உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آخر کیوں پی ایم مودی سے ٹی وی ڈبیٹ کرنا چاہتے ہیں پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان؟

    ہندوستان نے بار بار واضح کیا ہے کہ جموں و کشمیر "ملک کا اٹوٹ حصہ تھا اور ہمیشہ رہے گا"۔

    ہندوستان نے بار بار واضح کیا ہے کہ جموں و کشمیر "ملک کا اٹوٹ حصہ تھا اور ہمیشہ رہے گا"۔

    Imran Khan TV Debate PM Modi: ہندوستان اور پاکستان کے تعلقات (India & Pakistan) 75 سال قبل آزادی حاصل کرنے اور اس کے بعد سے تین جنگیں لڑنے کے بعد سے حالات کشیدہ ہیں۔ عمران خان نے رسیہ ٹوڈے کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا، "میں پی ایم نریندر مودی کے ساتھ ٹی وی پر بحث کرنا پسند کروں گا"۔

    • Share this:
      اسلام آباد۔ پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان (PM Imran Khan) نے منگل کو کہا کہ وہ دونوں ممالک کے درمیان اختلافات کو دور کرنے کے لیے وزیر اعظم نریندر مودی (PM Narendra Modi) کے ساتھ ٹیلی ویژن پر بحث کرنا چاہتے ہیں۔ ہندوستان اور پاکستان کے تعلقات (India & Pakistan) 75 سال قبل آزادی حاصل کرنے اور اس کے بعد سے تین جنگیں لڑنے کے بعد سے حالات کشیدہ ہیں۔ عمران خان نے رسیہ ٹوڈے کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا، "میں پی ایم نریندر مودی کے ساتھ ٹی وی پر بحث کرنا پسند کروں گا"۔

      اس کے ساتھ انہوں نے کہا کہ اگر اختلافات کو بحث کے ذریعے حل کیا جاسکتا ہے تو یہ برصغیر پاک و ہند کے ایک ارب سے زائد لوگوں کے لیے فائدہ مند ہوگا۔ عمران خان کے اس بیان کے حوالے سے خبر رساں ادارے روئٹرز نے جب ہندستانی وزارت خارجہ سے پوچھا تو فوری طور پر اس کا کوئی جواب نہیں دیا۔

      'مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے بات چیت ہونی چاہیے'
      اس سے قبل 14 فروری کو بھی پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے کشمیر کے حل نہ ہونے والے تنازعے کو تشویشناک قرار دیتے ہوئے دونوں ممالک پر زور دیا تھا کہ وہ اچھے ہمسایوں کی حیثیت سے مذاکرات کی میز پر آئیں اور معاملہ حل کریں۔ خان نے نیوز چینل CNN کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا، "اگر یہ مسئلہ جاری رہا تو دو جوہری طاقتوں کے درمیان تنازعہ کا ہمیشہ امکان رہے گا۔"

      کئی دہشت گرد حملوں کا ذمہ دار ہے پاکستان
      2008 کے ممبئی دہشت گردانہ حملے کے علاوہ، ہندوستان نے پاکستان سے کہا ہے کہ وہ 2016 کے پٹھان کوٹ دہشت گردانہ حملے کے ذمہ دار دہشت گردوں اور دہشت گرد تنظیموں کے خلاف کریک ڈاؤن کرے، جس میں 7 سیکورٹی اہلکار ہلاک ہوئے تھے۔ اس کے علاوہ، 2019 کے پلوامہ دہشت گردانہ حملے میں 40 سے زیادہ ہندوستانی فوجی مارے گئے تھے۔ پٹھان کوٹ دہشت گردانہ حملے کے بعد ہندوستانی فوج نے لائن آف کنٹرول کے پار دہشت گردوں کے لانچ پیڈ پر سرجیکل اسٹرائیک کی تھی۔ اسی طرح پلوامہ دہشت گردانہ حملے کے بعد ہندوستانی فضائیہ نے بالاکوٹ میں دہشت گردوں کے کیمپوں پر بھی فضائی حملہ کیا۔
      قابل ذکر ہے کہ ہندوستان نے پاکستان پر واضح کر دیا ہے کہ وہ اسلام آباد کے ساتھ دہشت گردی، نفرت اور تشدد سے پاک ماحول میں ایک عام پڑوسی کی طرح تعلقات قائم کرنا چاہتا ہے۔ ہندوستان نے کہا کہ دہشت گردی اور دشمنی سے پاک ماحول بنانا پاکستان کی ذمہ داری ہے۔

      ہندوستان نے بار بار واضح کیا ہے کہ جموں و کشمیر "ملک کا اٹوٹ حصہ تھا اور ہمیشہ رہے گا"۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: