உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    یوکرین کے بے گھر ہونے والوں کیلئے Kamala Harris نے 50 ملین ڈالر کی امداد کا کیا اعلان

    Youtube Video

    Russia Ukraine War: کملا ہیرس نے اپنے خطاب میں کہا کہ آج ہم یہ اعلان کر رہے ہیں کہ ہم یوکرین کو انسانی امداد کے طور پر 50 ملین ڈالر دیں گے۔ ہم یہ امداد یوکرین کو اقوام متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام کے تحت فراہم کریں گے۔

    • Share this:
      واشنگٹن: امریکی نائب صدر کملا ہیرس  Kamala Harris نے روس کے خلاف جنگ کے درمیان یوکرین کے لیے مالی امداد کا اعلان کیا ہے۔ کملا ہیرس نے اپنے خطاب میں کہا کہ آج ہم یہ اعلان کر رہے ہیں کہ ہم یوکرین کو انسانی امداد کے طور پر 50 ملین ڈالر دیں گے۔ ہم یہ امداد یوکرین کو اقوام متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام کے تحت فراہم کریں گے۔ اس کے ساتھ ہی نائب صدر کملا ہیرس نے کہا کہ پولینڈ نے بہت کم وقت میں یوکرین میں پھنسے ان لوگوں کی مدد کے لیے ہاتھ بڑھایا ہے جو باہر جا رہے ہیں۔ پولینڈ نے تقریباً 15 لاکھ پناہ گزینوں کے لیے اپنا ہاتھ بڑھایا ہے جس سے پولینڈ اور پولینڈ کے عوام پر بوجھ بڑھ گیا ہے۔ ایسی صورتحال میں یوکرین سے آنے والے لوگوں کے لیے آپ جو کام کر رہے ہیں اس میں ہم آپ کی مدد کریں گے۔
      آپ کو بتاتے چلیں کہ روس اور یوکرین کے درمیان گزشتہ ماہ سے جنگ جاری ہے جس میں اب تک ہزاروں افراد جان کی بازی ہار چکے ہیں جب کہ 15 لاکھ سے زائد لوگ بے گھر ہو چکے ہیں۔ یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی دنیا بھر کے ممالک سے مسلسل اپیل کر رہے ہیں کہ وہ روس کے خلاف جنگ میں یوکرین کی مدد کریں۔

      ادھر امریکہ نے وارننگ جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ روس یوکرین پر حیاتیاتی ہتھیار بھی استعمال کرسکتا ہے۔ جس کے بعد زیلنسکی نے کہا کہ روس نے ہم پر حیاتیاتی ہتھیار بنانے کا الزام لگایا ہے۔ لیکن اگر آپ روس کے منصوبے کو سمجھنا چاہتے ہیں تو اس طرف توجہ دیں کہ روس نے کس قسم کے الزامات لگائے ہیں۔ اس لیے مجھے یہ فکر ہے کہ روس یوکرین پر حیاتیاتی ہتھیار استعمال کر سکتا ہے۔

      روس اور یوکرین(Russia-Ukraine) کے درمیان جاری جنگ کو دو ہفتے ہو چکے ہیں۔ ابھی تک اس لڑائی کے ختم ہونے کے کوئی آثار نظر نہیں آ رہے ہیں۔ یوکرین کے خلاف اپنی مہم کو تیز کرتے ہوئے، روس نے ماریوپول میں ایک زچگی کے ہسپتال پر فضائی حملہ کیا ہے۔ کئی ممالک نے روس کے اس اقدام کی مذمت کی ہے۔ ساتھ ہی یوکرین بھی روس کے سامنے جھکنے کے موڈ میں نہیں ہے۔ صدر ولادیمیر زیلنسکی (Volodymyr Zelenskyy) نے روس کے خلاف سخت اقدامات کرتے ہوئے ایک نئے قانون کی منظوری دی ہے۔ اس کے تحت یوکرین روسی اثاثے ضبط کر سکے گا۔ یہ قانون روس یا اس کے شہریوں کی جائیدادوں کو بغیر معاوضے کے ضبط کرنے کا حق دیتا ہے۔


      نیوز ایجنسی اے این آئی نے دی کیو انڈیپنڈنٹ کے حوالے سے بتایا کہ یہ قانون یوکرین کی پارلیمنٹ نے 3 مارچ کو منظور کیا تھا۔ یوکرین نہ صرف روس کے خلاف سخت اقدامات کر رہا ہے بلکہ امریکہ سمیت کئی یورپی ممالک بھی روس پر اقتصادی پابندیاں عائد کر رہے ہیں۔ اس درمیان، روسی صدر پوتن نے خبردار کیا ہے کہ اگر مغربی ممالک روس کی مشکلات میں اضافہ کرتے رہے تو عالمی سطح پر کھاد کی قیمتیں مزید بڑھ سکتی ہیں۔

      پوتن نے کہا-بڑھتی قیمتوں کے لئے ہم ذمہ دار نہیں
      پوتن نے کہا کہ روس اور بیلاروس عالمی منڈیوں کو معدنی کھاد فراہم کرنے والے سب سے بڑے ممالک میں سے ہیں۔ اگر مغربی ممالک مسائل پیدا کرتے رہے تو پہلے سے مہنگی کھاد کی قیمتیں مزید بڑھ جائیں گی۔ روس سالانہ 50 ملین ٹن کھاد پیدا کرتا ہے جو کہ دنیا کی مجموعی پیداوار کا تقریباً 13 فیصد ہے۔
      صدر پوتن نے کہا کہ ان کا خیال ہے کہ مغربی ممالک دنیا میں توانائی کی قیمتوں میں اضافے کے لئے روس کو ذمہ دار ٹھہرانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ خبر رساں ایجنسی TASS نے پوتن کے حوالے سے کہا ہے کہ یورپی یونین کے ممالک میں قیمتیں بڑھ رہی ہیں لیکن ہماری غلطی سے نہیں۔ یہ ان کی اپنی غلطی کا نتیجہ ہے۔ اس کے لیے ہم پر الزام نہیں لگانا چاہیے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: