » نیوز » عالمی منظر

امریکہ میں 9 سالہ بچی کے ساتھ روچیسٹر پولیس کی اس حرکت پر اٹھ رہے ہیں سوال: جانیں پورا معاملہ

روچیسٹر پولیس نے اتوار کو پولیس افسران کے باڈی کیمرہ کے دو ویڈیو جاری کئے ہیں جس میں افسر 9 سالہ ایک بچی کو قابو میں کرنے کیلئے کچھ اسپرے کرتے نظر آ رہے ہیں اور بچی کے ہاتھ بھی بندھے ہوئے ہیں۔

  • Share this:
امریکہ میں 9 سالہ بچی کے ساتھ روچیسٹر پولیس کی اس حرکت پر اٹھ رہے ہیں سوال: جانیں پورا معاملہ
اس ویڈیو کو لیکر امریکی پولیس کی کافی کرکری ہو رہی ہے۔

روچیسٹر امریکہ: روچیسٹر پولیس نے اتوار کو پولیس افسران کے باڈی کیمرہ کے دو ویڈیو جاری کئے ہیں جس میں افسر 9 سالہ ایک بچی کو قابو میں کرنے کیلئے کچھ اسپرے کرتے نظر آ رہے ہیں اور بچی کے ہاتھ بھی بندھے ہوئے ہیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ وہ پیپر اسپرے تھا۔ اس ویڈیو کو لیکر امریکی پولیس کی کافی کرکری ہو رہی ہے۔ ڈیموکریٹ اینڈ کرانیکل کی خبر کے مطابق روچیسٹر کی میئر پولیس نے جمعے کو ہوئے اس حادثے کی متاثرہ بچی کو لیکر فکر ظاہر کی ہے۔ انہوں نے کہا، میری بھی دس سال کی ایک بیٹی ہے۔ ایک ماں کے طور پر یہ ویڈیو آپ کبھی نہیں دیکھنا چاہیں گے۔


چیخ رہی تھی بچی۔۔۔

خبر کے مطابق جمعے کو گھریو تنازعہ کی خبر ملنے کے بعد کل نو افسران موقع پر پہنچے تھے۔ اپنے والد سے الگ کرنے کی کوشش کرتے وقت بچی کی ویڈیو میں چیخنے کی آواز سنائی دے رہی ہے۔ ڈپٹی پولیس چیف آندرے اینڈرسن نے اتوار کے روز ایک پریس کانفرنس میں لڑکی کو Suicidal بتایا۔

انہوں نے کہا، وہ خود کو مارنا چاہتی تھی اور وہ اپنی ماں کا بھی قتل کرنا چاہتی تھی۔ انہوں نے بتایا کہ افسران نے اسے گشتی گاڑی میں بیٹھانے کی کوشش کی لیکن اس نے انہیں لات مارنی شروع کر دی تھی۔ پولیس ڈپارٹمنٹ نے بتایا کہ بچی کو قابو میں کرنے کیلئے یہ کارروائی ضروری تھی۔


اس نے کہا کہ نابالغ کی سکیورٹی اوت والدین کی درخواست کے باعد بچی کے ہاتھ باندھے گئے تھے اور ایمبولینس آنے تک اسے پولیس کی گاڑی میں بٹھایا گیا تھا۔ پولیس چیف سنتھیا ہیریئٹ سلیون نے اتوار کے روز بتایا کہ بچی پر 'پیپر اسپرے' چھڑکاگیا تھا۔ حالانکہ انہوں نے عہدیداروں کی اس کارروائی کا دفاع نہیں کیا۔

انہوں نے کہا، میں یہاں کھڑے ہوکر یہ نہیں کہنے والی کہ نو سال کی بچی پر پیپر اسپرے کرنا ٹھیک تھا کیونکہ ایسا نہیں ہے۔ انہوں نے ڈپارٹمنٹ کے طور پر جو ہم ہیں یہ اس کو ظاہر نہیں کرتا اور ہم یہ یقین یکرنے کیلئے کام کریں گے کہ ایسا دوبارہ نہ ہو۔ پولیس نے بتایا کہ بچی کو بعد میں روچیسٹر جنرل اسپتال لے جایا گیا۔ اس کا وہاں علاج کیا گیا اور بعد میں اسے اس کے اہل خانہ کے حوالے کر دیا گیا۔ روچیسٹر پولیس ڈپارٹمنغ گزشتہ سال ڈٰنیل پروڈ کے معاملے میں بھی سوالوں کے گھیرے میں آگیا تھا جب اس کے کچھ افسران نے پروڈ کے سر کو کسی کپڑے سے ڈھک کر اس کا منھ فٹ پاتھ میں دبا دیا تھا۔
Published by: Sana Naeem
First published: Feb 01, 2021 06:05 PM IST