உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سعودی عرب : اتوار سے 'ڈرائیونگ' کر سکیں گی سعودی خواتین ، ڈرائیونگ پر ہٹی پابندی

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    سعودی عرب دنیا کا واحد ایک ایسا ملک ہے جہاں خواتین کے گاڑی چلانے پر پابندی ہے لیکن اتوار (24 جون) کو یہاں چیزیں بدل جائیں گی۔

    • Share this:
      سعودی عرب دنیا کا واحد ایک ایسا ملک ہے جہاں خواتین کے گاڑی چلانے پر پابندی ہے لیکن اتوار (24 جون) کو یہاں چیزیں بدل جائیں گی۔آج سے خواتین خود گاڑی چلاسکتی ہیں۔اسی کے ساتھ یہ ملک خواتین کے گاڑی چلانے پر لگی پابندی کو ہٹانے والا دنیا کا آخری ملک بن جائے گا۔سعودی عرب نے ستمبر 2017 میں خواتین کے گاڑی چلانے پر لگے بین کو ہٹا دیا تھا۔یہ فیصلہ کراؤن پرنس محمد بن سلمان کے وژن 2030 پروگرام کا حصہ ہے تاکہ معیشت کو تیل سے الگ کر کے سعودی سماج کو کھولا جا سکے۔

      جدہ کی ایک خاتون حمسہ السنوسی نے کہا ، "إین نے کبھی خواب میں بھی نہیں سوچا تھا کہ میں اپنی زندگی میں اس دن کو دیکھوپاؤں گی"۔جدہ خواتین کو لائسینس دینے والا ملک دوسرا شہر ہے۔انہوں نے کہا ، "لوگ اس دن کیلئے غیر ممالک سے واپس آ رہے ہیں ،یہ تاریخی ہے'۔

      بتادیں کہ سعودی عرب میں خواتین پر کئی طرح کی پابندیاں عائد ہیں۔انہیں ابھی تک وہ حق بھی نہیں ملےہیں جو دنیا کے باقی ممالک کی خواتین کو ہیں۔یہاں خواتین کو ڈرائیونگ لائسنس  کا حق دلانے کیلئے طویل وقت سے میم چلائی جا رہی تھی۔کئی خواتین کو تو قانون توڑنے کیلئے سزا تک دی گئی۔

      وہ کام جوسعودی خواتین کو مردوں سے اجازت لیکر کرنے پڑتے ہیں

      کئی خواتین برطانیہ،کناڈا یا لبنان جیسے ملکوں میں جاکر اپنے لئے انٹر نیشنل ڈرائیونگ لائسینس بنوا لیا کرتی تھیَان میں سے کچھ نے پیر کو ایک چھوٹا سا ڈرائیونگ ٹیسٹ دیا۔جس کے بعد انہیں سعودی عر ب کے نئے لائسنس دئے گئے۔
      First published: