ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

Sopore Encounter : سوپور انکاؤنٹر میں 2دہشت گرد ہلاک، پولیس کی تلاشی مہم جاری

آئی جی پی کشمیر نے بتایا کہ اس انکاؤنٹر میں مارا جانے والا دہشت گرد فیاض ور ،دہشت گردی کے متعدد واقعات میں ملوث رہا ہے۔ آخری بار اس نے شمالی کشمیر میں دہشت گرد حملے میں ملوث تھا۔

  • Share this:
Sopore Encounter : سوپور انکاؤنٹر میں 2دہشت گرد ہلاک، پولیس کی تلاشی مہم جاری
سوپور انکاؤنٹر میں 2دہشت گرد ہلاک

جموں وکشمیر کے ضلع بارہمولہ کے سوپور میں جمعرات کی رات سے جاری انکاؤنٹر میں دو دہشت گرد ہلاک ہوگئے ہیں۔ وارپورہ کے علاقے میں انکاؤنٹر کے بعد سرچ آپریشن بھی کیا جارہا ہے۔ پولیس کے مطابق ، ایک اور دہشت گرد کے ساتھ ایک دہشت گرد کمانڈر وارپورہ گاؤں میں ایک مکان میں موجود تھا۔ وارپورہ میں ، پولیس کو اس کی موجودگی کی اطلاع مل گئی تھی۔ آئی جی پی کشمیر نے بتایا کہ اس انکاؤنٹر میں مارا جانے والا دہشت گرد فیاض ور ،دہشت گردی کے متعدد واقعات میں ملوث رہا ہے۔ آخری بار اس نے شمالی کشمیر میں دہشت گرد حملے میں ملوث تھا۔


اس دوران ، آرمی کی 22 آر آر ، ایس او جی سوپور اور سی آر پی ایف 179 ، 177 اور 92 بٹالین کی مشترکہ ٹیم نے وارپورہ میں گھر ۔گھر تلاشی لی اور علاقے کے تمام داخلی اور خارجی راستوں کو سیل کردیا۔ انکاؤنٹر سے قبل سکیورٹی فورسز نے دہشت گردوں کو ہتھیار ڈالنے کا موقع بھی فراہم کیا تھا ، لیکن دہشت گردوں نے ہتھیار ڈالنے سے انکار کردیا اور فائرنگ شروع کردی۔

سکیورٹی فورسز نے بھی جوابی کارروائی کی ، جس کے بعد یہاں انکاؤنٹر شروع ہوا۔ دہشت گردوں سے مقابلے کے بعد اسلحہ اور گولہ بارود سمیت قابل اعتراض مواد بھی برآمد کرلیا گیا ہے۔ کشمیر زون پولیس نے کہا ہے کہ اس وقت علاقے میں سرچ آپریشن جاری ہے۔



ضلع شوپیان میں دو دہشت گرد مارے گئے

اس سے قبل جموں و کشمیر کے ضلع شوپیان میں سیکیورٹی فورسز اور دہشت گردوں کے مابین انکاؤنٹر میں لشکر طیبہ کے ایک دہشت گرد سمیت دو دہشت گرد ہلاک کردیاگیاتھا۔ ایک سینئر پولیس عہدیدار نے پیر کے روز کہا تھا کہ اتوار کے روز سیکیورٹی فورسز نے دہشت گردوں کی موجودگی کے بارے میں انٹلیجنس کی خفیہ اطلاع ملنے پر جنوبی کشمیر کے چک صادق خان کے علاقے میں کورڈن آف کرتے ہوئے سرچ آپریشن شروع کیا تھا۔تاہم اس کارروائی کے دوران ہی انکاؤنٹر شرو ع ہوگیا۔ دہشت گردوں نے سکیورٹی فورسز پر فائرنگ کی۔

انہوں نے کہا کہ سکیورٹی فورسز نے بھی فائرنگ کا موزوں جواب دیا ، جس میں دو دہشت گرد مارے گئے۔ ان میں سے ایک کی شناخت لشکر کے چیف کمانڈر اشفاق ڈار عرف ابو اکرم کے طور پر ہوئی ہے۔ اس کا نام 2017 سے دہشت گرد حملوں میں ملوث ہونے کا کے بعد منظر عام پر آیات
Published by: Mirzaghani Baig
First published: Jul 23, 2021 08:22 AM IST