உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    WHO کا بڑا بیان، کووڈ۔19 کی ابتداء غیر واضح لیکن ’لیب لیک تھیوری‘ کے مطالعہ کی ضرورت

    ڈبلیو ایچ او کے سربراہ ٹیڈروس اذانوم گیبریئس نے فروری میں چینی حکومت کے اعلیٰ حکام کو دو خطوط بھیجے۔

    ڈبلیو ایچ او کے سربراہ ٹیڈروس اذانوم گیبریئس نے فروری میں چینی حکومت کے اعلیٰ حکام کو دو خطوط بھیجے۔

    یہ مؤقف اقوام متحدہ کی صحت کی ایجنسی کے وبائی امراض کی ابتداء کے ابتدائی جائزے کے تیزی سے الٹ جانے کی نشاندہی کرتا ہے ، جب اس نے پچھلے سال یہ نتیجہ اخذ کیا تھا کہ اس بات کا انتہائی امکان نہیں ہے کہ کورونا وائرس کسی لیب سے انسانوں میں پھیل گیا ہو۔

    • Share this:
      عالمی ادارہ صحت (World Health Organisation) کی جانب سے کورونا وائرس (COVID-19) کی وبا کی ابتدا کی تحقیقات میں مدد کے لیے تیار کردہ ایک ماہر گروپ نے ایک اہم بات کا انکشاف کیا ہے۔ مذکورہ ماہر گروپ کا کہنا ہے کہ اس بات کا تعین کرنے کے لیے مزید تحقیق کی ضرورت ہے کہ کورونا وائرس پہلی بار کیسے شروع ہوا، جس میں اس امکان کا مزید تفصیلی تجزیہ بھی شامل ہے کہ یہ تجربہ گاہ کا حادثہ تھا۔

      یہ مؤقف اقوام متحدہ کی صحت کی ایجنسی کے وبائی امراض کی ابتداء کے ابتدائی جائزے کے تیزی سے الٹ جانے کی نشاندہی کرتا ہے ، جب اس نے پچھلے سال یہ نتیجہ اخذ کیا تھا کہ اس بات کا انتہائی امکان نہیں ہے کہ کورونا وائرس کسی لیب سے انسانوں میں پھیل گیا ہو۔

      جمعرات کو جاری ہونے والی ایک رپورٹ میں ڈبلیو ایچ او کے ماہر گروپ نے کہا کہ اعداد و شمار اب بھی غائب ہیں کہ یہ بتانے کے لیے کہ وبائی بیماری کیسے شروع ہوئی۔ سائنسدانوں نے کہا کہ یہ گروپ کسی بھی اور تمام سائنسی شواہد کے لیے کھلا رہے گا جو مستقبل میں دستیاب ہوں گے تاکہ تمام معقول مفروضوں کی جامع جانچ کی جا سکے۔

      مزید ٖپڑھیں: Exclusive: پاکستانی فوج میں کشیدگی؟ کیا باجوا پر سے بھروسہ ٹوٹ رہا ہے؟ اقتدار کے گلیاروں میں بڑا سوال


      گروپ نے نوٹ کیا کہ چونکہ ماضی میں لیبارٹری حادثات نے کچھ وبا کو جنم دیا ہے، اس لیے انتہائی سیاسی نظریہ کو رد نہیں کیا جا سکتا۔ سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بغیر ثبوت کے بار بار قیاس آرائیاں کیں کہ کورونا وائرس چینی لیب میں شروع کیا گیا تھا۔ انہوں نے ڈبلیو ایچ او پر یہ بھی الزام لگایا کہ وہ چین کے ساتھ مل کر ابتدائی وباء کو چھپا رہا ہے۔ اقوام متحدہ کی صحت کی ایجنسی کی جانب سے ملک کی مسلسل عوامی تعریف کا حوالہ دیتے ہوئے اس کا اظہار کیا ہے۔


      مزید پڑھیں: Rajya Sabha Election 2022: راجستھان میں 4 سیٹوں میں 3 پر کانگریس، ایک سیٹ پر بی جے پی کا قبضہ

      ڈبلیو ایچ او کے ماہر گروپ نے کہا کہ ڈبلیو ایچ او کے سربراہ ٹیڈروس اذانوم گیبریئس نے فروری میں چینی حکومت کے اعلیٰ حکام کو دو خطوط بھیجے جن میں ووہان شہر میں کورونا وائرس کے ابتدائی انسانی کیسز کے بارے میں تفصیلات سمیت معلومات کی درخواست کی تھی۔ ماہرین نے کہا کہ ڈبلیو ایچ او کو کوئی ایسی تحقیق فراہم نہیں کی گئی جس میں کورونا کے لیبارٹری میں لیک ہونے کے امکان کا اندازہ لگایا گیا ہو۔ ان کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کے ابھرنے کے بارے میں ان کی سمجھ ان عوامل کی وجہ سے محدود تھی جس میں یہ بھی شامل ہے کہ وائرس پر چینی سائنسدانوں کی پیش کردہ تمام تحقیق شائع نہیں ہوئی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: