உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    یوروپ میں کورونا کے قہر کو لے کر ڈبلیو ایچ او کو اندیشہ ، دسمبر تک جان گنوا سکتے ہیں دو لاکھ سے زیادہ لوگ

    یوروپ میں کورونا کے قہر پر ڈبلیو ایچ او کو اندیشہ ، دسمبر تک جان گنوا سکتے ہیں دو لاکھ سے زیادہ لوگ

    یوروپ میں کورونا کے قہر پر ڈبلیو ایچ او کو اندیشہ ، دسمبر تک جان گنوا سکتے ہیں دو لاکھ سے زیادہ لوگ

    ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے یہ اندیشہ ظاہر کیا ہے کہ اس سال یکم دسمبر تک یوروپ میں کورونا کی وجہ سے دو لاکھ 36 ہزار لوگوں کی موت بھی ہوسکتی ہے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے یوروپی ممالک میں کورونا ویکسینیشن پر تشویش کا اظہار کیا ہے ۔ ڈبلیو ایچ او نے یہ بھی اندیشہ ظاہر کیا ہے کہ اس سال دسمبر تک یوروپ میں کورونا کی وجہ سے دو لاکھ 36 ہزار لوگوں کی موت بھی ہوسکتی ہے ۔ بتادیں کہ اس وقت یوروپی ممالک میں کورونا کے ڈیلٹا ویریئنٹ نے قہر مچایا ہوا ہے ۔ یوروپ میں ویکسینیشن کی رفتار میں بھی کمی دیکھی گئی ہے ۔ حالانکہ اس سے پہلے تک ڈبلیو ایچ او غریب ممالک میں ویکسینیشن کو لے کر فکرمند رہا ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ کچھ یوروپی ممالک کی طرف سے بوسٹر ڈوز کی شروعات کو لے کر ڈبلیو ایچ او نے ناخوشی کا اظہار کیا ہے ۔

      وہیں ڈبلیو ایچ او کی یوروپ برانچ کے سربراہ نے کہا کہ وہ امریکی سرکار کے متعددی امراض کے ٹاپ اسپیشلسٹ کی اس بات سے متفق ہیں کہ کورونا مخالف ٹیکہ کی تیسری خوراک انتہائی حساس لوگوں کو انفیکشن سے بچانے میں مدد کرسکتی ہے۔ ڈاکٹر ہنس کلوگے نے انفیکشن کے زیادہ پھیلاو کو کافی تشویشناک بتاتے ہوئے کہا کہ ڈبلیو ایچ او یوروپ خطہ میں شامل 53 میں سے 33 ممالک میں گزشتہ ایک ہفتہ سے زیادہ وقت میں معاملات میں 10 فیصد یا اس سے زیادہ کا اضافہ ہوا ہے ۔

      اس درمیان برطانیہ سے خبر آئی تھی کہ وہاں 12 سے 15 سال کی عمر کے بچوں کی ٹیکہ کاری کی تیاری کی جارہی ہے ۔ حالانکہ ملک کی ویکسین ایڈوائزری کمیٹی نے اس ٹیکہ کاری مہم کو ابھی منظوری نہیں دی ہے ۔

      محکمہ صحت کی جانب سے کہا گیا ہے کہ منظوری ملتے ہی وہ ٹیکہ کاری مہم شروع کرنے کیلئے تیار ہے ۔ محکمہ نے کہا ہے کہ ملک کے زیادہ تر حصوں میں نیا تعلیمی سال شروع ہونے کے ساتھ ہی وہ اسکولوں میں ٹیکے پہنچانے کیلئے بھی تیار ہے ۔ ستمبر میں یہاں اسکول کھلنے والے ہیں اور برطانیہ میں پہلے سے اونچی کورونا وائرس انفیکشن کی شرح کے اور بھی بڑھنے کا اندیشہ ہے ۔

      وہیں کورونا وائرس کا ایک نیا ویریئنٹ دنیا گھر کیلئے تشویش کا سبب بن کر ابھرا ہے ۔  C.1.2 نام کا یہ ویریئنٹ جنوبی افریقہ میں ملا ہے ۔ اس ویریئنٹ پر ہوئی ایک اسٹڈی میں دعوی کیا گیا ہے کہ یہ دنیا بھر میں پھیل سکتا ہے اور موجودہ سبھی کورونا ویکسین کو چکمہ دے سکتا ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: