اپنا ضلع منتخب کریں۔

    سیکورٹی فورسز کے ہاتھوں اس سال 40 پاکستانی دہشت گرد ہلاک، سیکورٹی فورسز کی اب تک کی سب سے بڑا کامیابی

    فائل فوٹو

    فائل فوٹو

    ڈی جی پی نے یہ بھی کہا کہ عسکریت پسند ملک کی دوسری ریاستوں میں مقیم کشمیریوں کے خلاف پرتشدد ردعمل کو بھڑکانے کے لیے غیر مقامی لوگوں اور یہاں رہنے والوں کو طویل عرصے سے نشانہ بنا رہے ہیں۔ سنگھ نے کہا کہ وادی میں کام کرنے والے زیادہ تر عسکریت پسند تنظیموں کے ڈھانچے کو تباہ کر دیا گیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu | Mumbai | Hyderabad | Gajsinghpur
    • Share this:
      جموں و کشمیر پولیس کے ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی پی) دلباغ سنگھ نے کہا کہ سیکورٹی فورسز نے اس سال مرکزی زیر انتظام علاقے جموں و کشمیر میں مختلف کارروائیوں میں 40 پاکستان میں مقیم دہشت گردوں کو ہلاک کیا ہے۔ ڈی جی پی نے کہا کہ وہ پاکستانی ایجنسیوں کے ذریعہ ریاست میں دھکیلئے گئے درجنوں خود ساختہ دیسی دھماکہ خیز آلات (آئی ای ڈی) کو تلاش کرنے اور بازیافت کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

      ڈی جی پی نے یہ بھی کہا کہ یہ دہشت گرد ملک کی دوسری ریاستوں میں مقیم کشمیریوں کے خلاف پرتشدد ردعمل کو بھڑکانے کے لیے غیر مقامی لوگوں اور یہاں رہنے والوں کو طویل عرصے سے نشانہ بنا رہے ہیں۔ سنگھ نے کہا کہ وادی میں کام کرنے والے زیادہ تر دہشت گرد تنظیموں کے ڈھانچے کو تباہ کر دیا گیا ہے۔

      سنگھ نے سری نگر میں ایک کھیلوں کی تقریب ’’کشمیر میراتھن‘‘ کے موقع پر میڈیا کو بتایا کہ ان کی قیادت کو کافی حد تک ختم کر دیا گیا ہے۔ پاکستانی ایجنسیاں زیادہ تر جیش اور لشکر کی کمان پاکستانی دہشت گردوں کے ہاتھ میں رکھنے کی کوشش کرتی ہیں تاکہ وہ یہاں کی سرگرمیوں کو براہ راست کنٹرول کر سکیں۔ اس سال ہماری کوشش باہر کے دہشت گردوں پر مرکوز تھی جو یہاں نوجوانوں کو گمراہ کرنے، امن کو تباہ کرنے اور جان و مال کو نقصان پہنچانے کے لیے آتے ہیں۔

      پولیس چیف نے کہا کہ دراندازی گزشتہ برسوں کے مقابلے میں کنٹرول میں ہے تاہم پاکستان ریڈی میڈ آئی ای ڈیز کو آگے بڑھانے کی کوشش کر رہا ہے۔ سرحد پار سے دہشت گردوں کو دھکیلنے کی وقتاً فوقتاً کوششیں ہوتی رہتی ہیں۔ راجوری اور پونچھ میں کوششیں ہوئیں جنہیں ناکام بنا دیا گیا۔ اسی طرح بارہمولہ اور کپواڑہ میں بھی کوششوں کو ناکام بنایا گیا۔ اس کے علاوہ کچھ کارروائیوں میں ہم نے درجنوں آئی ای ڈیز برآمد کیں جو استعمال کے لیے تیار ہیں۔ بدقسمتی سے، کچھ ایسے واقعات ہوئے جن میں ان ریڈی میڈ آئی ای ڈیز کا استعمال کیا گیا، خاص طور پر جموں میں، جہاں جان و مال کا کچھ نقصان ہوا۔

      یہ بھی پڑھیں:


      انھوں نے کہا کہہ اس تناظر میں بہت سی کامیاب کارروائیاں ہوئیں۔ ان کارروائیوں میں 40 پاکستان میں مقیم دہشت گرد مارے گئے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں مقیم مزید دہشت گردوں کا پتہ لگایا جارہا ہے۔ ہماری کوششیں جاری ہیں اور مجھے امید ہے کہ ہم کامیاب ہوں گے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: